تفسير ابن كثير



سورۃ عبس

[ترجمہ محمد جوناگڑھی][ترجمہ فتح محمد جالندھری][ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
بِسْمِ اللَّـهِ الرَّحْمَـنِ الرَّحِيمِ﴿﴾
شروع کرتا ہوں اللہ تعالٰی کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم کرنے والا ہے۔

 
 

عَبَسَ وَتَوَلَّى[1] أَنْ جَاءَهُ الْأَعْمَى[2] وَمَا يُدْرِيكَ لَعَلَّهُ يَزَّكَّى[3] أَوْ يَذَّكَّرُ فَتَنْفَعَهُ الذِّكْرَى[4] أَمَّا مَنِ اسْتَغْنَى[5] فَأَنْتَ لَهُ تَصَدَّى[6] وَمَا عَلَيْكَ أَلَّا يَزَّكَّى[7] وَأَمَّا مَنْ جَاءَكَ يَسْعَى[8] وَهُوَ يَخْشَى[9] فَأَنْتَ عَنْهُ تَلَهَّى[10] كَلَّا إِنَّهَا تَذْكِرَةٌ[11] فَمَنْ شَاءَ ذَكَرَهُ[12] فِي صُحُفٍ مُكَرَّمَةٍ[13] مَرْفُوعَةٍ مُطَهَّرَةٍ[14] بِأَيْدِي سَفَرَةٍ[15] كِرَامٍ بَرَرَةٍ[16]

[ترجمہ محمد عبدالسلام بن محمد] اس نے تیوری چڑھائی اور منہ پھیر لیا۔ [1] اس لیے کہ اس کے پاس اندھا آیا۔ [2] اور تجھے کیا چیز معلوم کرواتی ہے شاید وہ پاکیزگی حاصل کر لے۔ [3] یا نصیحت حاصل کرے تو وہ نصیحت اسے فائدہ دے۔ [4] لیکن جو بے پروا ہو گیا۔ [5] سو تو اس کے پیچھے پڑتا ہے۔ [6] حالانکہ تجھ پر(کوئی ذمہ داری) نہیں کہ وہ پاک نہیں ہوتا۔ [7] اور لیکن جو کوشش کرتا ہوا تیرے پاس آیا ۔ [8] اور وہ ڈر رہا ہے۔ [9] تو تو اس سے بے توجہی کرتا ہے۔ [10] ایسا ہرگز نہیں چاہیے، یہ (قرآن) تو ایک نصیحت ہے۔ [11] تو جو چاہے اسے قبول کر لے۔ [12] ایسے صحیفوں میں ہے جن کی عزت کی جاتی ہے ۔ [13] جو بلند کیے ہوئے،پاک کیے ہوئے ہیں۔ [14] ایسے لکھنے والوں کے ہاتھوں میں ہیں۔ [15] جو معزز ہیں، نیک ہیں۔ [16]
........................................

[ترجمہ محمد جوناگڑھی] وه ترش رو ہوا اور منھ موڑ لیا [1] (صرف اس لئے) کہ اس کے پاس ایک نابینا آیا [2] تجھے کیا خبر شاید وه سنور جاتا [3] یا نصیحت سنتا اور اسے نصیحت فائده پہنچاتی [4] جو بے پرواہی کرتا ہے [5] اس کی طرف تو تو پوری توجہ کرتا ہے [6] حاﻻنکہ اس کے نہ سنورنے سے تجھ پر کوئی الزام نہیں [7] اور جو شخص تیرے پاس دوڑتا ہوا آتا ہے [8] اور وه ڈر (بھی) رہا ہے [9] تو اس سے بےرخی برتتا ہے [10] یہ ٹھیک نہیں قرآن تو نصیحت (کی چیز) ہے [11] جو چاہے اس سے نصیحت لے [12] (یہ تو) پر عظمت صحیفوں میں (ہے) [13] جو بلند وباﻻ اور پاک صاف ہے [14] ایسے لکھنے والوں کے ہاتھوں میں ہے [15] جو بزرگ اور پاکباز ہے [16]۔
........................................

[ترجمہ فتح محمد جالندھری] (محمد مصطفٰےﷺ) ترش رُو ہوئے اور منہ پھیر بیٹھے [1] کہ ان کے پاس ایک نابینا آیا [2] اور تم کو کیا خبر شاید وہ پاکیزگی حاصل کرتا [3] یا سوچتا تو سمجھانا اسے فائدہ دیتا [4] جو پروا نہیں کرتا [5] اس کی طرف تو تم توجہ کرتے ہو [6] حالانکہ اگر وہ نہ سنورے تو تم پر کچھ (الزام) نہیں [7] اور جو تمہارے پاس دوڑتا ہوا آیا [8] اور (خدا سے) ڈرتا ہے [9] اس سے تم بےرخی کرتے ہو [10] دیکھو یہ (قرآن) نصیحت ہے [11] پس جو چاہے اسے یاد رکھے [12] قابل ادب ورقوں میں (لکھا ہوا) [13] جو بلند مقام پر رکھے ہوئے (اور) پاک ہیں [14] لکھنے والوں کے ہاتھوں میں [15] جو سردار اور نیکو کار ہیں [16]۔
........................................

 

تفسیر آیت/آیات، 1، 2، 3، 4، 5، 6، 7، 8، 9، 10، 11، 12، 13، 14، 15، 16،

تبلیغ دین میں فقیر و غنی سب برابر ٭٭

بہت سے مفسرین سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ایک مرتبہ قریش کے سرداروں کو اسلامی تعلیم سمجھا رہے تھے اور مشغولیت کے ساتھ ان کی طرف متوجہ تھے دل میں خیال تھا کہ کیا عجب اللہ انہیں اسلام نصیب کر دے ناگہاں سیدنا عبداللہ بن ام مکتوم رضی اللہ عنہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آئے، پرانے مسلمان تھے عموماً نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوتے رہتے تھے اور دنیا اسلام کی تعلیم سیکھتے رہتے تھے اور مسائل دریافت کیا کرتے تھے، آج بھی حسب عادت آتے ہی سوالات شروع کئے اور آگے بڑھ کر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنی طرف متوجہ کرنا چاہا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم چونکہ اس وقت ایک اہم امر دینی میں پوری طرح مشغول تھے ان کی طرف توجہ نہ فرمائی بلکہ ذرا گراں خاطر گزرا اور پیشانی پر بل پڑ گئے اس پر یہ آیات نازل ہوئیں کہ ” آپ کی بلند شان اور اعلیٰ اخلاق کے لائق یہ بات نہ تھی کہ اس نابینا سے جو ہمارے خوف سے دوڑتا بھاگتا آپ کی خدمت میں علم دین سیکھنے کے لیے آئے اور آپ اس سے منہ پھیر لیں اور ان کی طرف متوجہ ہوں جو سرکش ہیں، اور مغرور و متکبر ہیں، بہت ممکن ہے کہ یہی پاک ہو جائے اور اللہ کی باتیں سن کر برائیوں سے بچ جائے اور احکام کی تعمیل میں تیار ہو جائے، یہ کیا ہے کہ آپ ان بے پرواہ لوگوں کی جانب تمام تر توجہ فرما لیں؟ آپ پر کوئی ان کو راہ راست پر لا کھڑا کرنا ضروری تھوڑے ہی ہے؟ وہ اگر آپ کی باتیں نہ مانیں تو آپ پر ان کے اعمال کی پکڑ ہرگز نہیں “۔

مطلب یہ ہے کہ تبلیغ دین میں شریف و ضعیف، فقیر و غنی، آزاد و غلام، مرد و عورت، چھوٹے بڑے سب برابر ہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم سب کو یکساں نصیحت کیا کریں ہدایت اللہ کے ہاتھ ہے، وہ اگر کسی کو راہ راست سے دور رکھے تو اس کی حکمت وہی جانتا ہے جسے اپنی راہ لگا لے اسے بھی وہی خوب جانتا ہے۔ سیدنا ابن ام مکتوم کے آنے کے وقت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا مخاطب ابی بن خلف تھا اس کے بعد نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ابن ام مکتوم رضی اللہ عنہ کی بڑی تکریم اور آؤ بھگت کیا کرتے تھے۔ [مسند ابویعلیٰ] ‏‏‏‏
10277

سیدنا انس رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں میں نے سیدنا ابن ام مکتوم رضی اللہ عنہ کو قادسیہ کی لڑائی میں دیکھا ہے، زرہ پہنے ہوئے تھے اور سیاہ جھنڈا لیے ہوئے تھے [مسند ابو یعلی:3123:صحیح] ‏‏‏‏

ام المؤمنین سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ جب یہ آئے اور کہنے لگے کہ حضور مجھے بھلائی کی باتیں سکھایئے اس وقت رؤساء قریش آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی مجلس میں تھے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کی طرف پوری توجہ نہ فرمائی انہیں سمجھاتے جاتے تھے اور فرماتے جاتے تھے کہو میری بات ٹھیک ہے وہ کہتے جاتے تھے ہاں حضرت درست ہے۔‏‏‏‏ [سنن ترمذي:3331،قال الشيخ الألباني:صحیح] ‏‏‏‏

ان لوگوں میں عتبہ بن ربیعہ، ابوجہل بن ہشام، عباس بن عبدالمطلب تھے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی بڑی کوشش تھی اور پوری حرص تھی کہ کسی طرح یہ لوگ دین حق کو قبول کر لیں ادھر یہ آ گئے اور کہنے لگے اے اللہ کے نبی! قرآن پاک کی کوئی آیت مجھے سنایئے اور اللہ کی باتیں سکھایئے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس وقت ان کی بات ذرا بے موقع لگی اور منہ پھیر لیا اور ادھر ہی متوجہ رہے۔ جب ان سے باتیں پوری کر کے آپ صلی اللہ علیہ وسلم گھر جانے لگے تو آنکھوں تلے اندھیرا چھا گیا اور سر نیچا ہو گیا اور یہ آیتیں اتریں۔ پھر تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم ان کی بڑی عزت کیا کرتے تھے اور پوری توجہ سے کان لگا کر ان کی باتیں سنا کرتے تھے آتے جاتے ہر وقت پوچھتے کہ کچھ کام ہے کچھ حاجت ہے کچھ کہتے ہو کچھ مانگتے ہو؟ [تفسیر ابن جریر الطبری:36319:ضعیف] ‏‏‏‏ یہ روایت غریب اور منکر ہے اور اس کی سند میں بھی کلام ہے۔
10278

سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے تھے کہ بلال رات رہتے ہوئے اذان دیا کرتے ہیں تو تم سحری کھاتے پیتے رہو یہاں تک کہ ابن ام مکتوم کی اذان سنو یہ وہ نابینا ہیں جن کے بارے میں «عَبَسَ وَتَوَلّىٰٓ اَنْ جَاءَهُ الْاَعْمٰى»، یہ بھی مؤذن تھے بینائی میں نقصان تھا جب لوگ صبح صادق دیکھ لیتے اور اطلاع کرتے کہ صبح ہوئی تب یہ اذان کہا کرتے تھے [اسنادہ ضعیف ولہ شواھد صحیح بخاری:617] ‏‏‏‏

سیدنا ابن ام مکتوم رضی اللہ عنہ کا مشہور نام تو عبداللہ ہے بعض نے کہا ہے ان کا نام عمرو ہے۔ «وَاللهُ اَعْلَمُ»
10279

«إِنَّهَا تَذْكِرَةٌ» یعنی یہ نصیحت ہے اس سے مراد یا تو یہ سورت ہے یا یہ مساوات کہ تبلیغ دین میں سب یکساں ہیں مراد ہے۔ سدی رحمہ اللہ کہتے ہیں مراد اس سے قرآن ہے، جو شخص چاہے اسے یاد کر لے یعنی اللہ کو یاد کرے اور اپنے تمام کاموں میں اس کے فرمان کو مقدم رکھے، یا یہ مطلب ہے کہ وحی الٰہی کو یاد کر لے، یہ سورت اور وعظ و نصیحت بلکہ سارے کا سارا قرآن موقر معزز اور معتبر صحیفوں میں ہے جو بلند قدر اور اعلیٰ مرتبہ والے ہیں جو میل کچیل اور کمی زیادتی سے محفوظ اور پاک صاف ہیں، جو فرشتوں کے پاک ہاتھوں میں ہیں، اور یہ بھی مطلب ہو سکتا ہے کہ اصحاب رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے پاکیزہ ہاتھوں میں ہے۔ قتادہ رحمہ اللہ کا قول ہے کہ اس سے مراد قاری ہیں۔‏‏‏‏
10280

سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں کہ یہ نبطی زبان کا لفظ ہے معنی ہیں قاری، امام ابن جریر رحمہ اللہ فرماتے ہیں صحیح بات یہی ہے کہ اس سے مراد فرشتے ہیں جو اللہ تعالیٰ اور مخلوق کے درمیان سفیر ہیں۔‏‏‏‏ سفیر اسے کہتے ہیں کہ جو صلح اور بھلائی کے لیے لوگوں میں کوشش کرتا پھرے، عرب شاعر کے شعر میں یہی معنی پائے جاتے ہیں۔

امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں اس سے مراد فرشتے ہیں جو فرشتے اللہ کی جانب سے وحی وغیرہ لے کر آتے ہیں وہ ایسے ہی ہیں جیسے لوگوں میں صلح کرانے والے سفیر ہوتے ہیں۔‏‏‏‏ [صحیح بخاری:4937] ‏‏‏‏

وہ ظاہر باطن میں پاک ہیں، وجیہ، خوش رو، شریف اور بزرگ ظاہر میں، اخلاق و افعال کے پاکیزہ باطن میں۔ یہاں سے یہ بھی معلوم کرنا چاہیئے کہ قرآن کے پڑھنے والوں کو اعمال و اخلاق اچھے رکھنے چاہئیں۔

مسند احمد کی ایک حدیث میں ہے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں جو قرآن کو پڑھے اور اس کی مہارت حاصل کرے وہ بزرگ لکھنے والے فرشتوں کے ساتھ ہو گا اور جو باوجود مشقت کے بھی پڑھے اسے دوہرا اجر ملے گا ۔ [صحیح بخاری:4937] ‏‏‏‏
10281