الحمدللہ! انگلش میں کتب الستہ سرچ کی سہولت کے ساتھ پیش کر دی گئی ہے۔

 
بلوغ المرام کل احادیث 1359 :حدیث نمبر
بلوغ المرام
آزادی کے مسائل
आज़ादी के बारे में
1. (أحاديث في العتق)
1. (آزادی کے متعلق احادیث)
१. “ आज़ादी के बारे में हदीसें ”
حدیث نمبر: 1226
Save to word مکررات اعراب Hindi
وعن سفينة رضي الله عنه قال: كنت مملوكا لام سلمة فقالت: اعتقك واشترط عليك ان تخدم رسول الله صلى الله عليه وآله وسلم ما عشت. رواه احمد وابو داود والنسائي والحاكم.وعن سفينة رضي الله عنه قال: كنت مملوكا لأم سلمة فقالت: أعتقك وأشترط عليك أن تخدم رسول الله صلى الله عليه وآله وسلم ما عشت. رواه أحمد وأبو داود والنسائي والحاكم.
سیدنا سفینہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں ام سلمہ رضی اللہ عنہا کا غلام تھا، انہوں نے مجھے کہا کہ میں تجھے اس شرط پر آزاد کرتی ہوں کہ تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی تاحیات خدمت بجا لاتا رہے۔ اسے احمد، ابوداؤد، نسائی اور حاکم نے روایت کیا ہے۔
हज़रत सफ़ीनह रज़ि अल्लाहु अन्ह से रिवायत है कि मैं उम्म सलमा रज़ि अल्लाहु अन्हा का ग़ुलाम था, उन्हों ने मुझ से कहा कि में तुझे इस शर्त पर आज़ाद करती हूँ कि तू रसूल अल्लाह सल्लल्लाहु अलैहि वसल्लम की जीवन भर सेवा करता रहे।
इसे अहमद, अबू दाऊद, निसाई और हाकिम ने रिवायत किया है।

تخریج الحدیث: «أخرجه أبوداود، العتق، باب في العتق علي الشرط، حديث:3932، والنسائي في الكبرٰي:3 /190، حديث:4995، وابن ماجه، العتق، حديث:2526، وأحمد:5 /221، 6 /319.»

Safinah (RAA) narrated, ‘I was a slave of Umm Salamah and she said, ‘I shall emancipate you, but on the condition that you serve Allah’s Messenger (ﷺ) as long as you live.’ Related by Ahmad, Abu Dawud, An-Nasa’i and Al-Hakim.
USC-MSA web (English) Reference: 0


حكم دارالسلام: حسن

   سنن أبي داود3932مهران بن فروخأعتقك وأشترط عليك أن تخدم رسول الله ما عشت فقلت وإن لم تشترطي علي ما فارقت رسول الله ما عشت فأعتقتني واشترطت علي
   بلوغ المرام1226مهران بن فروخاعتقك واشترط عليك ان تخدم رسول الله صلى الله عليه وآله وسلم ما عشت
بلوغ المرام کی حدیث نمبر 1226 کے فوائد و مسائل
  علامه صفي الرحمن مبارك پوري رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث بلوغ المرام 1226  
تخریج:
«أخرجه أبوداود، العتق، باب في العتق علي الشرط، حديث:3932، والنسائي في الكبرٰي:3 /190، حديث:4995، وابن ماجه، العتق، حديث:2526، وأحمد:5 /221، 6 /319.»
تشریح:
اس حدیث سے معلوم ہوا کہ آزادی کا پروانہ مشروط طور پر بھی دینا جائز ہے اور غلام سے تاحیات کسی کی خدمت کی شرط لگانا بھی درست ہے۔
   بلوغ المرام شرح از صفی الرحمن مبارکپوری، حدیث/صفحہ نمبر: 1226   

تخریج الحدیث کے تحت دیگر کتب سے حدیث کے فوائد و مسائل
  الشيخ عمر فاروق سعيدي حفظ الله، فوائد و مسائل، سنن ابي داود ، تحت الحديث 3932  
´شرط لگا کر غلام آزاد کرنے کا بیان۔`
سفینہ کہتے ہیں کہ میں ام المؤمنین ام سلمہ رضی اللہ عنہا کا غلام تھا، وہ مجھ سے بولیں: میں تمہیں آزاد کرتی ہوں، اور شرط لگاتی ہوں کہ تم جب تک زندہ رہو گے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت کرتے رہو گے، تو میں نے ان سے کہا: اگر آپ مجھ سے یہ شرط نہ بھی لگاتیں تو بھی میں جیتے جی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت سے جدا نہ ہوتا، پھر انہوں نے مجھے اسی شرط پر آزاد کر دیا۔ [سنن ابي داود/كتاب العتق /حدیث: 3932]
فوائد ومسائل:
غلام کو قابل عمل عمدہ شرط پر آزاد کرنا جائز ہے۔
اور کیا عمدہ شرط تھی جو ام المومنین سیدہ ام سلمہ نے کی اور حضرت سفینہ قبول کیا۔
   سنن ابی داود شرح از الشیخ عمر فاروق سعدی، حدیث/صفحہ نمبر: 3932   


http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.