الحمدللہ! انگلش میں کتب الستہ سرچ کی سہولت کے ساتھ پیش کر دی گئی ہے۔

 
بلوغ المرام کل احادیث 1359 :حدیث نمبر
بلوغ المرام
طہارت کے مسائل
पवित्रता के नियम
3. باب إزالة النجاسة وبيانها
3. نجاست کی تفصیل اور اسے دور کرنے کا بیان
३. “ अपवित्रता क्या है और उसे दूर करने के नियम ”
حدیث نمبر: 22
Save to word مکررات اعراب Hindi
عن انس بن مالك رضي الله عنه قال: سئل رسول الله صلى الله عليه وآله وسلم عن الخمر: تتخذ خلا؟ فقال: «لا» .‏‏‏‏ اخرجه مسلم والترمذي،‏‏‏‏ وقال: حسن صحيح.عن أنس بن مالك رضي الله عنه قال: سئل رسول الله صلى الله عليه وآله وسلم عن الخمر: تتخذ خلا؟ فقال: «لا» .‏‏‏‏ أخرجه مسلم والترمذي،‏‏‏‏ وقال: حسن صحيح.
سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے شراب سے سرکہ بنانے کے بارے میں دریافت کیا گیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسا کرنے سے منع فرمایا۔ (مسلم و ترمذی) اور ترمذی نے اسے حسن اور صحیح قرار دیا ہے۔
हज़रत अनस बिन मलिक रज़िअल्लाहुअन्ह रिवायत करते हैं कि रसूल अल्लाह सल्लल्लाहु अलैहि वसल्लम से शराब से सिरका बनाने के बारे में पूछा गया तो आप सल्लल्लाहु अलैहि वसल्लम ने ऐसा करने से मना कर दिया । (मुस्लिम और त्रिमीज़ी) और त्रिमीज़ी ने इसे हसन और सहीह ठहराया है ।

تخریج الحدیث: «أخرجه مسلم، الأشربة، باب تحريم تخليل الخمر، حديث:1983، والترمذي، البيوع، حديث:1294.»

Narrated Anas bin Malik (rad): Allah’s Messenger (ﷺ) was asked about making vinegar out of wine. He said, “No (it is prohibited)”. [Reported by Muslim, and At-Tirmidhi and the latter graded it Hasan-Sahih (fair and sound)].
USC-MSA web (English) Reference: 0


حكم دارالسلام: صحيح

   صحيح مسلم5140أنس بن مالكالخمر تتخذ خلا فقال لا
   جامع الترمذي1294أنس بن مالكأيتخذ الخمر خلا قال لا
   بلوغ المرام22أنس بن مالكسئل رسول الله صلى الله عليه وآله وسلم عن الخمر: تتخذ خلا؟ فقال: لا
بلوغ المرام کی حدیث نمبر 22 کے فوائد و مسائل
  علامه صفي الرحمن مبارك پوري رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث بلوغ المرام 22  
لغوی تشریح:
«عَنِ الْخَمْرِ» یعنی حرمت شراب کے بعد شراب سے سرکہ بنانے کے بارے میں دریافت کیا گیا۔
«خَلّ» خا کے فتحہ اور لام کی تشدید کے ساتھ ہے اور اس کے معنی شراب یا انگور وغیرہ کے شیرے سے تیار کردہ سرکے کے ہیں، یعنی کیا شراب کی صورت تبدیل کر کے سرکہ بنا لینا جائز ہے یا نہیں؟ «قَالَ: لَا» اس کے جواب میں آپ صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ ایسا کرنا جائز نہیں۔ اس میں نہی تحریم کے لیے ہے۔

فوائد و مسائل:
➊ اس میں یہ دلیل پائی جاتی ہے کہ شراب کا سرکہ بنانا حرام ہے، البتہ جب شراب خود بخود سرکہ بن جائے تو اس کے جواز اور حرمت کے بارے میں فقہاء کے درمیان اختلاف ہے۔ صحیح یہ ہے کہ ایسی صورت میں اس کی حرمت پر کوئی واضح دلیل نہیں۔ اور یہ حقیقت معلوم ہے کہ ایک چیز کی حالت کے بدلنے سے اس کا حکم بھی تبدیل ہو جاتا ہے۔ اور اشیاء میں اصل جواز ہے۔ اور یہی بات راجح ہے۔
➋ اس حدیث کا پس منظر کچھ اس طرح ہے کہ سیدنا ابوطلحہ رضی اللہ عنہ کے پاس یتیموں کی شراب تھی۔ حرمت شراب کا حکم آنے کے بعد انھیں اندیشہ لاحق ہوا کہ یتیموں کا بڑا نقصان ہو گا۔ اس نقصان سے بچنے کے لیے انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم سے شراب کو سرکے میں تبدیل کرنے کی اجازت طلب کی جس کے جواب میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسا کرنے سے صاف طور پر منع فرما دیا۔ [سنن أبى داود، الأشربة، باب ما جاء فى الخمر تخلل، حديث: 3675] اس کھلی اور واضح ممانعت کے باوجود جس کسی نے شراب سے سرکہ بنانے کے جواز کا فتویٰ دیا اس نے نص صریح کی خلاف ورزی کی۔
➌ اس حدیث (اور دیگر ادلۂ شرعیہ) سے معلوم ہوا کہ شراب کا ہر قسم کا استعمال ناجائز ہے اور اس سے سرکہ بنانا بھی ممنوع ہے۔
   بلوغ المرام شرح از صفی الرحمن مبارکپوری، حدیث/صفحہ نمبر: 22   

تخریج الحدیث کے تحت دیگر کتب سے حدیث کے فوائد و مسائل
  الشيخ الحديث مولانا عبدالعزيز علوي حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث ، صحيح مسلم: 5140  
حضرت انس رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان کرتے ہیں، نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے دریافت کیا گیا، کیا خمر کو سرکہ بنا لیا جائے؟ آپﷺ نے فرمایا: نہیں۔ [صحيح مسلم، حديث نمبر:5140]
حدیث حاشیہ:
فوائد ومسائل:
اس حدیث کی رو سے جمہور فقہاء،
امام شافعی،
احمد،
مالک وغیرہم کے نزدیک شراب سے سرکہ بنانا جائز نہیں ہے،
ہاں اگر خود بخود بن جائے تو بالاتفاق جائز ہے،
لیکن امام ابو حنیفہ اور اوزاعی کے نزدیک شراب سے سرکہ بنانا جائز ہے اور اس کے لیے اس حدیث سے استدلال کرتے ہیں،
جس کا معنی دو احتمال رکھتا ہے،
مثلا خير خلكم خل خمركم تمہارا بہترین سرکہ،
تمہارے شراب کا سرکہ ہے،
اس کا صحیح معنی تو یہ ہے،
جب وہ خود بخود سرکہ بن جائے،
تاکہ دونوں حدیثوں میں تضاد نہ ہو۔
(حالانکہ اس حدیث کو ابن جوزی اور صنعانی نے موضوع قرار دیا ہے)
   تحفۃ المسلم شرح صحیح مسلم، حدیث/صفحہ نمبر: 5140   


http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.