الحمدللہ! انگلش میں کتب الستہ سرچ کی سہولت کے ساتھ پیش کر دی گئی ہے۔

 
صحيح البخاري کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح البخاري
کتاب: حج کے مسائل کا بیان
The Book of Hajj
28. بَابُ مَنْ أَهَلَّ حِينَ اسْتَوَتْ بِهِ رَاحِلَتُهُ:
28. باب: جب سواری سیدھی لے کر کھڑی ہو اس وقت لبیک پکارنا۔
(28) Chapter. Reciting Talbiya when one has mounted his Rahila (mount) and it stood up straight (ready to set out).
حدیث نمبر: 1552
Save to word مکررات اعراب English
(مرفوع) حدثنا ابو عاصم، اخبرنا ابن جريج، قال: اخبرني صالح بن كيسان، عن نافع، عن ابن عمر رضي الله عنهما، قال:" اهل النبي صلى الله عليه وسلم حين استوت به راحلته قائمة".(مرفوع) حَدَّثَنَا أَبُو عَاصِمٍ، أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ، قَالَ: أَخْبَرَنِي صَالِحُ بْنُ كَيْسَانَ، عَنْ نَافِعٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا، قَالَ:" أَهَلَّ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حِينَ اسْتَوَتْ بِهِ رَاحِلَتُهُ قَائِمَةً".
ہم سے ابوعاصم نے بیان کیا، کہا کہ ہمیں ابن جریج نے خبر دی، کہا کہ مجھے صالح بن کیسان نے خبر دی، انہیں نافع نے اور ان سے ابن عمر رضی اللہ عنہما نے کہ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو لے کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی سواری پوری طرح کھڑی ہو گئی تھی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس وقت لبیک پکارا۔

Narrated Ibn `Umar: The Prophet (p.b.u.h) recited Talbiya when he had mounted his Mount and was ready to set out.
USC-MSA web (English) Reference: Volume 2, Book 26, Number 624


   صحيح البخاري2865عبد الله بن عمرإذا أدخل رجله في الغرز واستوت به ناقته قائمة أهل من عند مسجد ذي الحليفة
   صحيح البخاري1552عبد الله بن عمرأهل النبي حين استوت به راحلته قائمة
   صحيح البخاري1541عبد الله بن عمرما أهل رسول الله إلا من عند المسجد يعني مسجد ذي الحليفة
   صحيح البخاري1514عبد الله بن عمريركب راحلته بذي الحليفة ثم يهل حتى تستوي به قائمة
   صحيح مسلم2816عبد الله بن عمرما أهل رسول الله إلا من عند المسجد
   صحيح مسلم2820عبد الله بن عمرإذا وضع رجله في الغرز وانبعثت به راحلته قائمة أهل من ذي الحليفة
   صحيح مسلم2822عبد الله بن عمرركب راحلته بذي الحليفة ثم يهل حين تستوي به قائمة
   صحيح مسلم2821عبد الله بن عمرأهل حين استوت به ناقته قائمة
   صحيح مسلم2817عبد الله بن عمرالبيداء التي تكذبون فيها على رسول الله ما أهل رسول الله إلا من عند الشجرة حين قام به بعيره
   جامع الترمذي818عبد الله بن عمرما أهل رسول الله إلا من عند المسجد
   سنن أبي داود1771عبد الله بن عمرأهل رسول الله إلا من عند المسجد يعني مسجد ذي الحليفة
   سنن النسائى الصغرى2748عبد الله بن عمريركع بذي الحليفة ركعتين ثم إذا استوت به الناقة قائمة
   سنن النسائى الصغرى2759عبد الله بن عمريركب راحلته بذي الحليفة ثم يهل حين تستوي به قائمة
   سنن النسائى الصغرى2760عبد الله بن عمرأهل حين استوت به راحلته
   سنن النسائى الصغرى2761عبد الله بن عمريهل إذا استوت به ناقته وانبعثت
   سنن النسائى الصغرى2758عبد الله بن عمرما أهل رسول الله إلا من مسجد ذي الحليفة
   سنن ابن ماجه2916عبد الله بن عمرإذا أدخل رجله في الغرز واستوت به راحلته أهل من عند مسجد ذي الحليفة
   موطا امام مالك رواية ابن القاسم319عبد الله بن عمرعند المسجد، يعني مسجد ذي الحليفة
   بلوغ المرام593عبد الله بن عمرما اهل رسول الله صلى الله عليه وآله وسلم إلا من عند المسجد
   مسندالحميدي674عبد الله بن عمر- - ما أهل رسول الله صلى الله عليه وسلم إلا من عند المسجد مسجد ذي الحليفة
صحیح بخاری کی حدیث نمبر 1552 کے فوائد و مسائل
  الشيخ حافط عبدالستار الحماد حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري:1552  
حدیث حاشیہ:
صحابہ کرام ؓ نے اس امر میں اختلاف کیا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حجۃ الوداع کے موقع پر کس جگہ سے تلبیہ کہنے کا آغاز کیا۔
اس اختلاف کی وجہ حضرت ابن عباس ؓ نے بیان کی ہے جسے ہم حدیث: 1541 کے تحت فوائد میں بیان کر آئے ہیں۔
   هداية القاري شرح صحيح بخاري، اردو، حدیث/صفحہ نمبر: 1552   

تخریج الحدیث کے تحت دیگر کتب سے حدیث کے فوائد و مسائل
  حافظ زبير على زئي رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث موطا امام مالك رواية ابن القاسم 319  
´مدینے والوں کو مقام ذوالحلیفہ سے تلبیہ کہنا چاہئے`
«. . . عن سالم بن عبد الله انه سمع اباه يقول: بيداؤكم هذه التى تكذبون على رسول الله صلى الله عليه وسلم فيها، ما اهل رسول الله صلى الله عليه وسلم إلا من عند المسجد، يعني مسجد ذي الحليفة. . .»
. . . سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے (اے لوگو!) یہ تمہارا بیداء (ایک خاص میدانی مقام) جسے تم غلطی سے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے منسوب کرتے ہو (حالانکہ) رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تو ذوالحلیفہ کی مسجد کے پاس سے ہی لبیک کہی تھی . . . [موطا امام مالك رواية ابن القاسم: 319]
تخریج الحدیث: [واخرجه البخاري 1541، ومسلم 1186، من حديث مالك به]
تفقه:
① جو شخص حدیث کی مخالفت کرے تو مصلحت کے ساتھ اس کا سختی سے رد کرنا جائز ہے۔
② رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت کے مقابلے میں ہر قول و فعل مردود ہے۔
③ سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہ ذوالحلیفہ کی مسجد میں نماز پڑھتے تھے پھر وہاں سے باہر نکل کر سوار ہو جاتے۔ پھر جب آپ کی سواری (مکے کی طرف) سیدھی ہو جاتی تو لبیک کہتے۔ [الموطا 333/1 ح749 وسنده صحيح]
نیز دیکھئے [صحيح بخاري 1514 اور صحيح مسلم 11187، ترقيم دارالسلام 2820-2822]
④ تلبیہ (لبیک الخ) اونچی آواز سے کہنا چاہئے۔ [ديكهئے سنن ابي داؤد: 1814، والموطا 1 / 334 ح 751 و سنده صحيح]
یہ حکم مردوں کے لئے ہے کیونکہ امام مالک نے اہلِ علم سے نقل کیا ہے کہ عورتیں اونچی آوزا سے لیبک نہیں کہیں گی۔ [الموطأ 1/334 ح752]
⑤ حق بات بیان کردینی چاہئے چاہے لوگ خوش ہوں یا ناراض ہوں۔ صحیح حدیث میں آیا ہے کہ ظالم حکمران کے سامنے کلمۂ حق بیان کرنا افضل جہاد ہے۔ دیکھئے: [مسند أحمد 5/251 ح22158 وسنده حسن، 5/256 ح22207 وسنده حسن، وسنن ابن ماجه 4012]
⑥ صحابہ میں سے ہر ایک نے جو دیکھا سنا تو اسے اپنے علم کے مطابق روایت کردیا، یاد رہے کہ روایات کی تفاصیل میں تو اختلاف ہوسکتا ہے لیکن یہ اختلاف تناقض نہیں ہے بلکہ سب روایات کو اکٹھا کرکے ان کا مفہوم سمجھنا چاہئے۔
   موطا امام مالک روایۃ ابن القاسم شرح از زبیر علی زئی، حدیث/صفحہ نمبر: 189   

  الشيخ عمر فاروق سعيدي حفظ الله، فوائد و مسائل، سنن ابي داود ، تحت الحديث 1771  
´احرام کے وقت کا بیان۔`
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہا کہتے ہیں کہ یہی وہ بیداء کا مقام ہے جس کے بارے میں تم لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے غلط بیان کرتے ہو کہ آپ نے تو مسجد یعنی ذی الحلیفہ کی مسجد کے پاس ہی سے تلبیہ کہا تھا۔ [سنن ابي داود/كتاب المناسك /حدیث: 1771]
1771. اردو حاشیہ:
➊ حضرت عبداللہ بن عمر کامقصد اس بات کی نفی کرنا ہے جوبعض نے بیان کی کہ رسول اللہ ﷺ نے تلبیہ بیداء کےمقام پر پکارا تھا بلکہ آپ نے اس کا آغاز مسجد ذوالحلیفہ ہی سے کر دیا تھا۔
➋ رسول اللہ ﷺ کے دور میں ذوالحلیفہ کےمقام پر کوئی باقاعدہ مسجد نہ تھی۔ احادیث میں لغوی معنی مراد ہیں۔یعنی جس جگہ آپ نے نماز پڑھی یہاں اس وقت ایک درخت بھی تھا۔ باقاعدہ تعمیر بعد کےکسی دور میں ہوئی ہے۔
   سنن ابی داود شرح از الشیخ عمر فاروق سعدی، حدیث/صفحہ نمبر: 1771   

  علامه صفي الرحمن مبارك پوري رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث بلوغ المرام 593  
´احرام اور اس کے متعلقہ امور کا بیان`
سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے صرف مسجد کے پاس لبیک پکارا۔ (بخاری و مسلم) [بلوغ المرام/حدیث: 593]
593 لغوی تشریح:
«بَابُ الْاِحْرَامِ احرام» حج یا عمرے میں داخل ہونے کا نام ہے۔ اسے احرام، اس لیے کہا جاتا ہے کہ اس میں داخل ہو جانے والے پر بہت سی چیزیں حرام ہو جاتی ہیں جو اس سے پہلے حلال تھیں۔
«إلَّا مِنْ عِنْدِ الْمَسَجِدِ» مگر صرف مسجد کے پاس سے۔ مسجد سے مسجد ذوالحلیفہ مراد ہے۔ جس وقت آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی اونٹنی آپ کو لے کر سیدھی کھڑی ہوئی تھی اس وقت آپ نے تلبیہ کہا۔ یہ بات حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما نے ان حضرات کی غلط فہمی کا ازالہ کرنے کے لیے کہی ہے جو کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیداء کے مقام سے احرام باندھا تھا۔ احادیث میں منقول ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس وقت لبیک پکارا تھا جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دو رکعات پڑھ لی تھیں، یعنی آپ مسجد کے اندر ہی تھے کہ آپ نے لبیک کہا۔ اور یہ بھی منقول ہے کہ جب بیداء کی چوٹی پر چڑھے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے لبیک کہا۔ یہ احادیث بظاہر آپس میں متعارض ہیں مگر ان میں یوں تطبیق دی گئی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے احرام تو مسجد کے اندر ہی باندھا اور جنہوں نے وہاں آپ کے احرام کا مشاہدہ کیا انہوں نے اسی کا ذکر کیا، اور جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم مسجد سے باہر تشریف لائے اور اپنی اونٹنی پر سوار ہو کر بآواز بلند لبیک کہا تو باہر دیکھنے والوں نے سمجھا کہ آپ نے احرام ابھی ابھی باندھا ہے، پھر جب بیداء پر پہنچے اور لبیک کہا تو جن حضرات نے وہاں لبیک کہتے سنا تو انہوں نے سمجھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہاں سے احرام باندھا ہے۔ گویا ہر فریق نے اپنے اپنے مشاہدے کے مطابق خبر دی، اس لیے روایات میں کوئی تناقض نہیں۔
   بلوغ المرام شرح از صفی الرحمن مبارکپوری، حدیث/صفحہ نمبر: 593   

  فوائد ومسائل از الشيخ حافظ محمد امين حفظ الله سنن نسائي تحت الحديث2748  
´تلبیہ کس طرح پکارا جائے؟`
عبداللہ بن عمر رضی الله عنہما کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو تلبیہ پکارتے سنا، آپ کہہ رہے تھے: «لبيك اللہم لبيك لبيك لا شريك لك لبيك إن الحمد والنعمة لك والملك لا شريك لك» حاضر ہوں تیری خدمت میں اے رب! حاضر ہوں، حاضر ہوں، تیرا کوئی شریک و ساجھی دار نہیں، حاضر ہوں میں، تمام تعریفیں تجھی کو سزاوار ہیں اور تمام نعمتیں تیری ہی عطا کردہ ہیں، تیری ہی سلطنت ہے، تیرا کوئی ساجھی و شریک نہیں عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے تھی کہ رسول اللہ۔۔۔۔ (مکمل حدیث اس نمبر پر پڑھیے۔) [سنن نسائي/كتاب مناسك الحج/حدیث: 2748]
اردو حاشہ:
(1) احرام میں دل کی نیت اصل ہے لیکن اس کے ساتھ زبان سے لبیک کی ادائیگی کا اہتمام بھی ہونا چاہیے۔ صرف دو ان سلی سادہ چادریں پہننے سے احرام شروع نہیں ہوتا جب تک دل کی نیت اور لبیک کی ادائیگی نہ ہو۔
(2) لبیک عام طور پر کسی کے بلانے کے جواب میں کہا جاتا ہے۔ غالباً یہ لبیک اس اعلان کے جواب میں ہے جو ابراہیم علیہ السلام نے حج کی فرضیت کے بارے میں بیت اللہ کی تکمیل کے بعد کیا تھا کیونکہ اس اعلان کا تعلق ہر انسان سے اس وقت ہوتا ہے جب وہ حج کرنے جاتا ہے۔ (یاد رہے کہ یہاں حج سے مراد حج اور عمرہ دونوں ہیں کیونکہ عمرے کو حج اصغر بھی کہا جاتا ہے۔)
(3) لبیک مختصر ہے ایک لمبے جملے سے، جس کے معنیٰ ہیں: اے اللہ! میں تیرے حضور بار بار اپنے آپ کو پیش کرتا ہوں۔ اگرچہ اللہ تعالیٰ کے سامنے پیشی نماز وغیرہ میں بھی ہے لیکن حج کی پیشی ایک خصوصی رنگ رکھتی ہے، لہٰذا لبیک حج ہی کے ساتھ خاص ہے۔
(4) لبیک پکارنے کو اِھلال کہا جاتا ہے کیونکہ اِھلال کے معنیٰ ہیں، آواز بلند کرنا۔ چونکہ لبیک بلند آواز سے پکاری جاتی ہے لہٰذا اسے اِھلال کہتے ہیں، پھر چونکہ لبیک سے احرام شروع ہوتا ہے، اس لیے اھلال احرام کے معنیٰ میں بھی آتا ہے۔
(5) جب اونٹنی آپ کو لے کر کھڑی ہوتی احرام کا طریقہ یہ ہے کہ غسل کر کے ان سلی اور سادہ دو چادریں تہ بند اور قمیص کی جگہ لپیٹ لی جائیں، پھر فوراً لبیک شروع کر دیا جائے اور پھر وقتاً فوقتاً بلند آواز سے لبیک پکارتے رہیں۔ عمرے والا حرم تک اور حج والا 10 تاریخ کو رمی کی آخری کنکری کے ساتھ تلبیہ بند کرے گا۔ نبیﷺ نے نماز کے فوراً بعد ہی لبیک کہہ دیا تھا مگر وہ چند قریبی افراد نے سنا، پھر جب آپ سواری پر سوار ہوئے تو پھر لبیک پکارا جو پہلے سے زیادہ لوگوں نے سنا مگر سب نے نہیں، پھر آپ بیداء کے ٹیلے پر چڑھے تو پھر لبیک پکارا جو تقریباً سب نے سنا۔ جس نے جہاں سنا، بیان کر دیا، کوئی اختلاف نہیں۔
(6) تلبیہ آپ نے سب سے پہلے کون سی نماز کے بعد پکارا؟ ایک رائے کے مطابق نماز فجر کے بعد۔ موقف ہذا کی دلیل میں صحیح بخاری کی حدیث پیش کی جاتی ہے۔ دیکھیے: (صحیح البخاری، حدیث: 1551) لیکن اس حدیث میں اس کی کوئی صراحت نہیں۔ صحیح مسلم (حدیث: 1243) کی روایت سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ نماز ظہر تھی اور یہی درست ہے کیونکہ نبیﷺ عصر کے وقت ذوالحلیفہ پہنچے تھے، اور آپ نے عصر کی نماز قصر، یعنی دو رکعت ادا فرمائی تھی، پھر رات آپ نے ذوالحلیفہ ہی میں گزاری اور دوسرے روز نماز ظہر کے فوراً بعد تلبیے کا آغاز فرمایا، پھر جب آپ اونٹنی پر بیٹھ گئے تو تلبیہ پکارا اور اسی طرح بیداء (ٹیلے) پر تلبیہ پکارا۔
(7) بعض روایات میں ہے، نبیﷺ نے ذوالحلیفہ میں نماز پڑھی (صحیح البخاري، حدیث: 1532) یہ نماز احرام کی دو رکعتیں تھیں یا عصر کے دو فرض تھے؟ حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے لکھا ہے کہ ظاہری الفاظ سے دونوں باتیں محتمل ہیں، لیکن دوسری روایات میں صراحت ہے کہ آپ نے ذوالحلیفہ میں جو دو رکعتیں ادا فرمائی تھیں، وہ عصر کی نماز دوگانہ تھی۔ دیکھیے: (فتح الباري: 3/ 493، مطبوعة دارالسلام، زیر بحث حدیث: 1532) اس لیے اسے احرام باندھنے کے بعد دو رکعت پڑھنے کے حکم یا استحباب کے لیے نص قرار نہیں دیا جا سکتا، البتہ بعض دوسری روایات سے یہ بات معلوم ہوتی ہے کہ نبیﷺ آتے جاتے ذوالحلیفہ میں دو رکعت پڑھا کرتے تھے۔ اس سے مطلقاً ذوالحلیفہ میں بطور تبرک کے دو رکعت پڑھنے کا جواز یا استحباب تو معلوم ہوتا ہے لیکن احرام کے وقت یا احرام باندھنے کے بعد دو رکعت پڑھنے کا اثبات نہیں ہوتا۔ شیخ البانی رحمہ اللہ نے بھی لکھا ہے کہ احرام کی کوئی مخصوص نماز نہیں، البتہ وہ وقت فرض نماز کا ہو تو نماز کے بعد احرام باندھا جائے، رسول اللہﷺ کا اسوہ بھی یہی ہے۔ (مناسک الحج والعمرة، للألباني، ص: 15، 16 مکتبة المعارف، الریاض)
   سنن نسائی ترجمہ و فوائد از الشیخ حافظ محمد امین حفظ اللہ، حدیث/صفحہ نمبر: 2748   

  فوائد ومسائل از الشيخ حافظ محمد امين حفظ الله سنن نسائي تحت الحديث2758  
´تلبیہ کب پکاریں؟`
سالم سے روایت ہے کہ انہوں نے اپنے والد عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کو کہتے سنا: تمہارا یہ بیداء وہی ہے جس کے تعلق سے تم لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف غلط بات منسوب کرتے ہو ۱؎ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے (بیداء سے نہیں) ذوالحلیفہ کی مسجد ہی سے تلبیہ پکارا ہے ۲؎۔ [سنن نسائي/كتاب مناسك الحج/حدیث: 2758]
اردو حاشہ:
(1) عام لوگوں میں مشہور تھا کہ رسول اللہﷺ نے بیداء کے میدان میں لبیک کہنا شروع فرمایا لیکن یہ درست نہیں۔ اصل یہ ہے کہ رسول اللہﷺ نے ذوالحلیفہ میں بہ حیثیت مسافر، ظہر کی دو رکعتیں پڑھیں اور سلام کے بعد وہیں لبیک پکارا مگر وہ صرف چند قریبی ساتھیوں نے سنا، پھر آپ سواری پر تشریف فرما ہوئے تو پھر لبیک پکارا۔ اسے پہلے سے زیادہ لوگوں نے سنا، پھر آپ بیداء میں پہنچے تو آپ نے پھر لبیک پکارا۔ وہ تقریباً سب لوگوں نے سنا۔ جس نے جس جگہ سنا، اسی کے بارے میں بیان کیا۔ اس میں کوئی جھوٹ نہیں۔ اپنے اپنے علم کی بات ہے، البتہ احرام کی ابتدا ذوالحلیفہ سے ہوئی اور وہیں آپ نے لبیک کہنا شروع کیا تھا۔
(2) جھوٹ بولتے ہو۔ یعنی تمھیں غلط فہمی ہے کہ آپ نے لبیک کی ابتدا بیداء سے فرمائی۔ عربی میں غلط فہمی کو بھی جھوٹ کہہ لیتے ہیں کیونکہ دونوں خلاف واقعہ ہوتے ہیں۔
(3) ذوالحلیفہ کی مسجد اس وقت وہاں مسجد نہیں تھی۔ مسجد بعد میں بطور یادگار بنائی گئی۔
   سنن نسائی ترجمہ و فوائد از الشیخ حافظ محمد امین حفظ اللہ، حدیث/صفحہ نمبر: 2758   

  فوائد ومسائل از الشيخ حافظ محمد امين حفظ الله سنن نسائي تحت الحديث2759  
´تلبیہ کب پکاریں؟`
عبداللہ بن عمر رضی الله عنہما کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو وہ ذوالحلیفہ میں اپنی سواری پر سوار ہوتے دیکھا، پھر جب اونٹنی (آپ کو لے کر) پورے طور پر کھڑی ہو گئی تو آپ نے تلبیہ پکارا۔ [سنن نسائي/كتاب مناسك الحج/حدیث: 2759]
اردو حاشہ:
اصل بات پیچھے گزر چکی ہے کہ آپ نے لبیک کی ابتدا نماز کے فوراً بعد بیٹھے بیٹھے فرما لی تھی۔
   سنن نسائی ترجمہ و فوائد از الشیخ حافظ محمد امین حفظ اللہ، حدیث/صفحہ نمبر: 2759   

  فوائد ومسائل از الشيخ حافظ محمد امين حفظ الله سنن نسائي تحت الحديث2761  
´تلبیہ کب پکاریں؟`
عبید بن جریج کہتے ہیں کہ میں نے ابن عمر رضی اللہ عنہما سے کہا کہ میں آپ کو دیکھا کہ جب اونٹنی آپ کو لے کر کھڑی ہوئی ہے تو آپ نے اس وقت تلبیہ پکارا، تو انہوں نے کہا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسی وقت تلبیہ پکارا تھا جب آپ کی اونٹنی آپ کو لے کر سیدھی کھڑی ہوئی تھی۔ [سنن نسائي/كتاب مناسك الحج/حدیث: 2761]
اردو حاشہ:
حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ اپنے علم کے مطابق بیان فرما رہے ہیں ورنہ حجۃ الوداع وغیرہ کے موقع پر آپ نے نماز کے فوراً بعد لبیک کہنا شروع فرما دیا تھا۔ حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے سنا نہیں ہوگا۔
   سنن نسائی ترجمہ و فوائد از الشیخ حافظ محمد امین حفظ اللہ، حدیث/صفحہ نمبر: 2761   

  الشیخ ڈاکٹر عبد الرحمٰن فریوائی حفظ اللہ، فوائد و مسائل، سنن ترمذی، تحت الحديث 818  
´نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم نے کس جگہ سے احرام باندھا؟`
عبداللہ بن عمر رضی الله عنہما کہتے ہیں: بیداء جس کے بارے میں لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر جھوٹ باندھتے ہیں (کہ وہاں سے احرام باندھا) ۱؎ اللہ کی قسم! رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مسجد (ذی الحلیفہ) کے پاس درخت کے قریب تلبیہ پکارا ۲؎۔ [سنن ترمذي/كتاب الحج/حدیث: 818]
اردو حاشہ:
1؎:
یہ بات ابن عمر نے ان لوگوں کی غلط فہمی کے ازالہ کے لیے کہی جو یہ کہتے تھے کہ رسول اللہ ﷺ نے بیداء کے مقام سے احرام باندھا تھا۔

2؎:
ان روایات میں بظاہر تعارض ہے،
ان میں تطبیق اس طرح سے دی گئی ہے کہ آپ نے احرام تو مسجد کے اندر ہی باندھا تھا جنہوں نے وہاں آپ کے احرام کا مشاہدہ کیا انہوں نے اس کا ذکر کیا اور جب آپ مسجد سے باہر تشریف لائے اور اپنی اونٹنی پر سوار ہوئے اور بلند آواز سے تلبیہ پکارا تو دیکھنے والوں نے سمجھا کہ آپ نے اسی وقت احرام باندھا ہے،
پھر جب آپ بیداء پر پہنچے اور آپ نے لبیک کہا تو جن حضرات نے وہاں لبیک کہتے سنا انہوں نے سمجھا کہ آپ نے یہاں احرام باندھا ہے،
گویا ہر شخص نے اپنے مشاہدہ کے مطابق خبر دی۔
   سنن ترمذي مجلس علمي دار الدعوة، نئى دهلى، حدیث/صفحہ نمبر: 818   

  الشيخ محمد ابراهيم بن بشير حفظ الله، فوائد و مسائل، مسند الحميدي، تحت الحديث:674  
674- سالم بن عبداللہ کہتے ہیں: میں نے سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کو یہ کہتے ہوئے سنا ہے: یہ بیداء وہ جگہ ہے، جس کے بارے میں تم لوگ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے حوالے سے غلط بات بیان کرتے ہو۔ اللہ کی قسم! نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ذوالحلیفہ میں موجود مسجد کے پاس سے تلبیہ پڑھنا شروع کیا۔ [مسند الحمیدی/حدیث نمبر:674]
فائدہ:
نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے مسجد میں ہی تلبیہ کہا تھا پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم سواری پر سوار ہو گئے اور سواری پر بیٹھ کر بھی تلبیہ کہا تو سننے والوں نے سواری کے وقت تلبیہ کا ذکر کیا پھر جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم میدان بیداء کی چڑھائی پر پہنچے تو تلبیہ کہا اس کے بعد جس نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو جس حالت میں دیکھا اسے بیان کر دیا۔ [فتح الباري: 505/3]
   مسند الحمیدی شرح از محمد ابراهيم بن بشير، حدیث/صفحہ نمبر: 674   

  الشيخ الحديث مولانا عبدالعزيز علوي حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث ، صحيح مسلم: 2817  
سالم سے روایت ہے کہ جب ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے کہا جاتا احرام بیداء سے ہے تو وہ کہتے بیداء جس کے بارے میں تم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر جھوٹ باندھتے ہو، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے احرام نہیں باندھا مگر درخت کے پاس سے جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی اونٹنی آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو لے کر کھڑی ہوئی۔ [صحيح مسلم، حديث نمبر:2817]
حدیث حاشیہ:
فوائد ومسائل:
بعض لوگوں کا یہ کہنا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تلبیہ یا احرام مقام بیداء سے شروع کیا تھا چونکہ خلاف واقعہ تھا آپ صلی اللہ علیہ وسلم تلبیہ اور احرام کا آغاز مسجد ذوالحلیفہ سے کر چکے تھے۔
اس لیے حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما نے اس کو کذب سے تعبیر کیا لیکن ان لوگوں نے چونکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا تلبیہ بیداء میں سنا تھا اس سے پہلے نہیں سنا تھا۔
اس لیے وہ بیداء کا نام لیتے تھے جیسا کہ ہم حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے اس کی تفصیل نقل کر چکے ہیں۔
   تحفۃ المسلم شرح صحیح مسلم، حدیث/صفحہ نمبر: 2817   

  مولانا داود راز رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري: 2865  
2865. حضرت ابن عمر ؓسے روایت ہے، وہ نبی ﷺ سے بیان کرتے ہیں کہ آپ نے جب اپنا پاؤں رکاب میں رکھا اور آپ کی اونٹنی آپ کو لے کر سیدھی کھڑی گئي تو آپ نے مسجد ذوالحلیفہ کے پاس لبیک کہا۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:2865]
حدیث حاشیہ:
غرز بھی رکاب ہی کو کہتے ہیں‘ فرق صرف اتنا ہے کہ رکاب اگر لوہے کا ہو یا لکڑی کا تو اسے رکاب کہتے ہیں لیکن اگر چمڑے کا ہو تو اسے غرز کہتے ہیں۔
بعضوں نےکہا رکاب گھوڑے میں ہوتی ہے اور غرز اونٹ میں۔
   صحیح بخاری شرح از مولانا داود راز، حدیث/صفحہ نمبر: 2865   

  الشيخ حافط عبدالستار الحماد حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري:1541  
1541. ہمیں علی بن عبد اللہ نے بیان کیا انہوں نے سفیان ثوری سے انہوں نے موسیٰ بن عقبہ سے انہوں نے سالم بن عبد اللہ سے سنا انہوں نے ابن عمرؓ سے سنا۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:1541]
حدیث حاشیہ:
(1)
امام بخاری ؒ نے اس حدیث کو حضرت امام مالک اور سفیان کی سندوں سے بیان کیا ہے لیکن سفیان کی روایت کا متن ذکر نہیں کیا۔
ان کے الفاظ کو امام حمیدی نے بیان کیا ہے کہ حضرت ابن عمر ؓ نے فرمایا:
تم لوگ رسول اللہ ﷺ کے بارے میں خلاف واقعہ بات کرتے ہو کہ آپ نے میدان بیداء سے تلبیہ شروع کیا تھا، اللہ کی قسم! آپ نے مسجد ذوالحلیفہ کے پاس سے تلبیہ کا آغاز کیا تھا۔
(2)
وقت تلبیہ میں اختلاف ہے۔
بعض روایات میں ہے کہ رسول اللہ ﷺ جب اونٹنی پر سوار ہوئے تو تلبیہ کہا جبکہ بعض روایات سے پتہ چلتا ہے کہ جب آپ میدان بیداء کی بلندی پر پہنچے تو لبیک کہا۔
یہ اختلاف راویوں کے اپنے مشاہدے کی بنا پر ہے۔
حضرت ابن عباس ؓ اس اختلاف کی حقیقت بایں الفاظ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے ایک ہی حج کیا ہے۔
جب آپ حج کے لیے تشریف لے گئے تو آپ نے مسجد ذوالحلیفہ میں نماز ادا فرمائی اور اس کے بعد تلبیہ کہا۔
جن لوگوں نے اس وقت آپ کا تلبیہ سنا تو انہوں نے اسی وقت کے حوالے سے بیان کیا، پھر آپ سوار ہوئے تو آپ نے سواری پر بیٹھ کر تلبیہ کہا تو سننے والوں نے سواری کے وقت تلبیہ کہنے کو بیان کیا، پھر جب آپ میدان بیداء کی چڑھائی پر پہنچے تو لبیک پکارا تو جن لوگوں نے اس وقت دیکھا تو انہوں نے اپنے مشاہدے کے مطابق اسے بیان کر دیا۔
آپ نے اس کا آغاز تو مسجد سے کیا تھا اس کے بعد جس کسی نے آپ کو جس حالت میں دیکھا اسے بیان کر دیا۔
(سنن أبي داود، المناسك، حدیث: 1770، والحاکم: 451/1، و فتح الباري: 505/3)
   هداية القاري شرح صحيح بخاري، اردو، حدیث/صفحہ نمبر: 1541   

  الشيخ حافط عبدالستار الحماد حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري:2865  
2865. حضرت ابن عمر ؓسے روایت ہے، وہ نبی ﷺ سے بیان کرتے ہیں کہ آپ نے جب اپنا پاؤں رکاب میں رکھا اور آپ کی اونٹنی آپ کو لے کر سیدھی کھڑی گئي تو آپ نے مسجد ذوالحلیفہ کے پاس لبیک کہا۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:2865]
حدیث حاشیہ:
اس روایت سے معلوم ہوا کہ عنوان میں رکاب اور پائیدان دونوں ہم معنی ہیں فرق صرف اتنا ہے کہ رکاب لوہے یا لکڑی کا ہوتا ہے جبکہ غرز چمڑے کا ہوتا ہے۔
کچھ حضرات نے اس طرح فرق کیا ہے کہ رکاب گھوڑے میں ہوتی ہے اور غرز اونٹ میں لگایا جاتا ہے۔
   هداية القاري شرح صحيح بخاري، اردو، حدیث/صفحہ نمبر: 2865   


http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.