تفسير ابن كثير



سورۃ الأعلى
نماز وتر کی سورتیں:

اس سورت کے مکی ہونے کی دلیل یہ حدیث ہے جو صحیح بخاری شریف میں ہے، سیدنا براء بن عازب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ اصحاب رسول صلی اللہ علیہ وسلم میں سے سب سے پہلے ہمارے پاس سیدنا مصعب بن عمیر رضی اللہ عنہ اور سیدنا ابن مکتوم رضی اللہ عنہ آئے ہمیں قرآن پڑھانا شروع کیا پھر سیدنا عمار، سیدنا بلال، سیدنا سعد رضی اللہ عنہم آئے پھر سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ اپنے ساتھ بیس صحابیوں کو لے کر آئے۔ میں نے اہل مدینہ کو کسی چیز پر اس قدر خوش ہوتے نہیں دیکھا جتنے اس پر خوش ہوئے یہاں تک کہ چھوٹے بچے اور نابالغ لڑکے بھی پکار اٹھے کہ یہ ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم آپ تشریف لائے آپ کے آنے سے پہلے ہی میں نے یہ سورت «سَبِّحِ اسْمَ رَبِّكَ الْأَعْلَى» [الاعلیٰ-1] ‏‏‏‏ اسی جیسی اور سورتوں کے ساتھ یاد کر لی تھی۔ [صحیح بخاری:4941] ‏‏‏‏

مسند احمد میں ہے کہ یہ سورۃ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو بہت محبوب تھی۔ [مسند احمد:96/1:ضعیف] ‏‏‏‏

بخاری و مسلم کی حدیث میں ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدنا معاذ رضی اللہ عنہ سے فرمایا تو نے سورۃ «‏سبح اسم ربك الأعلى» اور «‏والشمس وضحاہا» اور «والليل إذا يغشى» کے ساتھ نماز کیوں نہ پڑھائی۔ [صحیح بخاری:705] ‏‏‏‏

مسند احمد میں مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم «‏سبح اسم ربك الأعلى» اور «هل أتاك حديث الغاشية» دونوں عیدوں کی نمازوں میں پڑھا کرتے تھے، اور جمعہ والے دن اگر عید ہوتی تو عید میں اور جمعہ میں دونوں میں انہی سورتوں کو پڑھتے۔ یہ حدیث صحیح مسلم میں بھی ہے ابوداود اور ترمذی اور نسائی میں بھی ہے ابن ماجہ وغیرہ میں بھی مروی ہے۔ [صحیح مسلم:878] ‏‏‏‏

مسند احمد میں سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ وتر نماز میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم «‏سبح اسم ربك الأعلى» اور «قل ياأيہا الكافرون» اور «قل ھو اللہ أحد» پڑھتے تھے، ایک اور روایت میں اتنی زیادتی بھی ہے کہ سورۃ معوذتین یعنی «قل اعوذ برب الفلق» اور «قل اعوذ برب الناس» اور بھی پڑھتے تھے۔ [سنن ابوداود:1423،قال الشيخ الألباني:صحیح] ‏‏‏‏

یہ حدیث بھی بہت سے صحابیوں سے بہت سے طریق کے ساتھ مروی ہے ہمیں اگر کتاب کے طویل ہو جانے کا خوف نہ ہوتا تو ان سندوں کو اور ان تمام روایتوں کے الفاظ کو جہاں تک میسر ہوتے نقل کرتے لیکن جتنا کچھ اختصار کے ساتھ بیان کر دیا یہ بھی کافی ہے۔ «واللہ اعلم»


[ترجمہ محمد جوناگڑھی][ترجمہ فتح محمد جالندھری][ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
بِسْمِ اللَّـهِ الرَّحْمَـنِ الرَّحِيمِ﴿﴾
شروع کرتا ہوں اللہ تعالٰی کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم کرنے والا ہے۔

 
 

سَبِّحِ اسْمَ رَبِّكَ الْأَعْلَى[1] الَّذِي خَلَقَ فَسَوَّى[2] وَالَّذِي قَدَّرَ فَهَدَى[3] وَالَّذِي أَخْرَجَ الْمَرْعَى[4] فَجَعَلَهُ غُثَاءً أَحْوَى[5]

[ترجمہ محمد عبدالسلام بن محمد] اپنے رب کے نام کی تسبیح کر جو سب سے بلند ہے۔ [1] وہ جس نے پیدا کیا، پس درست بنایا۔ [2] اور وہ جس نے اندازہ ٹھہرایا، پھر ہدایت کی ۔ [3] اور وہ جس نے چارا اگایا۔ [4] پھر اس نے اسے سیاہ کوڑا کرکٹ کر دیا ۔ [5]
........................................

[ترجمہ محمد جوناگڑھی] اپنے بہت ہی بلند اللہ کے نام کی پاکیزگی بیان کر [1] جس نے پیدا کیا اور صحیح سالم بنایا [2] اور جس نے (ٹھیک ٹھاک) اندازه کیا اور پھر راه دکھائی [3] اور جس نے تازه گھاس پیدا کی [4] پھر اس نے اس کو (سکھا کر) سیاه کوڑا کر دیا [5]۔
........................................

[ترجمہ فتح محمد جالندھری] (اے پیغمبر) اپنے پروردگار جلیل الشان کے نام کی تسبیح کرو [1] جس نے (انسان کو) بنایا پھر (اس کے اعضاء کو) درست کیا [2] اور جس نے (اس کا) اندازہ ٹہرایا (پھر اس کو) رستہ بتایا [3] اور جس نے چارہ اگایا [4] پھر اس کو سیاہ رنگ کا کوڑا کر دیا [5]۔
........................................