قرآن مجيد

سورۃ القارعة
اپنا مطلوبہ لفظ تلاش کیجئیے۔

[ترجمہ محمد جوناگڑھی][ترجمہ فتح محمد جالندھری][ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
نمبر آيات تفسیر

--
بِسْمِ اللَّـهِ الرَّحْمَـنِ الرَّحِيمِ﴿﴾
شروع کرتا ہوں اللہ تعالٰی کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم کرنے والا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

1
الْقَارِعَةُ (1)
القارعة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
کھڑکھڑا دینے والی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
کھڑ کھڑانے والی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
وہ کھٹکھٹانے والی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
تفسیر آیت نمبر 1,2,3,4,5,6,7,8,9,10,11

2
مَا الْقَارِعَةُ (2)
ما القارعة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
کیا ہے وه کھڑکھڑا دینے والی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
کھڑ کھڑانے والی کیا ہے؟۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
کیا ہے وہ کھٹکھٹانے والی؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

3
وَمَا أَدْرَاكَ مَا الْقَارِعَةُ (3)
وما أدراك ما القارعة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
تجھے کیا معلوم کہ وه کھڑ کھڑا دینے والی کیا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور تم کیا جانوں کھڑ کھڑانے والی کیا ہے؟۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور تجھے کس چیز نے معلوم کروایا کہ وہ کھٹکھٹانے والی کیا ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

4
يَوْمَ يَكُونُ النَّاسُ كَالْفَرَاشِ الْمَبْثُوثِ (4)
يوم يكون الناس كالفراش المبثوث۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
جس دن انسان بکھرے ہوئے پروانوں کی طرح ہو جائیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
(وہ قیامت ہے) جس دن لوگ ایسے ہوں گے جیسے بکھرے ہوئے پتنگے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
جس دن لوگ بکھرے ہوئے پروانوں کی طرح ہو جائیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

5
وَتَكُونُ الْجِبَالُ كَالْعِهْنِ الْمَنْفُوشِ (5)
وتكون الجبال كالعهن المنفوش۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اور پہاڑ دھنے ہوئے رنگین اون کی طرح ہو جائیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور پہاڑ ایسے ہو جائیں گے جیسے دھنکی ہوئی رنگ برنگ کی اون۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور پہاڑ دھنکی ہوئی رنگین اون کی طرح ہو جائیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

6
فَأَمَّا مَنْ ثَقُلَتْ مَوَازِينُهُ (6)
فأما من ثقلت موازينه۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
پھر جس کے پلڑے بھاری ہوں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
تو جس کے (اعمال کے) وزن بھاری نکلیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
تو لیکن وہ شخص جس کے پلڑے بھاری ہو گئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

7
فَهُوَ فِي عِيشَةٍ رَاضِيَةٍ (7)
فهو في عيشة راضية۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
وه تو دل پسند آرام کی زندگی میں ہوگا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
وہ دل پسند عیش میں ہو گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
تو وہ خوشی کی زندگی میں ہو گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

8
وَأَمَّا مَنْ خَفَّتْ مَوَازِينُهُ (8)
وأما من خفت موازينه۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اور جس کے پلڑے ہلکے ہوں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور جس کے وزن ہلکے نکلیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور لیکن وہ شخص جس کے پلڑے ہلکے ہو گئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

9
فَأُمُّهُ هَاوِيَةٌ (9)
فأمه هاوية۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اس کا ٹھکانا ہاویہ ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اس کا مرجع ہاویہ ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
تو اس کی ماں ہاویہ ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

10
وَمَا أَدْرَاكَ مَا هِيَهْ (10)
وما أدراك ما هيه۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
تجھے کیا معلوم کہ وه کیا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور تم کیا سمجھے کہ ہاویہ کیا چیز ہے؟۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور تجھے کس چیز نے معلوم کروایا کہ وہ کیا ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

11
نَارٌ حَامِيَةٌ (11)
نار حامية۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
وه تند وتیز آگ (ہے)۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
دہکتی ہوئی آگ ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
ایک سخت گرم آگ ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔