صحيح مسلم کل احادیث 3033 :ترقیم فواد عبدالباقی
صحيح مسلم کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح مسلم
زکاۃ کے احکام و مسائل
1ق. باب لَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسَةِ أَوْسُقٍ صَدَقَةٌ:
1ق. باب: پانچ وسق سے کم میں زکوٰۃ نہیں۔
حدیث نمبر: 2267
پی ڈی ایف بنائیں اعراب
وحدثنا ابو بكر بن ابي شيبة ، وعمرو الناقد ، وزهير بن حرب ، قالوا: حدثنا وكيع ، عن سفيان ، عن إسماعيل بن امية ، عن محمد بن يحيى بن حبان ، عن يحيى بن عمارة ، عن ابي سعيد الخدري ، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: " ليس فيما دون خمسة اوساق من تمر، ولا حب صدقة ".وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَعَمْرٌو النَّاقِدُ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، قَالُوا: حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ سُفْيَانَ ، عَنْ إِسْمَاعِيلَ بْنِ أُمَيَّةَ ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ يَحْيَى بْنِ حَبَّانَ ، عَنْ يَحْيَى بْنِ عُمَارَةَ ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: " لَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسَةِ أَوْسَاقٍ مِنْ تَمْرٍ، وَلَا حَبٍّ صَدَقَةٌ ".
وکیع نے سفیان سے، انھوں نے اسماعیل بن امیہ سے، انھوں نے محمد بن یحییٰ بن حبان سے، انھوں نے یحییٰ بن عمارہ سے اور انھوں نے حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت کی، انھوں نےکہا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "پانچ وسق سے کم کھجور اور غلے میں صدقہ نہیں ہے۔"
حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پانچ وسق سے کم کھجوروں اور غلہ میں زکاۃ نہیں ہے۔
ترقیم فوادعبدالباقی: 979

   صحيح البخاري1447سعد بن مالكليس فيما دون خمس ذود صدقة من الإبل وليس فيما دون خمس أواق صدقة وليس فيما دون خمسة أوسق صدقة
   صحيح البخاري1405سعد بن مالكليس فيما دون خمس أواق صدقة وليس فيما دون خمس ذود صدقة وليس فيما دون خمس أوسق صدقة
   صحيح البخاري1459سعد بن مالكليس فيما دون خمسة أوسق من التمر صدقة وليس فيما دون خمس أواق من الورق صدقة وليس فيما دون خمس ذود من الإبل صدقة
   صحيح البخاري1484سعد بن مالكليس فيما أقل من خمسة أوسق صدقة ولا في أقل من خمسة من الإبل الذود صدقة ولا في أقل من خمس أواق من الورق صدقة
   صحيح مسلم2268سعد بن مالكليس في حب ولا تمر صدقة حتى يبلغ خمسة أوسق ولا فيما دون خمس ذود صدقة ولا فيما دون خمس أواق صدقة
   صحيح مسلم2267سعد بن مالكليس فيما دون خمسة أوساق من تمر ولا حب صدقة
   صحيح مسلم2271سعد بن مالكليس فيما دون خمسة أوسق صدقة وليس فيما دون خمس ذود صدقة وليس فيما دون خمس أواق صدقة
   صحيح مسلم2263سعد بن مالكليس فيما دون خمسة أوسق صدقة ولا فيما دون خمس ذود صدقة ولا فيما دون خمس أواق صدقة
   جامع الترمذي626سعد بن مالكليس فيما دون خمس ذود صدقة وليس فيما دون خمس أواق صدقة وليس فيما دون خمسة أوسق صدقة
   سنن أبي داود1559سعد بن مالكليس فيما دون خمسة أوسق زكاة والوسق ستون مختوما
   سنن أبي داود1558سعد بن مالكليس فيما دون خمس ذود صدقة وليس فيما دون خمس أواق صدقة وليس فيما دون خمسة أوسق صدقة
   سنن ابن ماجه1799سعد بن مالكليس فيما دون خمس من الإبل صدقة وليس في الأربع شيء فإذا بلغت خمسا ففيها شاة إلى أن تبلغ تسعا فإذا بلغت عشرا ففيها شاتان إلى أن تبلغ أربع عشرة فإذا بلغت خمس عشرة ففيها ثلاث شياه إلى أن تبلغ تسع عشرة فإذا بلغت عشرين ففيها أربع شياه إلى أن تبلغ أربعا وعشرين ف
   سنن ابن ماجه1793سعد بن مالكلا صدقة فيما دون خمسة أوساق من التمر ولا فيما دون خمس أواق ولا فيما دون خمس من الإبل
   سنن النسائى الصغرى2447سعد بن مالكليس فيما دون خمسة أوسق صدقة ولا فيما دون خمس ذود صدقة ولا فيما دون خمسة أواق صدقة
   سنن النسائى الصغرى2448سعد بن مالكليس فيما دون خمسة ذود صدقة وليس فيما دون خمسة أواق صدقة وليس فيما دون خمسة أوسق صدقة
   سنن النسائى الصغرى2475سعد بن مالكليس فيما دون خمسة أواق صدقة ولا فيما دون خمس ذود صدقة وليس فيما دون خمس أوسق صدقة
   سنن النسائى الصغرى2476سعد بن مالكليس فيما دون خمس أوسق من التمر صدقة وليس فيما دون خمس أواق من الورق صدقة وليس فيما دون خمس ذود من الإبل صدقة
   سنن النسائى الصغرى2477سعد بن مالكلا صدقة فيما دون خمس أوساق من التمر ولا فيما دون خمس أواق من الورق صدقة ولا فيما دون خمس ذود من الإبل صدقة
   سنن النسائى الصغرى2478سعد بن مالكليس فيما دون خمس أواق من الورق صدقة وليس فيما دون خمس من الإبل صدقة وليس فيما دون خمسة أوسق صدقة
   سنن النسائى الصغرى2485سعد بن مالكليس فيما دون خمسة أوساق من حب أو تمر صدقة
   سنن النسائى الصغرى2486سعد بن مالكلا يحل في البر والتمر زكاة حتى تبلغ خمسة أوسق ولا يحل في الورق زكاة حتى تبلغ خمسة أواق ولا يحل في إبل زكاة حتى تبلغ خمس ذود
   سنن النسائى الصغرى2487سعد بن مالكليس في حب ولا تمر صدقة حتى تبلغ خمسة أوسق ولا فيما دون خمس ذود ولا فيما دون خمس أواق صدقة
   سنن النسائى الصغرى2488سعد بن مالكليس فيما دون خمس أواق صدقة
   سنن النسائى الصغرى2489سعد بن مالكليس فيما دون خمس أواق صدقة ولا فيما دون خمس ذود صدقة وليس فيما دون خمسة أوسق صدقة
   موطا امام مالك رواية ابن القاسم273سعد بن مالكليس فيما دون خمسة اوسق من التمر صدقة، وليس فيما دون خمس اواق من الورق صدقة، وليس فيما دون خمس ذود من الإبل صدقة
   موطا امام مالك رواية ابن القاسم274سعد بن مالكليس فيما دون خمس ذود صدقة، وليس فيما دون خمس اواق صدقة، وليس فيما دون خمسة اوسق صدقة
   بلوغ المرام494سعد بن مالك‏‏‏‏ليس فيما دون خمسة اوساق من تمر ولا حب صدقة
   المعجم الصغير للطبراني413سعد بن مالك ليس فيما دون خمسة أواق صدقة ، وليس فيما دون خمسة ذود صدقة ، وليس فيما دون خمسة أوسق صدقة
   مسندالحميدي752سعد بن مالكوليس فيما دون خمس ذود صدقة، وليس فيما دون خمسة أوسق صدقة، وليس فيما دون خمسة أواق صدقة

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  حافظ زبير على زئي رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث موطا امام مالك رواية ابن القاسم 273  
´پانچ اوقیوں سے کم چاندی پر زکوٰۃ نہیں ہے`
«. . . ان رسول الله صلى الله عليه وسلم قال: ليس فيما دون خمسة اوسق من التمر صدقة، وليس فيما دون خمس اواق من الورق صدقة، وليس فيما دون خمس ذود من الإبل صدقة . . .»
. . . ‏‏‏‏ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پانچ وسق سے کم کھجوروں میں کوئی صدقہ (عشر) نہیں ہے اور پانچ اوقیوں سے کم چاندی میں کوئی صدقہ (زکوٰة) نہیں ہے اور پانچ اونٹوں سے کم میں کوئی صدقہ (زکوة) نہیں ہے . . . [موطا امام مالك رواية ابن القاسم: 273]

تخریج الحدیث:
[وأخرجه البخاري 1459، من حديث مالك به]

تفقه
➊ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «لَا صَدَقَةَ فِيْ شَيْءٍ مِنَ الزَّرْعِ أَوِ الْكَرْمِ حَتَّى يَكُوْنَ خَمْسَةُ أَوْسُقٍ وَلَا فِي الرَّقَّةِ حَتَّى تَبْلُغَ مِئَتَيْ دِرْهَمٍ» کسی کھیتی (غلے) یا کھجور میں کوئی عشر نہیں ہے إلا یہ کہ پانچ وسق ہوجائے اور چاندی میں کوئی زکواۃ نہیں ہے إلا یہ کہ دوسو درہم تک پہنچ جائے (3078: شرح معانی الآثار للطحاوی 35/2 و سندہ حسن)
حافظ ابن عبدالبر نے فرمایا کہ یہ جلیل القدر سنت ہے جسے سب کی طرف سے تلقی بالقبول حاصل ہے۔ [التمهيد 20/136]
➋ ایک وسق ساٹھ صاع کا ہوتا ہے اور ایک حجازی صاع 5 رطل اور ثلث = دو سیر چار چھٹانک یعنی 2 کلوگرام 99 گرام 520 ملی گرام، دیکھئے مولانا فاروق اصغر صارم رحمہ اللہ کی کتاب اسلامی اوزان [ص59] صاع کے صحیح وزن کے بارے میں علمائے حق کا باہم اختلاف ہے لہٰذا بہتر یہی ہے کہ ڈھائی کلو (2 کلو 500 گرام) قرار دے کر صدقہ نکالا جائے تاکہ آدمی شک وشبہ سے بچا رہے۔ واللہ اعلم
➌ ایک اوقیہ میں چالیس درہم ہوتے ہیں جو دو چھٹانک چھ ماشہ اور 472۔ 1220 گرام ہوتا ہے۔ دیکھئے: [اسلامي اوزان ص21]
➍ پورا سال گزرنے کے بعد ہی زکوٰۃ فرض ہوتی ہے۔
➎ تفقہ نمبر 2 سے ثابت ہوتا ہے کہ جس کا غلہ فصل وغیرہ 750 کلوگرام یا دوسرے قول میں 630 کلوگرام سے کم ہو تو اس میں عشر ضروری نہیں ہے۔ مذکورہ حد تک پہنچنے کے بعد ہی عشر فرض ہوتا ہے۔ نیز دیکھئے: [ح 402]
   موطا امام مالک روایۃ ابن القاسم شرح از زبیر علی زئی، حدیث\صفحہ نمبر: 92   
  حافظ زبير على زئي رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث موطا امام مالك رواية ابن القاسم 274  
´پانچ اوقیوں سے کم چاندی پر زکوٰۃ نہیں ہے`
«. . . 402- وبه: عن أبيه قال: سمعت أبا سعيد الخدري يقول: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: ليس فيما دون خمس ذود صدقة، وليس فيما دون خمس أواق صدقة، وليس فيما دون خمسة أوسق صدقة. . . .»
. . . سیدنا ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پانچ اونٹوں سے کم پر کوئی صدقہ (زکوٰة) نہیں ہے اور پانچ اوقیہ چاندی سے کم پر کوئی صدقہ نہیں ہے اور پانچ وسق (غلے) سے کم پر کوئی صدقہ (عشر) نہیں ہے۔ . . . [موطا امام مالك رواية ابن القاسم: 274]

تخریج الحدیث:
[وأخرجه البخاري 1447، من حديث مالك به، ورواه مسلم 979، من حديث عمرو بن يحييٰ بن عمارة به]

تفقه:
➊ سیدنا جابر بن عبداللہ الانصاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «لا صدقة فى شئي من الزرع او الكرم حتيٰ يكون خمسة أوسق ولا فى الرقة حتيٰ تبلغ مئتي درهم۔» کھیتی یا انگور میں پانچ وسق سے کم میں کوئی صدقہ (ضروری) نہیں ہے اور دو سو درہم سے کم چاندی میں کوئی صدقہ نہیں ہے۔ [شرح معاني الآثار للطحاوي 2/35 وسنده حسن، وأصله عند ابن ماجه: 1794]
➋ مزید فقہ الحدیث کے لئے دیکھئے الموطأ حدیث: 92
   موطا امام مالک روایۃ ابن القاسم شرح از زبیر علی زئی، حدیث\صفحہ نمبر: 402   
  مولانا عطا الله ساجد حفظ الله، فوائد و مسائل، سنن ابن ماجه، تحت الحديث1793  
´جن چیزوں میں زکاۃ واجب ہے ان کا بیان۔`
ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا: پانچ وسق سے کم کھجور میں زکاۃ نہیں ہے، اور پانچ اوقیہ سے کم چاندی میں زکاۃ نہیں ہے، اور پانچ اونٹوں سے کم میں زکاۃ نہیں ہے۔‏‏‏‏ [سنن ابن ماجه/كتاب الزكاة/حدیث: 1793]
اردو حاشہ:
فوائد و مسائل:
(1)
کھجوریں جب خشک کر کے ذخیرہ کرنے کے قابل ہو جائیں، اس وقت اگر ان کا وزن پانچ وسق کے برابر ہو تو ان پر زکاۃ واجب ہوگی۔
ایک وسق سات صاع کے برابر ہوتا ہے اور صاع ایک پیمانہ ہے جس کا وزن تقریباً ڈھائی کلو بنتا ہے۔
اس حساب سے پانچ وسق کا وزن تقریباً بیس (20)
من بنتا ہے جس میں سے ایک من زکاۃ ادا کی جائے گی۔

(2)
پانچ اوقیہ دو سو درہم کے برابر ہے یعنی چاندی کا نصاب دو سو درہم تقریباً ساڑھے باون تولے ہے۔

(3)
اگر کسی کے پاس پانچ سے کم اونٹ ہوں تو ان میں زکاۃ فرض نہیں۔
پانچ اونٹ ہوں تو ایک بکری زکاۃ کے طور پر ادا کی جائے گی۔
اونٹوں کی زکاۃ کی مزید تفصیل باب 9 میں آئے گی۔
   سنن ابن ماجہ شرح از مولانا عطا الله ساجد، حدیث\صفحہ نمبر: 1793   
  الشیخ ڈاکٹر عبد الرحمٰن فریوائی حفظ اللہ، فوائد و مسائل، سنن ترمذی، تحت الحديث 626  
´کھیتی، پھل اور غلے کی زکاۃ کا بیان۔`
ابو سعید خدری رضی الله عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پانچ اونٹوں ۱؎ سے کم میں زکاۃ نہیں ہے، اور پانچ اوقیہ ۲؎ چاندنی سے کم میں زکاۃ نہیں ہے اور پانچ وسق ۳؎ غلے سے کم میں زکاۃ نہیں ہے۔ [سنن ترمذي/كتاب الزكاة/حدیث: 626]
اردو حاشہ:
1؎:
یہ اونٹوں کا نصاب ہے اس سے کم میں زکاۃ نہیں۔

2؎:
اوقیہ چالیس درہم ہوتا ہے،
اس حساب سے 5اوقیہ دو سو درہم کے ہوئے،
موجودہ وزن کے حساب سے دو سو درہم 595 گرام کے برابر ہے۔

3؎:
ایک وسق ساٹھ صاع کا ہوتا ہے پانچ وسق کے تین سو صاع ہوئے موجودہ وزن کے حساب سے تین سو صاع کا وزن تقریباً (750) کلو گرام یعنی ساڑھے سات کوئنٹل بنتا ہے۔
   سنن ترمذي مجلس علمي دار الدعوة، نئى دهلى، حدیث\صفحہ نمبر: 626   
  الشيخ عمر فاروق سعيدي حفظ الله، فوائد و مسائل، سنن ابي داود ، تحت الحديث 1558  
´کن چیزوں میں زکوٰۃ واجب ہے؟`
ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پانچ اونٹوں سے کم میں زکاۃ نہیں ہے ۱؎، پانچ اوقیہ ۲؎ سے کم (چاندی) میں زکاۃ نہیں ہے اور نہ پانچ وسق ۳؎ سے کم (غلے اور پھلوں) میں زکاۃ ہے۔‏‏‏‏ [سنن ابي داود/كتاب الزكاة /حدیث: 1558]
1558. اردو حاشیہ:
➊ سونے چاندی، مال مویشی اور دیگر اجناس کے لیے مقررہ نصاب سے کم میں زکوۃ فرض نہیں ہے۔ ویسے کوئی دینا چاہے تو صدقہ ہے اور محبوب عمل ہے۔
➋ ایک اوقیہ میں چالیس درہم اور ایک درہم تقریباً 2.975 گرام چاندی کا ہوتا ہے۔ اسی طرح ایک اوقیہ کا وزن ایک سو انیس گرام، اور پانچ اوقیہ چاندی کا وزن پانچ سو پچانوے گرام ہوا۔ جس کا وزن تولہ کے حساب سے 51 تولہ (اور سابقہ علماء کے حساب سے 52 ½ تولہ) ہوتا ہے۔
➌ ایک وسق میں ساٹھ صاع ہوتے ہیں جیسا کہ اگلی روایات میں آرہا ہے، اور ایک صاع میں چار مد۔ ایک صاع کا وزن تقریباً ڈھائی کلو ہوتا ہے۔ اس حساب سے پانچ وسق کا کل سات سو پچاس کلو ہو جائے گا۔ یعنی تقریباً 19من۔ زکوۃ کی ادائیگی میں بنیادی اہمیت کا سوال یہ ہے کہ زکوۃ کس کس مال پر فرض ہے؟ سنن ابوداؤد میں جو احادیث بیان کی گئی ہیں ان میں سے سونا‘ چاندی‘ چرنے والے اونٹ گائیں بھیڑ اور بکریوں کا تفصیل سے ذکر ہے۔ زرعی اجناس میں جو زکوۃ ادا کی جاتی ہے‘ اسے عشر کہا جاتا ہے۔ اس حوالے سے وہ حدیثیں ذکر کی گئی ہیں جن میں قابل زکوۃ (عشر) اجناس کا تفصیل سے ذکر نہیں۔ البتہ یہ وضاحت ہے کہ جو کھیتیاں بارش‘ دریاؤں‘ چشموں یا زمین کی رطوبت سے سیراب ہوتی ہیں ان کی زکوۃ عشر یعنی دسواں حصہ ہے اور جن کو اونٹوں کے ذریعے سے (رہٹ چلا کر یا اونٹوں پر پانی لاد کر)سیراب کیا جاتا ہے ان کی زکوۃ (نصف عشر) یعنی بیسواں حصہ ہے۔ اس پر تمام علماء کا اتفاق ہے کہ زرعی اجناس پر زکوۃ‘ عشر یا نصف عشر ہے۔ اختلاف اجناس کے حوالے سے امام ابوحنیفہ گھاس‘ ایندھن اور بے ثمر درختوں کو چھوڑ کر زمین سے اگائی جانے والی ہر چیز پر عشر کے قائل ہیں۔ انہوں نے حضرت جابر ؓ کی روایت جو کھیتوں بارش، دریاؤں اور چشموں سے سیراب ہوں ان میں عشر اور جن کی آبپاشی اونٹوں کے ذریعے سے کی جائے ان میں نصف عشر ہے۔ کے الفاظ میں پائے جانے والے عموم سے استدلال کیا ہے۔ علاوہ ازیں وہ قرآنی آیت: ﴿وَمِمّا أَخرَ‌جنا لَكُم مِنَ الأَر‌ضِ﴾ [البقرة:267 ]
کےعموم سے استدلال کرتے ہوئے یہ بھی کہتے ہیں کہہ زمیں کی پیدا وار تھوڑی ہو یا زیادہ، اس میں عشر یا نصف عشر ہوگا۔ حالانکہ اس عموم کی تخصیص حدیث رسول ﷺ سے ثابت ہے کہ 19 من سےکم پیداوار عشر سے مستثنی ہے۔ ان کے شاگرد امام ابویوسف اور امام محمد صرف ان اجناس پر زکوۃ ضروری سمجھتے ہیں جو آسمانی سال تک باقی رہ سکتی ہیں اوران کا لین دین ناپ سے ہوتا ہو یا وزن سے، ان کے مطابق ہر قسم کے غلے، شکر، کپاس وغیرہ پر عشر دینا ہو گا۔ امام مالک انسان کی اگائی ہوئی تمام ایسی رزعی اجناس پر عشر ضروری سمجھتے تھے جو خشک کرکے محفوظ کی جا سکتی ہیں۔ امام احمد خشک ہونے والے پھل اور ہر قسم کے بیجوں پر زکوۃ کے قائل تھے۔ جلیل القدر فقہائے تابعین امام حسن بصری، امام شعبی، موسیٰ بن طلحہ اور مجاہد صرف گندم، جو، کھجور اور کشمش میں عشر کے قائل ہیں جن کا نام رسول اللہ ﷺ نے خوج لیا ہے۔ امام بیہقی نے ان تابعین کے حوالے سے وہ ساری روایات ذکر کی ہین جن میں رسول اللہ ﷺ نے صرف ان اشیاء میں عشر لینے کا حکم دیا ہے۔ یہ روایات مرسل ہیں۔ لیکن حضرت موسیٰ بن طلحہ نے وضاحت کی ہے کہ ہمارے پاس رسول اللہ کی وہ تحریر موجود ہے جو آپ نے لکھوا کر حضرت معاذ بن جبلؓ کوعطا فرمائی تھی۔ اس میں یہ لکھا ہوا ہے کہ عشر ان چار چیزوں میں ہے۔ ان سار ی روایات کو ذکر کر کے امام بیہقی کہتے ہیں: یہ تمام روایات مرسل ہیں لیکن متعدد اسانید سے ایک دوسرے کی تائید کرتی ہیں۔ ان کے ساتھ حضرت ابو بردہ ؓ کے طریق سے حضرت موسیٰ اشعری کی روایت ہے جو انہی چار چیزوں کے عشر کے بارے میں ہے۔ [السنن الکبری للبیھقي‘ باب الصدقة فیما یزرعه الآدمیون ....]
ابو بردہ ؓ والی روایت کی صحت کے بارے میں امام بیہقی کا فیصلہ ہے: «رواته ثقات وهو متصل» یعنی اس کے راوی ثقہ ہیں اور اس کی سند متصل ہے۔ [نيل الأوطار:الزکوة‘ باب زکوة الزرع والثمار) امام شافعی نے انہی چار چیزوں پر قیاس کر کے یہ کہا ہے: «عشر ما یقات و یدخر» عشر ان بنیادی غذائی اجناس پر ہے جو بطور خوراک استعمال ہوتی ہوں اور جن کا ذخیرہ کیا جاسکتا ہے۔ گندم، جو، کھجور، کشمش کی طرح جن علاقوں میں چاول وغیرہ بنیادی غذائی جنس ہیں وہاں ان پر عشر ہو گا۔ کپاس اور دیگر بہت سی قیمتی اشیاء(cash crops) اور تازه سبزياں پر اگرچہ براہ راست عشر نہیں لیکن ان کی آمدنی کے حوالے سے اگر نصاب اور مدت نصاب مکمل ہو جائے تو زکوۃ کی ادائیگی ضرور ہو گی۔ اسی طرح چرنے والے (سائمہ) جانوروں میں شمار نہیں کیا جا سکتا، بنا بریں ان کی زکوۃ آمدنی پر ہوگی۔ پہلے سونا اور چاندی نقدی کے طور پر استعمال ہوتے تھے۔ آج کل کرنسی نوٹ استعمال ہوتے ہیں۔ علمائے امت کا اجماع ہے کہ کرنسی کو انہی پر قیاس کیا جائے گا۔ سعودی علماء اور پاک و ہند کےعلماء نے کرنسی توٹوں کے لیے چاندی کو نصاب بنایا ہے۔ ان کی دلیل یہ ہے کہ اس طرح زکوۃ دینے والوں کی تعداد زیادہ ہو گی جس میں غرباء ومساکین کا فائدہ زیادہ ہے۔ اگر سونے کو نصاب بنایا جائے گا تو بہت سے اصحاب حیثیت بھی زکوۃ دینے والوں میں سے نکل جائیں گے۔ مثال کے طور پر جس کے پاس 75ہزار سے کم فاضل بچت کے طور پر ایک سال پڑے رہے ہوں گے، وہ بھی صاحب نصاب متصور نہیں ہو گا، کیونکہ ساڑھے سات تولہ سونے کی قیمت (10ہزار روپے فی تولہ کے حساب سے) 75ہزار ہو گی۔ یوں لاکھوں افراد اصحاب حیثیت کے دائرے سے نکل جائیں گے جس کا سارانقصان غرباء مساکین اور مدارس دینیہ کو ہو گا۔ اس پہلو سے دیکھا جائے تو یہ مؤقف راجح لگتا ہے۔ بہر حال یہ اجتہادی مسئلہ ہے، اور دونوں میں سے کسی کو بھی اپنایا جا سکتا ہے۔ چاندی کا نصاب بنیاد ماننے کی صورت میں ساڑھے باون تولہ چاندی کی قیمت جتنی فاضل رقم رکھنے والا صاحب نصاب ہوگا اور سونے کو کرنسی کی بنیاد ماننے کی صورت میں 75 ہزار روپے فاضل رقم رکھنے والا صاحب نصاب متصور ہو گا اور اس سے کم رقم رکھنے والا شخص زکوۃ سےمستثنی ہوگا۔ رسول اللہﷺ کے دور میں اور صدیوں بعد تک قیمتی پتھروں، جواہرات اور موتیوں کا استعمال دنیا کے بہت سے حصوں میں زینت اور تفاخر کے لیے تو تھا، قدر یا مالیت کو محفوظ کرنے کا ذریعہ سونا چاندی ہی تھے۔ جواہرات کے کھرے کھوٹے ہونے کی پہچان چونکہ عام تاجر کے بس میں نہ تھی اور ان کی قیمتی کے تعین کا کوئی ایک باقاعدہ معیار بھی موجود نہ تھا۔ مختلف ماہرین کی رائے قیمتوں کےبارے میں ایک دوسرے سے بہت زیادہ مختلف ہوتی تھی۔ سونے چاندی کی طرح معیاری ٹیکسالوں میں ڈھال کر ان کو درہم و دینار کی شکل بھی نہ دی جا سکتی تھی اس لیے یہ کرنسی یا مالیت کے تحفظ کے لیے مناسب نہ تھے۔ مال تجارت کے طور پر ان کی زکوۃ تھی البتہ براہ راست ان پر زکوۃ کی وصولی ممکن نہ تھی۔ لیکن آج کل سائنسی بنیادوں پر ان کی پہچان، قیمت کا تعین اور اس کے لیے قابل قبول معیار سب کچھ آسان ہو گیا ہے۔ ان کی باقاعدہ منڈیاں قائم ہو گئی ہیں اور ان خوبیوں کی وجہ سے یہ زیب و زینت کے علاوہ بڑے پیمانے پر مالیت قدر کے تحفظ، ذخائر اور بنکوں میں نوٹ جاری کرنے کی غرض سے محفوظ ضمانتوں کے طور پر استعمال ہوتے ہیں۔ اس بات کا امکان موجود ہے کہ وقت کے ساتھ ساتھ زیادہ سے زیادہ لوگ زکوۃ سے بچنے کے لیے اپنے مالیاتی اثاثے جواہرات کی صورت میں محفوظ کرنے شروع کر دیں۔ امیر خواتین تو اب سونے چاندی کے بجائے ان سے کئی گنا زیادہ قیمتی جواہر کو زیب وزینت اور اثاثوں سے تحفظ کے لیے استعمال کرنے لگی ہیں ان پر زکوۃ بھی نہیں دینی پڑتی۔ یہ صورت حال فقراء اور مستحقین زکوۃ کے مفاد کے خلاف ہے۔ جس طرح حضرت عمر ؓ نے عنبر کے بارے میں، اس بنیاد پر کہ رسول اللہ ﷺ سے اس بارے میں کوئی ہدایت موجود نہ تھی، صحابہ ؓ سے مشورہ کیا تھا اور اس کی روشنی میں خمس کی وصولی کا فیصلہ فرمایا تھا۔ [الموسوعة الفقهية، كويت، زكوة باب زكوة المستخرج من البحار) مزید یہ کہ حضرت عمر ؓ کے پاس شام سے کچھ لوگ آئے کہ ہمیں گھوڑوں اور غلاموں کی صورت میں کچھ مال ملا ہے، ہم ان کی زکوۃ ادا کر کے اسے پاک کرنا چاہتے ہیں تو حضرت عمر ؓ نے صحابہ کرام سے مشورہ کرکے جن میں حضرت علی بھی شامل تھے، زکوۃ لینے کا فیصلہ کیا۔ [مستدرك حاکم، الزکوة‘ حدیث:1456) اسی طرح اب علماء اگر قیمتی پتھروں کے حوالے سے غور کریں اور متفقہ طور پر ان کی زکوۃ کے بارے میں فیصلہ کریں تو یہ عین مصلحت اسلامی کا تقاضا ہو گا۔ یاد رہے کہ پتھروں پر زکوۃ نہ ہونے کی جو مرفوع روایت عمرو بن شعیب عن أبیه عن جدہ کے حوالے سے منقول ہے وہ ضعیف ہے، اس لیے قابل اعتبار نہیں۔ [السنن الکبری للبیھقي، الزکوة‘ ما لا زکوة فیه من الجوهر غير الذهب والفضة]
   سنن ابی داود شرح از الشیخ عمر فاروق سعدی، حدیث\صفحہ نمبر: 1558   

http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.