الحمدللہ ! قرآن پاک روٹ ورڈ سرچ اور مترادف الفاظ کی سہولت پیش کر دی گئی ہے۔

 
صحيح مسلم کل احادیث 3033 :ترقیم فواد عبدالباقی
صحيح مسلم کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح مسلم
امور حکومت کا بیان
18. باب اسْتِحْبَابِ مُبَايَعَةِ الإِمَامِ الْجَيْشَ عِنْدَ إِرَادَةِ الْقِتَالِ وَبَيَانِ بَيْعَةِ الرِّضْوَانِ تَحْتَ الشَّجَرَةِ:
18. باب: لڑائی کے وقت مجاہدین سے بیعت لینا مستحب ہے اور شجرہ کے نیچے بیعت رضوان کے بیان میں۔
حدیث نمبر: 4821
پی ڈی ایف بنائیں اعراب
وحدثني حجاج بن الشاعر ، ومحمد بن رافع ، قالا: حدثنا شبابة ، حدثنا شعبة ، عن قتادة ، عن سعيد بن المسيب ، عن ابيه ، قال: " لقد رايت الشجرة ثم اتيتها بعد فلم اعرفها ".وحَدَّثَنِي حَجَّاجُ بْنُ الشَّاعِرِ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، قَالَا: حَدَّثَنَا شَبَابَةُ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ ، عَنْ أَبِيهِ ، قَالَ: " لَقَدْ رَأَيْتُ الشَّجَرَةَ ثُمَّ أَتَيْتُهَا بَعْدُ فَلَمْ أَعْرِفْهَا ".
قتادہ نے سعید بن مسیب سے، انہوں نے اپنے والد سے روایت کی، کہا: میں نے وہ درخت دیکھا تھا، پھر میں اس کے بعد وہاں گیا تو میں اس درخت کو نہ پہچان سکا۔
حضرت سعید بن المسیب اپنے باپ سے بیان کرتے ہیں، میں نے اس درخت کو دیکھا، پھر بعد میں اس کے پاس آیا تو اسے پہچان نہ سکا۔
ترقیم فوادعبدالباقی: 1859

   صحيح البخاري4163مسيب بن حزنإن أصحاب محمد لم يعلموها وعلمتموها أنتم فأنتم أعلم
   صحيح مسلم4819مسيب بن حزنانطلقنا في قابل حاجين فخفي علينا مكانها فإن كانت تبينت لكم فأنتم أعلم
   صحيح مسلم4820مسيب بن حزنكانوا عند رسول الله عام الشجرة قال فنسوها من العام المقبل
   صحيح مسلم4821مسيب بن حزنلقد رأيت الشجرة ثم أتيتها بعد فلم أعرفها

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  الشيخ الحديث مولانا عبدالعزيز علوي حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث ، صحيح مسلم: 4821  
1
حدیث حاشیہ:
فوائد ومسائل:
علماء نے لکھا ہے چونکہ اس درخت کے نیچے بیعت رضوان ہوئی تھی اور خیر و برکت اور سکینہ کا نزول ہوا تھا،
اگر یہ درخت متعین اور معلوم رہتا تو یہ خدشہ تھا کہ لوگ آہستہ آہستہ اس کی تعظیم و تکریم میں غلو کرتے کرتے اس کی عبادت کرنے لگ جاتے پھر اس کو نافع اور ضار خیال کرتے ہوئے میلہ گاہ بنا لیتے جیسا کہ بخاری شریف کی اس روایت سے اس کی تصدیق ہوتی ہے،
طارق بن عبدالرحمٰن رحمہ اللہ بیان کرتے ہیں،
میں حج کے لیے گیا اور کچھ لوگوں کو ایک جگہ نماز پڑھتے ہوئے دیکھا،
میں نے پوچھا،
یہ کون سی مسجد ہے؟ انہوں نے کہا،
یہ وہ درخت ہے،
جس کے نیچے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیعت رضوان کی تھی،
اس پر حضرت سعید بن المسیب نے بتایا،
میرا باپ اس بیعت میں شریک تھا،
اس کو تو اگلے سال ہی اس درخت کا پتہ نہ چل سکا،
تو ان لوگوں کو کیسے پتہ چل گیا،
گویا لوگوں نے ایک درخت کو وہ درخت سمجھ کر مسجد بنا لیا،
اس طرح خطرہ پیدا ہو گیا،
تو حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے اس درخت کو کٹوا دیا،
تاکہ اس سے شرک و بدعت کا دروازہ نہ کھل جائے۔
   تحفۃ المسلم شرح صحیح مسلم، حدیث\صفحہ نمبر: 4821   

http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.