سنن ابن ماجه کل احادیث 4341 :حدیث نمبر
سنن ابن ماجه
کتاب: زکاۃ و صدقات کے احکام و مسائل
The Chapters on Charity
9. بَابُ : الْكَفَالَةِ
9. باب: ضمانت کا بیان۔
حدیث نمبر: 2405
پی ڈی ایف بنائیں اعراب
حدثنا هشام بن عمار ، والحسن بن عرفة ، قالا: حدثنا إسماعيل بن عياش ، حدثني شرحبيل بن مسلم الخولاني ، قال: سمعت ابا امامة الباهلي ، يقول: سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول:" الزعيم غارم والدين مقضي".
حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ ، وَالْحَسَنُ بْنُ عَرَفَةَ ، قَالَا: حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ عَيَّاشٍ ، حَدَّثَنِي شُرَحْبِيلُ بْنُ مُسْلِمٍ الْخَوْلَانِيُّ ، قَالَ: سَمِعْتُ أَبَا أُمَامَةَ الْبَاهِلِيَّ ، يَقُولُ: سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ:" الزَّعِيمُ غَارِمٌ وَالدَّيْنُ مَقْضِيٌّ".
ابوامامہ باہلی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا: (قرض کا) ضامن و کفیل (اس کی ادائیگی کا) ذمہ دار ہے، اور قرض کی ادائیگی انتہائی ضروری ہے۔

تخریج الحدیث: «‏‏‏‏سنن ابی داود/البیوع 90 (3565)، سنن الترمذی/البیوع 39 (1265)، (تحفة الأشراف: 4884) (صحیح)» ‏‏‏‏

قال الشيخ الألباني: صحيح

قال الشيخ زبير على زئي: حسن
   سنن ابن ماجه2405صدي بن عجلانالزعيم غارم والدين مقضي

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  مولانا عطا الله ساجد حفظ الله، فوائد و مسائل، سنن ابن ماجه، تحت الحديث2405  
´ضمانت کا بیان۔`
ابوامامہ باہلی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا: (قرض کا) ضامن و کفیل (اس کی ادائیگی کا) ذمہ دار ہے، اور قرض کی ادائیگی انتہائی ضروری ہے۔‏‏‏‏ [سنن ابن ماجه/كتاب الصدقات/حدیث: 2405]
اردو حاشہ:
فوائد و مسائل:
(1)
اگرایک شخص دوسرے کی ضمانت دے کہ وہ یہ قرض ادا کر دے گا اوروه مطالبے پر یا مقررہ وقت پر ادا نہ کرے تو ضامن کو چاہیے کہ اپنے پاس سےقرض خواہ کو قرض ادا کر دے، بعد میں مقروض سے وصول کرلے۔

(2)
قرض ادا کرنا ہرحال میں ضروری ہے حتی کہ اگر مقروض فوت ہو جائے تو اس کے ترکے میں سےقرض ادا کیا جائے گا۔
اگر ترکے سےقرض ادا نہ ہو سکےتواس کےوارث ادا کریں گے۔

(3)
تاوان کا مطلب یہ ہے کہ اگرمقروض قرض نہ دے تو ضامن اپنے پاس سےرقم دے کریہ ذمے داری پوری کرے۔
   سنن ابن ماجہ شرح از مولانا عطا الله ساجد، حدیث\صفحہ نمبر: 2405   


http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.