سنن نسائي کل احادیث 5761 :حدیث نمبر
سنن نسائي
کتاب: تطبیق کے احکام و مسائل
The Book of The At-Tatbiq (Clasping One\'s Hands Together)
100. بَابُ : كَيْفَ التَّشَهُّدُ الأَوَّلُ
100. باب: پہلے تشہد کی کیفیت کا بیان؟
Chapter: What is said in the first tashahhud
حدیث نمبر: 1171
پی ڈی ایف بنائیں مکررات اعراب
(مرفوع) اخبرنا بشر بن خالد العسكري، قال: حدثنا غندر، قال: حدثنا شعبة، عن سليمان، ومنصور، وحماد، ومغيرة، وابي هاشم، عن ابي وائل، عن عبد الله، عن النبي صلى الله عليه وسلم قال:" في التشهد التحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك ايها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين اشهد ان لا إله إلا الله واشهد ان محمدا عبده ورسوله". قال ابو عبد الرحمن: ابو هاشم غريب.
(مرفوع) أَخْبَرَنَا بِشْرُ بْنُ خَالِدٍ الْعَسْكَرِيُّ، قال: حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ، قال: حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ سُلَيْمَانَ، وَمَنْصُورٍ، وَحَمَّادٍ، وَمُغِيرَةَ، وأَبِي هَاشِمٍ، عَنْ أَبِي وَائِلٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:" فِي التَّشَهُّدِ التَّحِيَّاتُ لِلَّهِ وَالصَّلَوَاتُ وَالطَّيِّبَاتُ السَّلَامُ عَلَيْكَ أَيُّهَا النَّبِيُّ وَرَحْمَةُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ السَّلَامُ عَلَيْنَا وَعَلَى عِبَادِ اللَّهِ الصَّالِحِينَ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ وَأَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُهُ وَرَسُولُهُ". قَالَ أَبُو عَبْد الرَّحْمَنِ: أَبُو هَاشِمٍ غَرِيبٌ.
عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم تشہد میں «التحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة اللہ وبركاته السلام علينا وعلى عباد اللہ الصالحين أشهد أن لا إله إلا اللہ وأشهد أن محمدا عبده ورسوله» کہتے۔

تخریج الحدیث: «حدیث منصور وحماد، عن أبي وائل، عن عبداللہ تقدم تخریجہ انظر حدیث رقم: 1166، ولکن حدیث سلیمان بن مہران، عن الأعمش، عن أبي وائل، عن عبداللہ (صحیح) ٭ابو عبدالرحمن (نسائی) کہتے ہیں: ابو ہاشم غریب ہیں 1؎۔ وضاحت 1؎: یعنی اس روایت میں ان کا ذکر صرف اس سند میں ہے۔»

قال الشيخ الألباني: صحيح

قال الشيخ زبير على زئي: متفق عليه

   صحيح البخاري831عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين إنكم إذا قلتموها أصابت كل عبد لله صالح في السماء والأرض أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله
   صحيح البخاري6265عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله
   صحيح البخاري7381عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله
   صحيح البخاري835عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين إنكم إذا قلتم أصاب كل عبد في السماء أو بين السماء والأرض أشهد أن لا إله إلا الله
   صحيح البخاري6230عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين إذا قال ذلك أصاب كل عبد صالح في السماء والأرض أشهد أن لا إله إلا الله
   صحيح البخاري6328عبد الله بن مسعودالتحيات لله إلى قوله الصالحين فإذا قالها أصاب كل عبد لله في السماء والأرض صالح أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله ثم يتخير من الثناء ما شاء
   صحيح البخاري1202عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله فإنكم إذا فعلتم ذلك فقد سلمتم على كل عبد لله صالح في السماء والأرض
   صحيح مسلم897عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين فإذا قالها أصابت كل عبد لله صالح في السماء والأرض أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده
   جامع الترمذي1105عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله والتشهد في الحاجة إن الحمد لله نستعينه ونستغفره ونعوذ بالله من شرور أنفسنا
   جامع الترمذي289عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله
   سنن أبي داود968عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين إنكم إذا قلتم ذلك أصاب كل عبد صالح في السماء والأرض أو بين السماء والأرض
   سنن النسائى الصغرى1164عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله وليتخير أحدكم من الدعاء أعجبه إليه فليدع الله
   سنن النسائى الصغرى1172عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي
   سنن النسائى الصغرى1278عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي
   سنن النسائى الصغرى1280عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله ثم ليتخير بعد ذلك من الكلام ما شاء
   سنن النسائى الصغرى1167عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي
   سنن النسائى الصغرى1299عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين إنكم إذا قلتم ذلك أصابت كل عبد صالح في السماء والأرض أشهد أن لا إله إلا الله
   سنن النسائى الصغرى1168عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي
   سنن النسائى الصغرى1169عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين أشهد أن لا إله إلا الله وحده لا شريك له وأشهد أن محمدا عبده ورسوله
   سنن النسائى الصغرى1170عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي
   سنن النسائى الصغرى1171عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي
   سنن النسائى الصغرى1165عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله إلى آخر التشهد
   سنن النسائى الصغرى1163عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي
   سنن ابن ماجه899عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين إذا قال ذلك أصابت كل عبد صالح في السماء والأرض أشهد أن لا إله إلا الله
   بلوغ المرام247عبد الله بن مسعودالتحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك ايها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين اشهد ان لا إله إلا الله واشهد ان محمدا عبده ورسوله ثم ليتخير من الدعاء اعجبه إليه فيدعو
   المعجم الصغير للطبراني180عبد الله بن مسعود علمه التشهد ، التحيات لله ، والصلوات والطيبات ، السلام عليك أيها النبى ورحمة الله وبركاته ، السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين ، أشهد أن لا إله إلا الله ، وأشهد أن محمدا عبده ورسوله
   المعجم الصغير للطبراني270عبد الله بن مسعود علمنا رسول الله صلى الله عليه وآله وسلم التشهد ، التحيات لله ، والصلوات الطيبات ، السلام عليك أيها النبى ورحمة الله وبركاته ، السلام علينا ، وعلى عباد الله الصالحين ، أشهد أن لا إله إلا الله ، وأن محمدا عبده ورسوله

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  الشيخ محمد حسين ميمن حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري 6265  
´دونوں ہاتھ پکڑنا`
«. . . وَصَافَحَ حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ، ابْنَ الْمُبَارَكِ بِيَدَيْهِ . . .»
. . . ‏‏‏‏ اور حماد بن زید نے ابن مبارک سے دونوں ہاتھوں سے مصافحہ کیا۔ [صحيح البخاري/كِتَاب الْأَدَبِ: Q6265]

«. . . سَمِعْتُ ابْنَ مَسْعُودٍ، يَقُولُ:" عَلَّمَنِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَكَفِّي بَيْنَ كَفَّيْهِ التَّشَهُّدَ، كَمَا يُعَلِّمُنِي السُّورَةَ مِنَ الْقُرْآنِ: التَّحِيَّاتُ لِلَّهِ وَالصَّلَوَاتُ وَالطَّيِّبَاتُ، السَّلَامُ عَلَيْكَ أَيُّهَا النَّبِيُّ وَرَحْمَةُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ، السَّلَامُ عَلَيْنَا وَعَلَى عِبَادِ اللَّهِ الصَّالِحِينَ، أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، وَأَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُهُ وَرَسُولُهُ وَهُوَ بَيْنَ ظَهْرَانَيْنَا، فَلَمَّا قُبِضَ، قُلْنَا السَّلَامُ"، يَعْنِي عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ . . .»
. . . ‏‏‏‏میں نے عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے سنا، انہوں نے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے تشہد سکھایا، اس وقت میرا ہاتھ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ہتھیلیوں کے درمیان میں تھا (اس طرح سکھایا) جس طرح آپ قرآن کی سورت سکھایا کرتے تھے۔ «التحيات لله والصلوات والطيبات،‏‏‏‏ السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته،‏‏‏‏ السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين،‏‏‏‏ أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله‏.‏» نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اس وقت حیات تھے۔ جب آپ کی وفات ہو گئی تو ہم (خطاب کا صیغہ کے بجائے) اس طرح پڑھنے لگے «السلام‏.‏ على النبي» یعنی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پر سلام ہو۔ [صحيح البخاري/كِتَاب الِاسْتِئْذَانِ: 6265]
صحیح بخاری کی حدیث نمبر: 6265 کا باب: «بَابُ الأَخْذِ بِالْيَدَيْنِ:»

باب اور حدیث میں مناسبت:
ترجمۃ الباب میں «باليدين» کا ذکر ہے، جبکہ کئی نسخوں میں «باليدين» کا ذکرنہیں ہے، یعنی صحیح بخاری کے نسخے اس بابت متفق نہیں ہیں، بعض میں بالیدین بصیغہ تثنیہ وارد ہوا ہے اور بعض نسخوں میں بالید بصیغہ واحد، ابوزر اور مستملی کے نسخہ کے مطابق بصیغہ واحد مذکور ہے، چنانچہ حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے بایں الفاظ میں لکھا ہے:
«(باب الأخذ باليد) كذا فى رواية أبى زر عن الحموي والمستملي، وللباقين باليدين و فى نسخة باليمين و هو غلط.» (2)
(ایک ہاتھ سے مصافہ کرنا) «باب الأخذ باليد» یہ ترجمۃ الباب ابوزر کی حموی اور المستملی سے نقل صحیح ہے، اور باقیوں کے ہاں (بالیدین)، اور ایک نسخہ میں (بالیمین) ہے جو کہ غلط ہے۔
علامہ عبدالحق الہاشمی رحمہ اللہ اس مسئلے پر گفتگو کرتے ہوئے لکھتے ہیں:
«و أورد فيه حديث ابن مسعود المذكور مطولا موصولا فمراده بهذا الباب: أن هذا الفعل الصادر من النبى صلى الله عليه وسلم لابن مسعود ليس من المصافحة فى شيئ، بل من باب الأخز باليد الذى قد يقع من غير حصول مصافحة، و به تحصل المطابقة لما ترجم له، ولهذا أورد أثر حماد بن زيد كالرد عليه، وهذه عادته انه أحيانا يورد الآثار فى الباب للرد عليها.» (3)
تحت الباب سیدنا ابن مسعود رضی اللہ عنہ کی روایت وارد فرمائی، موطولا اور موصولا بھی، پس اس سے مراد باب کی طرح ہے کہ یہ فعل نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے صادر ہوا تھا، یعنی آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کا ہاتھ پکڑا تھا، (سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ نے نہیں)، اور یہ مصافحہ نہیں تھا، بلکہ باب ہے ایک ہاتھ سے جس میں مصافحہ کا حصول نہیں ہے اور اسی تحصیل کے لیے باب قائم ہے اور اسی لیے حماد بن زید کے اثر کا ذکر فرمایا تاکہ اس کا رد کر دیں، (کہ دو ہاتھوں سے مصافحہ نہیں ہے) اور یہ امام بخاری رحمہ اللہ کی عادت ہے کہ بسا اوقات آپ تحت الباب جو آثار پیش کرتے ہیں وہاں ان کا رد کرنا مقصود ہوتا ہے۔
علامہ عبدالحق رحمہ اللہ کے اقتباسات سے یہ بات واضح ہوئی کہ امام بخاری رحمہ اللہ نے دونوں ہاتھوں سے مصافحہ کے بارے میں باب نہیں قائم فرمایا، بلکہ آپ نے «أخذ باليد» کا باب قائم فرمایا ہے، کیوں کہ آپ رحمہ اللہ کا یہاں مقصود دونوں ہاتھوں سے مصافحہ کے رد کا ہے، اسی لیے تحت الباب زید بن حماد کا اثر نقل فرمایا اور اس کا رد کیا دقیق الفاظوں سے، پھر اس کے بعد سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کی حدیث نقل فرمائی، حدیث میں مصافحہ کا کوئی ذکر نہیں ہے بلکہ وہاں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے ہاتھوں میں سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کا ہاتھ تھا جو اس بات کی روشن دلیل ہے کہ یہاں پر مصافحہ ثابت کرنا مقصود نہیں بلکہ دو ہاتھوں سے مصافحہ کرنے والوں کا رد اور وہ رد اس انداز سے فرمایا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے تعلیم و تربیت کے لیے اپنے دونوں ہاتھوں کو استعمال فرمایا نہ کہ مصافحہ کی غرض سے، اور اگر یہاں پر دو ہاتھوں سے مصافحہ مراد ہوتا تو اس بات کو بھی مدنظر رکھا جائے کہ سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کا ایک ہاتھ تھا جس کے احناف بھی قائل نہیں ہیں، چنانچہ اس موقع پر محدث عبدالرحمن مبارکپوری رحمہ اللہ کی گزارشات فائدے سے خالی نہ ہوں گی، چنانچہ آپ رحمہ اللہ رقمطراز ہیں:
قول سیدنا ابن مسعود رضی اللہ عنہ «وكفى بين كفيه» میں لفظ «كفى» سے ظاہر یہ ہے کہ ان کی فقط ایک ہتھیلی مراد ہے اور مطلب یہ ہے کہ حالت تعلیم تشہد میں سیدنا ابن مسعود رضی اللہ عنہ کی فقط ایک ہتھیلی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی دونوں ہتھیلیوں میں تھی، کیوں کہ «كفى» میں لفظ «كف» مفرد ہے اور مفرد فرد واحد پر دلالت کرتا ہے، نیز رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے کف کو بصیغہ تثنیہ اور اپنے کف کو بصیغہ مفرد ذکر کرنا بھی ظاہر دلیل اسی امر کی ہے کہ لفظ «كفى» سے سیدنا ابن مسعود رضی اللہ عنہ کی ایک ہتھیلی مراد ہے، نیز سیدنا ابن مسعود رضی اللہ عنہ کی اگر دونوں ہتھیلیاں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی دونوں متبرک ہتھیلیوں میں ہوتیں تو سیدنا ابن مسعود رضی اللہ عنہ ضرور اس کی تصریح فرماتے اور اہتمام اور اعتناء کے ساتھ بلکہ فخر کے ساتھ فرماتے «وكفاى بين كفيه» یعنی میری دونوں ہتھیلیاں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی دونوں ہتھیلیوں کے درمیان تھی، اس صورت میں «وكفى بين كفيه» کہنے کا موقع نہیں ملتا، نیز سیدنا ابن مسعود رضی اللہ عنہ کی غرض «وكفى بين كفيه» سے اس حالت اور وضع کا بتانا ہے جس حالت اور وضع کے ساتھ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو تشہد کی تعلیم دی . . . . .
مطلب یہ ہے کہ سیدنا ابن مسعود رضی اللہ عنہ کی فقط ایک ہتھیلی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی دونوں ہتھیلیوں کے درمیان تھی تو ظاہر ہے کہ اس دلیل سے دونوں ہاتھوں سے مصافحہ کرنے والوں کا دعوی کسی طرح بھی ثابت نہیں ہو سکتا، کیوں کہ یہ لوگ اس طرح کے مصافحہ کے قائل نہیں بلکہ اس مصافحہ کے قائل ہیں جس میں دونوں جانب سے دو دو ہتھیلیاں ملائی جائیں، پس جو ان کا دعوی ہے وہ اس دلیل سے ثابت نہیں ہوتا اور جو ثابت ہوتا ہے وہ ان کا دعوی نہیں ہے۔(1)
یہ حقیر اور ناچیز بندہ کہتا ہے کہ امام بخاری رحمہ اللہ کا مقصود اس باب سے مصافحہ کو ثابت کرنے کا نہیں ہے، بلکہ آپ کا مقصود بغیر مصافحہ کے حصول کے لیے ہے، کیوں کہ ما قبل باب «باب المصافحة» قائم فرما کر آپ نے مصافحہ کرنے کو ثابت فرمایا، کیوں کہ لفظ مصافحہ صفح سے ہے، جس کے معنی ہتھیلی سے ہتھیلی ملانا ہے، اس مقام پر یہ بات ثابت ہو جاتی ہے کہ مصافحہ ہتھیلی سے ہتھیلی کو ملانا ہے، نہ کہ ہتھیلیوں سے ہتھیلیاں ملانا تو اس سے ثابت ہوا کہ «باب الأخذ باليدين» کا تعلق بغیر حصول مصافحہ کے ہیں، چنانچہ عبدالحی رحمہ اللہ جو کہ حنفی ہیں اور آپ کا مقام اہل علم میں شمار ہے، آپ لکھتے ہیں:
«وآنچه كه در صحيح بخاري در باب مذكور از عبدالله بن مسعود رضي الله عنه درست.» (2)
یعنی صحیح بخاری میں جو سیدنا عبداللہ بن مسعور رضی اللہ عنہ سے مروی حدیث ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے تشہد سکھایا، اس حالت میں کہ میری ہتھیلی آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے دونوں ہتھیلیوں میں تھی، سو ظاہر یہ ہے کہ یہ مصافحہ متوراضہ جو بوقت ملاقات مسنون ہے وہ نہیں ہے، بلکہ طریقہ تعلیمیہ تھا کہ اکابر کسی چیز کے اہتمام تعلیم کے وقت دونوں ہاتھوں سے یا ایک ہاتھ سے اصاغر کا ہاتھ پکڑ کر تعلیم دیتے تھے۔
علامہ ابن حجر رحمہ اللہ لکھتے ہیں:
«. . . . . إدخال هذا الحديث فى المصافحه أن الأخذ باليد يستلزم التقاء صفحة اليد بصفحة اليد غالبًا و من ثم أفردها بترجمة تلي هذه الجواز وقوع الأخذ باليد من غير حصول المصافحة.» (3)
مصافحہ کے باب میں اس حدیث (عبد اللہ بن ہشام والی، رقم الحدیث: 6474) کو داخل کرنے کی وجہ یہ ہے کہ ہاتھ پکڑ نا غالبا صفحہ ید سے التقاء کو مستلزم ہے، اسی وجہ سے آگے ( «باب الأخذ باليدين» میں سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کی حدیث) کو حصول مصافحہ کے بغیر ہاتھ تھام لینے کے جواز کا ترجمہ لائے ہیں۔
علامہ قسطلانی رحمہ اللہ لکھتے ہیں:
«و لما كان الأخذ باليد يجوز أن يقع من غير حصول مصافحة أفرده بهذا الباب.» (1)
ان تمام گفتگو کا حاصل یہ ہے کہ ترجمۃ الباب، امام بخاری رحمہ اللہ نے دونوں ہاتھوں سے مصافحہ کا نہیں باندھا، بلکہ ابن حجر رحمہ اللہ کے بقول زیادہ تر صحیح «الأخذ باليد» ہی ہے اور اگر تھوڑی دیر کے لیے «الأخذ باليدين» مان بھی لیا جائے تو تین چیزیں قابل غور ہوں گی:
اول: ترجمۃ الباب سے دونوں ہاتھوں کا مصافحہ ثابت نہیں ہوگا، کیوں کہ ماقبل باب اسی مسئلے کے لیے دال ہے۔
دوم: حماد بن زید کا اثر، اس سے بھی مصافحہ بالیدین ثابت نہ ہو گا۔
ثالث: سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کی حدیث مصافحہ پر دلالت نہیں کرتی، جس کو ہم نے پچھلے اوراق میں ثابت کیا ہے۔
اب ترجمۃ الباب سے دونوں ہاتھوں سے مصافحہ نہ کرنے پر دلیل اخذ کی جا سکتی ہے، کیوں کہ تحت الباب ایسی کوئی حدیث پیش نہیں فرمائی جبکہ حدیث طریقہ تعلیم پر دال ہے۔ «فافهم!»
   عون الباری فی مناسبات تراجم البخاری ، جلد دوئم، حدیث\صفحہ نمبر: 200   
  الشيخ عمر فاروق سعيدي حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث سنن ابي داود 968  
´تشہد (التحیات) کا بیان۔`
عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ جب ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ نماز میں بیٹھتے تو یہ کہتے تھے «السلام على الله قبل عباده السلام على فلان وفلان» یعنی اللہ پر سلام ہو اس کے بندوں پر سلام سے پہلے یا اس کے بندوں کی طرف سے اور فلاں فلاں شخص پر سلام ہو تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تم ایسا مت کہا کرو کہ اللہ پر سلام ہو، اس لیے کہ اللہ تعالیٰ خود سلام ہے، بلکہ جب تم میں سے کوئی نماز میں بیٹھے تو یہ کہے «التحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين» آداب، بندگیاں، صلاتیں اور پاکیزہ خیرات اللہ ہی کے لیے ہیں، اے نبی! آپ پر سلام، اور اللہ کی رحمت اور اس کی برکتیں نازل ہوں، اور سلام ہو ہم پر اور اللہ کے تمام نیک و صالح بندوں پر کیونکہ جب تم یہ کہو گے تو ہر نیک بندے کو خواہ آسمان میں ہو یا زمین میں ہو یا دونوں کے بیچ میں ہو اس (دعا کے پڑھنے) کا ثواب پہنچے گا (پھر یہ کہو): «أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله» میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود برحق نہیں، اور میں گواہی دیتا ہوں کہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم اس کے بندے اور رسول ہیں پھر تم میں سے جس کو جو دعا زیادہ پسند ہو، وہ اس کے ذریعہ دعا کرے۔‏‏‏‏ [سنن ابي داود/أبواب تفريع استفتاح الصلاة /حدیث: 968]
968۔ اردو حاشیہ:
➊ تشہد کے تمام صیغوں میں یہ صیغے صحیح ترین ہیں۔
«التحيات» «تحيه» کی جمع ہے اور ا س کے معنی ہیں: سلامتی، بقا، عظمت، بے عیب ہونا اور ملک و ملکیت۔ اور بقول علامہ حطابی و بغوی یہ لفظ تعظیم کے تمام تر معانی پر مشتمل ہے۔
«الصلواة» «صلاة» کی جمع ہے۔ یعنی عبادت، رحمت، دعایئں اسی سے مخصوص ہیں۔
«الطيبات» «طيبة» کی جمع ہے۔ یعنی ذکر، اذکار، اعمال صالح اور اچھی باتیں۔ ایک قول یہ بھی ہے کہ «التحيات» سے قولی عبادات «الصلواة» سے فعلی عبادات اور «الطيبات» سے مالی عبادات مراد ہیں۔ دیکھیے: [نيل الاوطار۔ 311۔ 213/2]
«السلام عليك ايهاالنبي ورحمة الله» میں غائب کی بجائے صیغہ خطاب کا ورود نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیم ہے اور اس کی حقیقی حکمت اللہ ہی بہتر جانتا ہے۔ بظاہر یوں ہے کہ جب بندہ اللہ تعالیٰ کے لئے اپنے تحیات پیش کرتا ہے، تو اسے یاد دلایا گیا ہے کہ یہ سب کچھ تمہیں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے ذریعے سے ملا ہے۔ اس لئے بندہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنے ذہن میں مستحضر کر کے آپ کو صیغہ خطاب سے سلام پیش کرتا ہے۔ کچھ لوگوں کا اصرار ہے کہ ان الفاظ میں براہ راست رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو سنوانا مقصود ہے۔ یہ خیال برحق اور درست نہیں ہے کیونکہ اس انداز میں خطاب ہمیشہ سنوانے کے لئے نہیں ہوتا اور اس کی دلیل سنن نسائی کی درج زیل حدیث ہے۔ حضرت ابورافع بیان کرتے ہیں۔ «كان رسول الله صلى الله عليه وسلم اذا صلى العصر ذهب الي بني عبد الاشهل فيتحدث عندهم حتي ينحدر للمغرب قال ابورافع فبينما النبى الله صلى الله عليه وسلم يسرع الي المغرب مررنا بالبقيع فقال اف لك اف لك قالز فكبر ذلك فى ذرعي فاستاخرت وظننت انه يريدني فقال . . . ما لك؟ امش . فقلت احدث حدث قال ما ذلك؟ قلت اففت بي قال لاولكن هذا فلان بعثته ساعيا على بيني فلان فغل نمرة فلرع الان مثلها من نار» [سنن نسائي۔ الامامة۔ حديث 863]
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم عصر کے بعد قبیلہ بنو عبدالاشھل کے پاس جاتے اور گفتگو میں مشغول رہتے تھے حتیٰ کے مغرب کے قریب واپس تشریف لاتے۔ ابورافع کہتے ہیں کہ ایک دن نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نماز مغرب کے لئے جلدی جلدی تشریف لا رہے تھے اور ہم بقیع کے پاس سے گزر رہے تھے، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا۔ افسو س ہے، تجھ پر افسوس ہے، تجھ پر۔ ابورافع کہتے ہیں کہ اس پر مجھے گرانی محسوس ہوئی اور میں پیچھے ہو گیا۔ میں نے سمجھاکہ شاید آپ میرا ارادہ فرما رہے ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کیا ہوا؟ آگے چلو۔ میں نے عرض کیا: حضرت کیا کوئی بات ہوئی ہے؟ فرمایا: کیا ہوا ہے؟ میں نے کہا: آپ نے مجھ پر افسوس کا اظہا ر فرمایا ہے۔ فرمایا: نہیں، اس فلاں شخص کو میں نے فلاں قبیلے کے پاس عامل بنا کر بھیجا تھا تو اس نے مال میں سے ایک دھاری دارچادر چھپا لی۔ چنانچہ اب اسے اس طرح آگ کی چادر پہنائی گئی ہے۔

اس حدیث میں جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس کا منظر دیکھایا گیا۔ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس پر صیغہ خطاب سے افسوس کا اظہار فرمایا۔ اس طرح نیا چاند یکھنے کی دعا میں ہے۔ «اللهم اهله علينا بالامن والايمان والسلامة والاسلام ربي وربك الله» [مستدك حاكم۔ 285/4۔ حديث۔ 7767]
اے اللہ! . . . اے چاند! میرا اور تیرا رب اللہ ہے۔ یہاں چاند کو سنوانا مقصود نہیں بلکہ تعلیم نبی صلی اللہ علیہ وسلم ہے۔ الغرض تشہد میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے صیغہ خطاب اسماع (سنوانے) کے لئے نہیں۔ بلکہ تعلیم نبی کی بنا پر ہے۔ «والله اعلم»
اگر سنوانا مقصود ہوتا تو حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ اور حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا وغیرہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات کے بعد سلام کے صیغہ خطاب کو صیغہ غیب سے ہرگز تبدیل نہ کرتے اور «السلام على النبى صلى الله عليه وسلم» نہ پڑھتے اور نہ اس کی تعلیم دیتے۔ دیکھئے: [صحيح بخاري۔ حديث۔ 6265]
➍ لفظ «فليقل» چاہیے کہ کہے سے استدلال ہے کہ تشہد پڑھنا واجب ہے۔
➎ سلام سے پہلے دین و دنیا کی حاجات کی طلب بھی مستحب ہے اور یہ دعا کا بہترین وقت اور مقام ہے۔
   سنن ابی داود شرح از الشیخ عمر فاروق سعدی، حدیث\صفحہ نمبر: 968   
  فوائد ومسائل از الشيخ حافظ محمد امين حفظ الله، سنن نسائي، تحت الحديث 1171  
´پہلے تشہد کی کیفیت کا بیان؟`
عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم تشہد میں «التحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة اللہ وبركاته السلام علينا وعلى عباد اللہ الصالحين أشهد أن لا إله إلا اللہ وأشهد أن محمدا عبده ورسوله» کہتے۔ [سنن نسائي/كتاب التطبيق/حدیث: 1171]
1171۔ اردو حاشیہ:
➊ اس حدیث کو امام شعبہ رحمہ اللہ سلیمان، منصور، حماد اور مغیرہ سے بیان کرتے ہیں اور یہ سب ابووائل سے بیان کرتے ہیں۔ امام نسائی رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ اس روایت میں شعبہ کے اساتذہ میں ابوہاشم کا ذکر درست نہیں کیونکہ انہوں نے یہ روایت ابووائل سے بیان نہیں کی، مذکورہ چار اساتذہ ہی سے بیان کی ہے۔ واللہ أعلم۔
➋ غریب حدیث وہ ہوتی ہے جس کی سند کے کسی طبقے میں ایک راوی رہ جائے۔ مزید دیکھیے: (جلد اول میں اصطلاحات محدثین)
   سنن نسائی ترجمہ و فوائد از الشیخ حافظ محمد امین حفظ اللہ، حدیث\صفحہ نمبر: 1171   
    الشيخ حافظ مبشر احمد رباني حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح البخاري 835  
آخری تشہد میں دعا
------------------
سوال: کیا حالت تشہد میں کوئی دعا ضروری بھی ہے یا سب اختیاری ہیں؟ کتاب و سنت کی رو سے واضع کریں۔
جواب: نماز کے آخری تشہد میں چار چیزوں سے پناہ مانگنے کا حکم دیا گیا ہے۔
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم میں سے کوئی آخری تشہد سے فارغ ہو تو وہ چار چیزوں سے اللہ کی پناہ پکڑے (1) جہنم کے عذاب سے (2) قبر کے عذاب سے (3) زندگی اور موت کے فتنہ سے (4) مسیح و دجال کے شر سے۔ [صحيح مسلم/كِتَاب الْمَسَاجِدِ وَمَوَاضِعِ الصَّلَاة/ باب مَا يُسْتَعَاذُ مِنْهُ فِي الصَّلاَةِ:/ فواد: 588، دارالسلام: 1324]
اس صحیح حدیث سے معلوم ہوا کہ ہر نمازی کو آخری تشہد سے فارغ ہو کر یہ دعاکرنی چاہیے:
«اَللّٰهُمَّ إِنِّيْ اَعُوْذُ بِكَ مِنْ عَذَابِ جَهَنَّمَ وَمِنْ عَذَابِ الْقَبْرِ وَمِنْ فِتْنَةِ الْمَحْيَا وَالْمَمَاتِ وَمِنْ شَرِّ فِتْنَةِ الْمَسِيْحِ الدَّجَّالِ» [مسلم، كتاب المساجد 588]
اس کے بعد جو جی چاہے دعا مانگ لے جیسا کہ صحیح بخاری وغیرہ میں آپ کی حدیث ہے:
«وَلِيَتَخَيَّرْ مِنَ الدُّعَاءِ اَعْجَبَهُ اِلَيْهِ فَيَدْعُوْ» [صحيح بخاري، كتاب الأذان: باب ما يتخير من الدعاء بعد تشهد 835]
جو دعا پسند ہو وہ مانگ لیں۔
   احکام و مسائل، حدیث\صفحہ نمبر: 195   
  مولانا عطا الله ساجد حفظ الله، فوائد و مسائل، سنن ابن ماجه، تحت الحديث899  
´تشہد کا بیان۔`
عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ جب ہم نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ نماز پڑھتے تو کہتے: «السلام على الله قبل عباده السلام على جبرائيل وميكائيل وعلى فلان وفلان» سلام ہو اللہ پر اس کے بندوں سے پہلے، اور سلام ہو جبرائیل و میکائیل اور فلاں فلاں پر، اور وہ مراد لیتے تھے (فلاں اور فلاں سے) فرشتوں کو، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں کہتے سنا تو فرمایا: تم «السلام على الله» نہ کہو، کیونکہ اللہ ہی سلام ہے، لہٰذا جب تم تشہد کے لیے بیٹھو تو کہو «التحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالح۔۔۔۔ (مکمل حدیث اس نمبر پر پڑھیے۔) [سنن ابن ماجه/كتاب إقامة الصلاة والسنة/حدیث: 899]
اردو حاشہ:
فوائد و مسائل:
(1)
اللہ تعالیٰ کی عظمت وشان کو پیش نظر رکھتے ہوئے ایسے اقوال وافعال سے پرہیز کرنا چاہیے۔
جو اس کے ادب کے منافی ہوں۔

(2)
بعض اوقات غلط فہمی کی بنا پر انسان ایک لفظ کو مناسب تصور کرتا ہے۔
حالانکہ وہ نامناسب ہوتا ہے۔
جب ایسی کسی غلطی پر متنبہ کیا جائے۔
تو فوراً اصلاح کرلینی چاہیے۔

(3) (التحیات)
 ان الفاظ کو کہا جاتا ہے۔
جن کے ذریعے سے لوگ ایک دوسرے کے لیے نیک جذبات کا اظہار کرتے ہیں۔
اسلامی تہذیب میں اس مقصد کےلئے السلام علیکم اور وعلیکم السلام جیسے الفاظ مقرر ہیں۔
اللہ کے لئے تحیات سے مراد وہ عبادتیں ہیں۔
جن کا تعلق زبان اور گویائی سے ہے۔
مثلا اللہ کی تعریف، شکر، ذکر، دعا، قسم وغیرہ۔
یہ سب عبادتیں اللہ کا حق ہیں۔
ان میں کسی اور کو شریک کرنا درست نہیں۔
مخلوق کی کسی ظاہری خوبی کی تعریف جس میں عبادت کے جذبات شامل نہیں ہوتے۔
وہ اس عبادت میں شامل نہیں۔

(4) (الصلوٰت)
صلاۃ کی جمع ہے۔
جس کے لغوی معنی دعا اور شرعی معنی نماز کے ہیں۔
یہاں اس سے مراد بدنی عبادتیں ہیں مثلا رکوع، سجدہ، قیام، طواف اور روزہ وغیرہ۔
کسی کے لئے احتراماً جھکنا یا کسی کے سامنے ہاتھ باندھ کر کھڑے ہونا یا اللہ کے گھر کے سوا کسی چیز قبر، عمارت اور درخت وغیرہ کا طواف کرنا شرک ہے۔
سجدہ تعظیمی پہلی شریعتوں میں جائز تھا۔
اب حرام ہے۔
یہ اور اس قسم کی تمام عبادتیں صرف اللہ کا حق ہیں۔

(5) (الطیبات)
پاک چیزیں پاک اعمال۔
اس سے مالی عبادتیں مراد لی گئی ہیں۔
مثلاً زکواۃ و صدقات، نذر ونیاز وغیرہ۔
مخلوق میں سے کسی کے نام کی نذر جائز نہیں۔
خواہ وہ مالی نذر ہو يا بدنی، ان تین الفاظ میں ہرقسم کی عبادات اللہ ہی کے لئے خاص ہونے کا اقرار ہے اور یہی توحید ہے۔

(6)
دوسروں کےحق میں دعا کرتے وقت اپنے لئے بھی دعا کرلینی چاہیے۔
اسی طرح جب اپنے لئے دعا کرنا مقصود ہو تو دوسروں کو بھی شامل کرلینا چاہیے۔
خصوصاً جو مسلمان بھائی نظروں سے اوجھل اور جسمانی طور پردور ہوں۔
ان کےلئے دعا کرنا خلوص کی علامت ہے۔
ممکن ہے اس کی برکت سے دعا مانگنے والے کی اپنے حق میں دعا قبول ہوجائے۔

(7)
زمین اور آسمان میں موجود نیک بندوں میں تمام نیک انسان جن اور تمام فرشتے شامل ہوجاتے ہیں۔
اس لئے جبریئل، میکائیل علیہ السلام وغیرہ کا نام لینے کی ضرورت نہیں۔
اس سے ظاہر ہے کہ مسنون دعاؤں میں جو جامعیت اور خوبی ہے وہ خود ساختہ دعاؤں میں نہیں۔
لہٰذا مسنون اذکار کوچھوڑ کر غیر مسنون دعاؤں اوراذکار میں مشغول نہیں ہونا چاہیے۔
دعائے گنج العرش، درودتاج، درود ماہی، درود لکھی کے نام سے بہت سی چیزیں مشہور ہیں جن کی کوئی بنیاد نہیں۔

(8) (التحیات)
کی دُعا میں مختلف روایات میں الفاظ کا معمولی فرق ہے۔
صحیح سندوں سے روایت شدہ الفاظ کے مطابق جیسے بھی پڑھ لیا جائے درست ہے۔
ان میں سے بعض آئندہ روایات میں مذکور ہیں۔
 
   سنن ابن ماجہ شرح از مولانا عطا الله ساجد، حدیث\صفحہ نمبر: 899   
  علامه صفي الرحمن مبارك پوري رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث بلوغ المرام 247  
´نماز کی صفت کا بیان`
سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہماری طرف توجہ فرمائی اور ارشاد فرمایا کہ جب تم میں سے کوئی نماز پڑھے تو تشہد میں یوں کہے۔ «التحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله» تمام سلامیاں اللہ ہی کیلئے ہیں اور نمازیں پاکیزیاں بھی (زبانی، بدنی اور مالی عبادتیں صرف اللہ کے لئے ہیں) اے نبی! سلام ہو آپ پر اور اللہ کی رحمت اور اس کی برکتیں ہوں۔ سلام ہو ہم پر اور اللہ کے صالح بندوں پر۔ میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی لائق عبادت (معبود) نہیں اور اس کی بھی گواہی دیتا ہوں کہ محمد (صلی اللہ علیہ وسلم) اللہ کے بندے اور اس کے رسول ہیں۔ پھر اسے دعا کا انتخاب کرنا چاہیئے کہ جو اسے سب سے اچھی لگے وہ مانگے۔ (بخاری و مسلم) متن حدیث کے الفاظ بخاری کے ہیں اور نسائی میں ہے کے ہم تشہد فرض ہونے سے پہلے کہا کرتے تھے اور احمد میں ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو تشہد سکھایا اور حکم دیا کہ لوگوں کو اسے سکھاؤ اور مسلم میں ابن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہمیں تشہد سکھاتے تھے (وہ اس طرح تھا) «التحيات المباركات الصلوات الطيبات لله» إلى آخره۔۔۔۔ (مکمل حدیث اس نمبر پر پڑھیے۔) «بلوغ المرام/حدیث: 247»
تخریج:
«أخرجه البخاري، الأذان، باب التشهد فلي الآخرة، حديث:831، ومسلم، الصلاة، باب التشهد في الصلاة، حديث:402، والترمذي، الصلاة، حديث:289، والنسائي، السهو، حديث:1278، وأحمد:1 /376، وحديث ابن عباس أخرجه مسلم، الصلاة، حديث:403.»
تشریح:
1. اس حدیث سے ثابت ہوا کہ تشہد کے بعد دعا مانگنا مسنون ہے۔
دعا کون سی مانگی جائے؟ اس پر کوئی پابندی نہیں۔
جو چاہے جتنی چاہے مانگ سکتا ہے‘ تاہم نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی فرمودہ دعائیں افضل ہیں۔
قرآنی دعائیں بھی مانگ سکتا ہے اور اپنی ضروریات کے لیے دیگر دعائیں بھی۔
2. اس حدیث سے تشہد کا واجب ہونا بھی ثابت ہوتا ہے۔
3.حضرت عمر‘ حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہما اور امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ وجوب کے قائل ہیں۔
دوسرے اہل علم کے نزدیک فرض ہے۔
حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کے تشہد کے جو الفاظ مروی ہیں امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ اور اکثر علماء نے انھیں پسند کیا ہے کیونکہ یہ تشہد کے باب میں صحیح ترین روایت ہے۔
اور امام شافعی رحمہ اللہ نے حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے مروی تشہد کو اختیار کیا ہے۔
   بلوغ المرام شرح از صفی الرحمن مبارکپوری، حدیث\صفحہ نمبر: 247   
  الشیخ ڈاکٹر عبد الرحمٰن فریوائی حفظ اللہ، فوائد و مسائل، سنن ترمذی، تحت الحديث 289  
´تشہد کا بیان۔`
عبداللہ بن مسعود رضی الله عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں سکھایا کہ جب ہم دو رکعتوں کے بعد بیٹھیں تو یہ دعا پڑھیں: «التحيات لله والصلوات والطيبات السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله» تمام قولی، بدنی اور مالی عبادتیں اللہ کے لیے ہیں، سلام ہو آپ پر اے نبی اور اللہ کی رحمتیں اور اس کی برکتیں ہوں، سلام ہو ہم پر اور اللہ کے نیک بندوں پر، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود برحق نہیں اور میں گواہی دیتا ہوں کہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم اس کے بندے اور ا۔۔۔۔ (مکمل حدیث اس نمبر پر پڑھیے۔) [سنن ترمذي/كتاب الصلاة/حدیث: 289]
اردو حاشہ:
1؎:
لیکن خصیف حافظہ کے کمزور اور مرجئی ہیں۔
   سنن ترمذي مجلس علمي دار الدعوة، نئى دهلى، حدیث\صفحہ نمبر: 289   

http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.