صحيح مسلم کل احادیث 3033 :ترقیم فواد عبدالباقی
صحيح مسلم کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح مسلم
ذکر الہی، دعا، توبہ، اور استغفار
10. باب فَضْلِ التَّهْلِيلِ وَالتَّسْبِيحِ وَالدُّعَاءِ:
10. باب: لا الہ الا اللہ اور سبحان اللہ اور دعا کی فضیلت۔
حدیث نمبر: 6846
پی ڈی ایف بنائیں اعراب
حدثنا محمد بن عبد الله بن نمير ، وزهير بن حرب ، وابو كريب ، ومحمد بن طريف البجلي ، قالوا: حدثنا ابن فضيل ، عن عمارة بن القعقاع ، عن ابي زرعة ، عن ابي هريرة ، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: " كلمتان خفيفتان على اللسان ثقيلتان في الميزان حبيبتان إلى الرحمن، سبحان الله وبحمده سبحان الله العظيم ".حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ نُمَيْرٍ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، وَأَبُو كُرَيْبٍ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ طَرِيفٍ الْبَجَلِيُّ ، قَالُوا: حَدَّثَنَا ابْنُ فُضَيْلٍ ، عَنْ عُمَارَةَ بْنِ الْقَعْقَاعِ ، عَنْ أَبِي زُرْعَةَ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: " كَلِمَتَانِ خَفِيفَتَانِ عَلَى اللِّسَانِ ثَقِيلَتَانِ فِي الْمِيزَانِ حَبِيبَتَانِ إِلَى الرَّحْمَنِ، سُبْحَانَ اللَّهِ وَبِحَمْدِهِ سُبْحَانَ اللَّهِ الْعَظِيمِ ".
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، کہا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "دو کلمے ہیں جو زبان پر ہلکے ہیں اور میزان میں بھاری ہیں اور اللہ کو بہت محبوب ہیں: " سبحان اللہ وبحمدہ سبحان العظیم" اللہ ہر اس چیز سے پاک ہے جو اس کے شایان شان نہیں اور سب حمد اسی کو سزاوار ہے، اللہ ہر اس چیز سے پاک ہے جو اس کے شایان شان نہیں اور عظمت کی ہر صفت سے متصف ہے۔"
حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان کرتے ہیں، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:" دو بول ہیں،زبان پر ہلکے ہوں گے۔ میزان اعمال میں بڑے بھاری اور رحمٰن کو بہت پیارے "سبحان الله وبحمده سبحان الله العظيم""میں اللہ کی پاکی بیان کرتا ہوں اس کی حمدو ستائش کے ساتھ میں اللہ کی پاکی بیان کرتا ہوں جو بڑی عظمت والا ہے۔ "
ترقیم فوادعبدالباقی: 2694
   صحيح البخاري6682عبد الرحمن بن صخركلمتان خفيفتان على اللسان ثقيلتان في الميزان حبيبتان إلى الرحمن سبحان الله وبحمده سبحان الله العظيم
   صحيح البخاري6406عبد الرحمن بن صخركلمتان خفيفتان على اللسان ثقيلتان في الميزان حبيبتان إلى الرحمن سبحان الله العظيم سبحان الله وبحمده
   صحيح البخاري7563عبد الرحمن بن صخركلمتان حبيبتان إلى الرحمن خفيفتان على اللسان ثقيلتان في الميزان سبحان الله وبحمده سبحان الله العظيم
   صحيح مسلم6846عبد الرحمن بن صخركلمتان خفيفتان على اللسان ثقيلتان في الميزان حبيبتان إلى الرحمن سبحان الله وبحمده سبحان الله العظيم
   جامع الترمذي3467عبد الرحمن بن صخركلمتان خفيفتان على اللسان ثقيلتان في الميزان حبيبتان إلى الرحمن سبحان الله وبحمده سبحان الله العظيم
   سنن ابن ماجه3806عبد الرحمن بن صخركلمتان خفيفتان على اللسان ثقيلتان في الميزان حبيبتان إلى الرحمن سبحان الله وبحمده سبحان الله العظيم
   بلوغ المرام1358عبد الرحمن بن صخر كلمتان حبيبتان إلى الرحمن خفيفتان على اللسان ثقيلتان في الميزان : سبحان الله وبحمده ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ سبحان الله العظيم

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  الشيخ محمد حسين ميمن حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري 7563  
´اللہ تعالیٰ کا (سورۃ انبیاء میں) فرمان اور قیامت کے دن ہم ٹھیک ترازوئیں رکھیں گے`
«. . . عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، قَالَ قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:" كَلِمَتَانِ حَبِيبَتَانِ إِلَى الرَّحْمَنِ خَفِيفَتَانِ عَلَى اللِّسَانِ، ثَقِيلَتَانِ فِي الْمِيزَانِ، سُبْحَانَ اللَّهِ وَبِحَمْدِهِ، سُبْحَانَ اللَّهِ الْعَظِيمِ . . .»
. . . ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے کہا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: دو کلمے ایسے ہیں جو اللہ تبارک و تعالیٰ کو بہت ہی پسند ہیں جو زبان پر ہلکے ہیں اور قیامت کے دن اعمال کے ترازو میں بوجھل اور باوزن ہوں گے، وہ کلمات مبارکہ یہ ہیں «سبحان الله وبحمده،‏‏‏‏ سبحان الله العظيم» ۔ [صحيح البخاري/كِتَاب التَّوْحِيدِ: 7563]
صحیح بخاری کی حدیث نمبر: 7563 کا باب: «بَابُ قَوْلِ اللَّهِ تَعَالَى: {وَنَضَعُ الْمَوَازِينَ الْقِسْطَ}

باب اور حدیث میں مناسبت:
امام بخاری رحمہ اللہ نے اس کتاب «الجامع الصحيح» میں عجیب عجیب لطائف کے نظارے کروائے ہیں، عجیب عجیب طریقے سے استنباط اور اجتہاد کے دروازے کھولے ہیں، امام بخاری رحمہ اللہ نے پہلی حدیث جو کتاب الوحی میں ذکر فرمائی ہے اس میں «إنما الأعمال بالنيات» کو درج فرمایا، تاکہ پڑھنے والا اپنی نیت کو درست کر لے اور یہ ثابت فرمایا کہ ہر عمل کی قبولیت نیت سے ہوا کرتی ہے اور اس کو ثواب بھی اس کی نیت کے موافق ملے گا، پہلی حدیث کی سند میں پہلے اس راوی کو چنا جو قریشی ہے اور امی خدیجہ رضی اللہ عنہا کی نسبت سے تعلق رکھتا ہے، اور سند میں سارے راوی شروع میں مکی ہیں اور مکی کے بعد مدنی ہیں۔ یہاں پر امام بخاری رحمہ اللہ کی غرض یہ ہے کہ دین اسلام مکہ سے شروع ہوا اور مدینہ پہنچا، اس کے بعد ساری دنیا میں، یہاں تک کہ عجم تک پہنچا، اسی لیے مندرجہ بالا آخری حدیث «كلماتان حبيبتان» میں بعض راوی عجمی ہیں، دوسرا تعلق یہ ہے کہ انسان کی راہنمائی کی ابتداء وحی کے ذریعہ ہے اسی لیے کتاب الوحی کا ذکر فرمایا ہے، اور تمام اعمال کرنے کے بعد موت کا معاملہ ہے، اور اعمال کی اصل شرط قبولیت عقیدہ توحید ہے، لہذا آخری میں کتاب التوحید کا ذکر فرمایا، اور آخری امتحان ترازو کا ہے اسی لیے آخری حدیث ترازو کے متعلق قائم فرمائی ہے۔

اس حوالے سے ایک اور نکتہ بھی قابل ذکر ہے کہ امام بخاری رحمہ اللہ نے پہلی حدیث «إنما الأعمال بالنيات» ذکر فرمائی ہے اور آخری حدیث «كلمتان حبيبتان» ذکر فرمائی، سند کے اعتبار سے یہ دونوں احادیث «غريب» ہیں، گویا امام بخاری رحمہ اللہ اس حدیث کی طرف اشارہ فرمارہے ہیں کہ «بداء الإسلام غريبًا و سيعود غريبًا كما بدأ . . . . .» گویا یہاں پر یہ مقصود ہے کہ ان دونوں ابواب میں جتنی احادیث ہیں سب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تک پہنچتی ہیں۔

چنانچہ سراج الدین البلقینی رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
«مناسبة أبواب صحيح البخاري الذى نقلته عنه فى أواخر المقدمة مما كان أصل العصمة أولاً و آخرًا هو توحيد الله فختم بكتاب التوحيد.» [فتح الباري لابن حجر: 662/14]
یعنی شیخ سراج الدین بلقینی رحمہ اللہ نے کہا کہ صحیح بخاری کے ابواب کی مناسبت جسے میں نے اپنے اواخر مقدمہ میں لکھا ہے کہ ان میں اول و آخر عصمت (پاکیزگی) کو ملحوظ رکھا گیا ہے جس کی اصل اللہ کی توحید ہے، اسی لیے آپ نے کتاب کو کتاب التوحید پر ختم کیا ہے اور آخر امر جس سے ناجی و غیر ناجی میں فرق ہو گا، وہ روز حشر میں میزان کا بھاری اور ہلکا ہونا ہے، اس کو اسی لیے کتاب کا آخری باب قرار دیا ہے، پس «إنما الأعمال بالنيات» سے کتاب کو شروع فرمایا اور نیتوں کا تعلق دنیا سے ہے اور اس پر ختم کیا کہ اعمال قیامت کے دن وزن کیے جائیں گے، اس میں ادھر اشارہ ہے کہ وہی اعمال خیر میزان حشر میں وزنی ہوں گے جو خالص نیت کے ساتھ رضائے الٰہی کے لیے کیے گئے ہوں گے، اور حدیث جو اس باب کے تحت مذکور ہوئی، اس میں ترغیب اور تخفیف بھی ہے۔

لہذا ترجمۃ الباب سے حدیث کی مناسبت اس طرح ہے کہ امام بخاری رحمہ اللہ نے تحت الباب جس حدیث کو پیش فرمایا ہے اس میں میزان کا ذکر ہے، لہٰذا یہیں سے باب اور حدیث میں مناسبت ہے۔

حافظ ابن حجر رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
«أن البخاري قصد ختم كتابه الجامع الصحيح بما دلّ على الوزن، لأنه آخر أثار التكليف، فإنه ليس بعد الوزن إلا الاستقرار فى أحد الدارين، إلى أن يريد الله إخراج من قضىٰ بتعزيبه من الموحّدين، فيخرجون من النار بالشفاعة.» [فتح الباري لابن حجر: 460/14]
یعنی امام بخاری رحمہ اللہ نے قصد فرمایا کہ اپنی صحیح بخاری کو اس مقام پر ختم کریں جہاں وزن کی دلالت ہو، کیوں کہ آخری تکلیف وزن ہی کی ہے، وزن کے قائم ہونے کے بعد صرف استقرار ہو گا دو جگہوں میں سے ایک جگہ پر۔ پس جسے اللہ تعالیٰ عذاب سے نکالنا چاہے گا موحدین کو تو انہیں آگ کے عذاب سے شفاعت کے ذریعے نکال دیا جائے گا۔
   عون الباری فی مناسبات تراجم البخاری ، جلد دوئم، حدیث\صفحہ نمبر: 328   
  مولانا عطا الله ساجد حفظ الله، فوائد و مسائل، سنن ابن ماجه، تحت الحديث3806  
´تسبیح (سبحان اللہ) کہنے کی فضیلت۔`
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: دو کلمے زبان پر بہت ہلکے ہیں ۱؎، اور میزان میں بہت بھاری ہیں، اور رحمن کو بہت پسند ہیں (وہ دو کلمے یہ ہیں) «سبحان الله وبحمده سبحان الله العظيم» اللہ (ہر عیب و نقص سے) پاک ہے اور ہم اس کی تعریف بیان کرتے ہیں، عظیم (عظمت والا) اللہ (ہر عیب و نقص) سے پاک ہے) ۱؎۔ [سنن ابن ماجه/كتاب الأدب/حدیث: 3806]
اردو حاشہ:
فوائد و مسائل:
(1)
قیامت کے دن اعمال کا وزن ہوگا۔

(2)
اللہ کا ذکر بھی ایک نیک عمل ہے، اس کا بھی وزن ہوگا۔

(3)
اعمال کے وزن کا دارومدار خلوص نیت اور اتباع سنت پر ہے۔
سنت کے مطابق خلوص سے کیا ہوا تھوڑا سا عمل بھی زیادہ وزنی ہوگا لیکن خلوص کے بغیر یا سنت کے خلاف کیا ہوا زیادہ عمل بھی بے وزن ہوگا۔
اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
﴿وَقَدِمنا إِلىٰ ما عَمِلوا مِن عَمَلٍ فَجَعَلناهُ هَباءً مَنثورً‌ا﴾ (الفرقان 25: 23)
اور انہوں نے جو (بظاہر نیک)
اعمال کیے ہوں گے، ہم ان کی طرف متوجہ ہو کر انہیں پرا گندہ غبار کی طرح کر دیں گے۔

(4)
مذکورہ بالا ذکر زیادہ سے زیادہ کرنا چا ہیے۔
   سنن ابن ماجہ شرح از مولانا عطا الله ساجد، حدیث\صفحہ نمبر: 3806   
  علامه صفي الرحمن مبارك پوري رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث بلوغ المرام 1358  
´ذکر اور دعا کا بیان`
سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا دو کلمے ہیں جو رحمن کو بڑے پیارے ہیں۔ زبان پر ہلکے ہیں۔ ترازو میں بھاری ہیں، (وہ یہ ہیں) «سبحان الله وبحمده، ‏‏‏‏ سبحان الله العظيم» اللہ پاک ہے، ساتھ اپنی تعریف کے، اللہ پاک ہے، عظمت والا۔ (بخاری و مسلم) «بلوغ المرام/حدیث: 1358»
تخریج:
«أخرجه البخاري، الدعوات، باب فضل التسبيح، حديث:6406، (7563 آخر البخاري)، ومسلم، الذكروالدعاء، باب فضل التهليل والتسبيح والدعاء، حديث:2694.»
تشریح:
1.مؤلف رحمہ اللہ نے اس کتاب کی ترتیب و تنسیق بہت خوبصورت اور حسین انداز میں کی ہے اور انھوں نے حمد اور تسبیح دونوں کو جمع کر دیا ہے اور وہ اس طرح کہ کتاب کا آغاز بسم اللّٰہ اور الحمدللّٰہ سے کیا اور اختتام تسبیح و تحمید اور تعظیم سے کیا۔
اور غالباً اسی وجہ سے مصنف نے احادیث کے حوالہ جات میں اپنی عام عادت کو چھوڑ کر نیا انداز اختیار کیا ہے۔
انھوں نے اس حدیث کے آخر میں متفق علیہ کہنے کی بجائے شروع میں أَخْرَجَ الشَّیْخَان کہہ دیا تاکہ اس کتاب کے آخری الفاظ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ہوں‘ یعنی «سُبْحَانَ اللّٰہِ وَبِحَمْدِہٖ ‘ سُبْحَانَ اللّٰہِ الْعَظِیمِ» 2. اس حدیث میں دو کلموں کا ہلکا اور وزنی ہونا یہ معنی رکھتا ہے کہ زبان سے ان کا ادا کرنا سہل و آسان ہے۔
یہ کلمے بڑی آسانی سے ہر ایک کی زبان پر رواں ہو جاتے ہیں‘ کسی دقت کا سامنا نہیں کرنا پڑتا کیونکہ ان میں حروف ثقیلہ کا استعمال نہیں ہوا۔
اور ان کے بھاری ہونے کے معنی یہ ہیں کہ جس طرح نیکی کے مشقت والے اعمال وزن میں بھاری ہوں گے اسی طرح یہ آسانی سے پڑھے جانے والے کلمات بھی میزان اعمال میں بھاری اور ثقیل ہوں گے۔
3.اس حدیث سے ثابت ہوا کہ قیامت کے روز اعمال کا جسم ہوگا اور انھیں تولا جائے گا۔
4.اس حدیث سے اللہ عزوجل کی وسعت رحمت کا بھی پتہ چلتا ہے کہ وہ اپنے نیک و مخلص بندوں کے تھوڑے اعمال کے بدلے میں بہت زیادہ اجر و ثواب عطا فرمائے گا۔
یہ محض اس کا فضل و کرم اور مہربانی ہے۔
اس کی رحمت ہر چیز پر حاوی ہے۔
   بلوغ المرام شرح از صفی الرحمن مبارکپوری، حدیث\صفحہ نمبر: 1358   
  الشيخ الحديث مولانا عبدالعزيز علوي حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث ، صحيح مسلم: 6846  
1
حدیث حاشیہ:
فوائد ومسائل:
سبحان الله وبحمده کا معنی ہے کہ وہ ہر عیب و نقص سے منزہ اور پاک ہے اور ہر خوبی و کمال سے متصف ہے،
وہ ہر عیب سے پاک اور ہر کمال سے متصف ہونے کی بنا پر،
محبت کا حقدار ہے،
لیکن اس کے ساتھ ساتھ سبحان الله العظيم ہے،
عظمت و جلالت سے متصف ہے،
اس لیے اس کی نافرمانی اور عصیان سے بچنا چاہیے،
اس جامعیت کی بنا پر زبان سے آسانی اور سہولت کے ساتھ ادا ہونے کے باوجود یہ اللہ کو محبوب ہیں،
اس بنا پر یہ میزان اعمال میں بھاری ہیں اور اس حدیث سے ثابت ہوتا ہے،
اعمال کا وزن ہو گا اور جس طرح مادی چیزیں ہلکی اور بھاری ہوتی ہیں اور ان کا وزن معلوم کرنے کے لیے آلات ہوتے ہیں،
اس طرح بہت سی غیر مادی چیزیں بھی ہلکی اور بھاری ہوتی ہیں،
جیسے حرارت و برودت،
یعنی گرمی اور ٹھنڈک،
اس طرح قیامت کے دن اعمال کا وزن ہو گا۔
   تحفۃ المسلم شرح صحیح مسلم، حدیث\صفحہ نمبر: 6846   


http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.