الحمدللہ! انگلش میں کتب الستہ سرچ کی سہولت کے ساتھ پیش کر دی گئی ہے۔

 
صحيح مسلم کل احادیث 3033 :ترقیم فواد عبدالباقی
صحيح مسلم کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح مسلم
لباس اور زینت کے احکام
The Book of Clothes and Adornment
33. باب تَحْرِيمِ فِعْلِ الْوَاصِلَةِ وَالْمُسْتَوْصِلَةِ وَالْوَاشِمَةِ وَالْمُسْتَوْشِمَةِ وَالنَّامِصَةِ وَالْمُتَنَمِّصَةِ وَالْمُتَفَلِّجَاتِ وَالْمُغَيِّرَاتِ خَلْقَ اللَّهِ:
33. باب: بالوں میں جوڑا لگانا اور لگوانا، گودنا اور گدانا اور منہ کی روئیں نکالنا اور نکلوانا، دانتوں کو کشادہ کرنا اور اللہ تعالیٰ کی خلقت کو بدلنا حرام ہے۔
Chapter: The Prohibition Adding Hair Extensions, Having Them Added, Tattooing, Being Tattooed, An-Namisah, Al-Mutanamisah, Separating Teeth, And Changing The Creation Of Allah
حدیث نمبر: 5572
Save to word اعراب
وحدثينيه محمد بن عبد الله بن بزيع ، حدثنا بشر بن المفضل ، حدثنا صخر بن جويرية ، عن نافع ، عن عبد الله ، عن النبي صلى الله عليه وسلم بمثله.وحدثينيه مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ بَزِيعٍ ، حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ الْمُفَضَّلِ ، حَدَّثَنَا صَخْرُ بْنُ جُوَيْرِيَةَ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ ، عن النبي صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِثْلِهِ.
صخر بن جویریہ نے نافع سے، انھوں نے حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے، انھوں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے اسی کے مانند روایت کی۔
یہی روایت امام صاحب ایک اور استاد نے اسی طرح سنائی ہے۔
ترقیم فوادعبدالباقی: 2124

صحیح مسلم کی حدیث نمبر 5572 کے فوائد و مسائل
  الشيخ الحديث مولانا عبدالعزيز علوي حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث ، صحيح مسلم: 5572  
حدیث حاشیہ:
مفردات الحدیث:
الواشمة:
شم کرنے والی یعنی،
ہتھیلی کی پشت،
کلائی،
ہونٹ،
پیشانی یا عورت کے بدن کے کسی حصہ میں سوئی وغیرہ چبھو کو خون نکالنا پھر اس جگہ سرمہ یا نیل بھرنا تاکہ اس جگہ نقش ونگار بنائے جائیں اور مستوشمة،
وہ عورت ہے جو اس کا مطالبہ کرتی ہے،
مقصد یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے عورت کو جو حسن وجمال اور خوبصورتی بخشی ہے،
اس پر کفایت کرنا چاہیے،
اس میں تبدیلی کرنا،
انتہائی گھناؤنا جرم ہے،
جو لعنت کا مستحق ہے،
لیکن بدقسمتی سے مسلمان عورتیں مغربی اقوام سے نت نئے فیشن سیکھ رہی ہیں اور اس کے لیے مستقل طور پر بیوٹی پارلر کے نام دکانیں کھل گئی ہیں،
جن میں مصنوعی حسن وجمال کے حصول کے لیے بے انتہا،
پیسا،
ضائع ہورہا ہے،
ایک دور کا فیشن یہ تھا کہ عورتیں بالوں کے ساتھ جوڑ لگواتی تھیں اور آج کا فیشن بالوں کو کاٹنا ہے،
ناخن جن کو کاٹنے کا حکم ہے،
ان کو خونخواردرندوں کی طرح بڑھایا جاتا ہے اور ان پر سرخ یا اپنے ہم رنگ پالش لگائی جاتی ہے،
حالانکہ ناخنوں پر گہری پالش سے وضو بھی مشکوک ہوجاتا ہے،
اکثر علماء کے نزدیک اس صورت میں وضو نہیں ہوتا،
کیونکہ ناخنوں پر پالش ہونے کی وجہ سے،
وہ صحیح طور پر دھل نہیں پاتے،
مزید برآں یہ کافروں کی نشانی ہے،
جو پسندیدہ نہیں ہے،
اگر یہ ان کا شعار ہوتو پھر حرام ہے۔
   تحفۃ المسلم شرح صحیح مسلم، حدیث/صفحہ نمبر: 5572   


http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.