قرآن مجيد

سورۃ النازعات
اپنا مطلوبہ لفظ تلاش کیجئیے۔

[ترجمہ محمد جوناگڑھی][ترجمہ فتح محمد جالندھری][ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
نمبر آيات تفسیر

--
بِسْمِ اللَّـهِ الرَّحْمَـنِ الرَّحِيمِ﴿﴾
شروع کرتا ہوں اللہ تعالٰی کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم کرنے والا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

1
وَالنَّازِعَاتِ غَرْقًا (1)
والنازعات غرقا۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
ڈوب کر سختی سے کھینچنے والوں کی قسم!۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
ان (فرشتوں) کی قسم جو ڈوب کر کھینچ لیتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
ان (فرشتوں) کی قسم جو ڈوب کر سختی سے ( جان) کھینچ لینے والے ہیں!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
تفسیر آیت نمبر 1,2,3,4,5,6,7,8,9,10,11,12,13,14

2
وَالنَّاشِطَاتِ نَشْطًا (2)
والناشطات نشطا۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
بند کھول کر چھڑا دینے والوں کی قسم!۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور ان کی جو آسانی سے کھول دیتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور جو بند کھولنے والے ہیں! آسانی سے کھولنا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

3
وَالسَّابِحَاتِ سَبْحًا (3)
والسابحات سبحا۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اور تیرنے پھرنے والوں کی قسم!۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور ان کی جو تیرتے پھرتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور جو تیرنے والے ہیں! تیزی سے تیرنا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

4
فَالسَّابِقَاتِ سَبْقًا (4)
فالسابقات سبقا۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
پھر دوڑ کر آگے بڑھنے والوں کی قسم!۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
پھر لپک کر آگے بڑھتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پھر جو آگے نکلنے والے ہیں! آگے بڑھ کر۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

5
فَالْمُدَبِّرَاتِ أَمْرًا (5)
فالمدبرات أمرا۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
پھر کام کی تدبیر کرنے والوں کی قسم!۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
پھر (دنیا کے) کاموں کا انتظام کرتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پھر جو کسی کام کی تدبیر کرنے والے ہیں!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

6
يَوْمَ تَرْجُفُ الرَّاجِفَةُ (6)
يوم ترجف الراجفة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
جس دن کانپنے والی کانپے گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
(کہ وہ دن آ کر رہے گا) جس دن زمین کو بھونچال آئے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
جس دن ہلا ڈالے گا سخت ہلانے والا ( زلزلہ )۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

7
تَتْبَعُهَا الرَّادِفَةُ (7)
تتبعها الرادفة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اس کے بعد ایک پیچھے آنے والی (پیچھے پیچھے) آئے گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
پھر اس کے پیچھے اور (بھونچال) آئے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اس کے بعد ساتھ ہی پیچھے آنے والا ( زلزلہ ) آئے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

8
قُلُوبٌ يَوْمَئِذٍ وَاجِفَةٌ (8)
قلوب يومئذ واجفة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
(بہت سے) دل اس دن دھڑکتے ہوں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اس دن (لوگوں) کے دل خائف ہو رہے ہوں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
کئی دل اس دن دھڑکنے والے ہوں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

9
أَبْصَارُهَا خَاشِعَةٌ (9)
أبصارها خاشعة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
جن کی نگاہیں نیچی ہوں گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور آنکھیں جھکی ہوئی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
ان کی آنکھیں جھکی ہوئی ہوں گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

10
يَقُولُونَ أَإِنَّا لَمَرْدُودُونَ فِي الْحَافِرَةِ (10)
يقولون أإنا لمردودون في الحافرة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
کہتے ہیں کہ کیا ہم پہلی کی سی حالت کی طرف پھر لوٹائے جائیں گے؟۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
(کافر) کہتے ہیں کیا ہم الٹے پاؤں پھر لوٹ جائیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
یہ لوگ کہتے ہیں کیا بے شک ہم یقینا پہلی حالت میں لوٹائے جانے والے ہیں؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

11
أَإِذَا كُنَّا عِظَامًا نَخِرَةً (11)
أإذا كنا عظاما نخرة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
کیا اس وقت جب کہ ہم بوسیده ہڈیاں ہو جائیں گے؟۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
بھلا جب ہم کھوکھلی ہڈیاں ہو جائیں گے (تو پھر زندہ کئے جائیں گے)۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
کیا جب ہم بوسیدہ ہڈیاں ہو جائیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

12
قَالُوا تِلْكَ إِذًا كَرَّةٌ خَاسِرَةٌ (12)
قالوا تلك إذا كرة خاسرة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
کہتے ہیں کہ پھر تو یہ لوٹنا نقصان ده ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
کہتے ہیں کہ یہ لوٹنا تو (موجب) زیاں ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
انھوں نے کہا یہ تو اس وقت خسارے والا لوٹنا ہو گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

13
فَإِنَّمَا هِيَ زَجْرَةٌ وَاحِدَةٌ (13)
فإنما هي زجرة واحدة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
(معلوم ہونا چاہئے) وه تو صرف ایک (خوفناک) ڈانٹ ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
وہ تو صرف ایک ڈانٹ ہوگی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پس وہ تو صرف ایک ہی ڈانٹ ہو گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

14
فَإِذَا هُمْ بِالسَّاهِرَةِ (14)
فإذا هم بالساهرة۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
کہ (جس کے ﻇاہر ہوتے ہی) وه ایک دم میدان میں جمع ہو جائیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اس وقت وہ (سب) میدان (حشر) میں آ جمع ہوں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پس یک لخت وہ زمین کے اوپر موجود ہوں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

15
هَلْ أَتَاكَ حَدِيثُ مُوسَى (15)
هل أتاك حديث موسى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
کیا موسیٰ (علیہ السلام) کی خبر تمہیں پہنچی ہے؟۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
بھلا تم کو موسیٰ کی حکایت پہنچی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
کیا تیرے پاس موسیٰ کی بات پہنچی ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
تفسیر آیت نمبر 15,16,17,18,19,20,21,22,23,24,25,26

16
إِذْ نَادَاهُ رَبُّهُ بِالْوَادِ الْمُقَدَّسِ طُوًى (16)
إذ ناداه ربه بالواد المقدس طوى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
جب کہ انہیں ان کے رب نے پاک میدان طویٰ میں پکارا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
جب اُن کے پروردگار نے ان کو پاک میدان (یعنی) طویٰ میں پکارا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
جب اس کے رب نے اسے مقدس وادی طویٰ میں پکارا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

17
اذْهَبْ إِلَى فِرْعَوْنَ إِنَّهُ طَغَى (17)
اذهب إلى فرعون إنه طغى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
(کہ) تم فرعون کے پاس جاؤ اس نے سرکشی اختیار کر لی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
(اور حکم دیا) کہ فرعون کے پاس جاؤ وہ سرکش ہو رہا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
فرعون کے پاس جا ، یقینا وہ حد سے بڑھ گیا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

18
فَقُلْ هَلْ لَكَ إِلَى أَنْ تَزَكَّى (18)
فقل هل لك إلى أن تزكى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اس سے کہو کہ کیا تو اپنی درستگی اور اصلاح چاہتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور (اس سے) کہو کہ کیا تو چاہتا ہے کہ پاک ہو جائے؟۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پس کہہ کیا تجھے اس بات کی کوئی رغبت ہے کہ تو پاک ہو جائے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

19
وَأَهْدِيَكَ إِلَى رَبِّكَ فَتَخْشَى (19)
وأهديك إلى ربك فتخشى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اور یہ کہ میں تجھے تیرے رب کی راه دکھاؤں تاکہ تو (اس سے) ڈرنے لگے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور میں تجھے تیرے پروردگار کا رستہ بتاؤں تاکہ تجھ کو خوف (پیدا) ہو۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور میں تیرے رب کی طرف تیری راہ نمائی کروں، پس تو ڈر جائے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

20
فَأَرَاهُ الْآيَةَ الْكُبْرَى (20)
فأراه الآية الكبرى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
پس اسے بڑی نشانی دکھائی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
غرض انہوں نے اس کو بڑی نشانی دکھائی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
چنانچہ اس نے اسے بہت بڑی نشانی دکھائی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

21
فَكَذَّبَ وَعَصَى (21)
فكذب وعصى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
تو اس نے جھٹلایا اور نافرمانی کی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
مگر اس نے جھٹلایا اور نہ مانا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
تو اس نے جھٹلا دیا اور نافرمانی کی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

22
ثُمَّ أَدْبَرَ يَسْعَى (22)
ثم أدبر يسعى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
پھر پلٹا دوڑ دھوپ کرتے ہوئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
پھر لوٹ گیا اور تدبیریں کرنے لگا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پھر واپس پلٹا ، دوڑ بھاگ کرتا تھا ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

23
فَحَشَرَ فَنَادَى (23)
فحشر فنادى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
پھر سب کو جمع کرکے پکارا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور (لوگوں کو) اکٹھا کیا اور پکارا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پھر اس نے اکٹھا کیا، پس پکارا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

24
فَقَالَ أَنَا رَبُّكُمُ الْأَعْلَى (24)
فقال أنا ربكم الأعلى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
تم سب کا رب میں ہی ہوں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
کہنے لگا کہ تمہارا سب سے بڑا مالک میں ہوں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پس اس نے کہا میں تمھارا سب سے اونچا رب ہوں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

25
فَأَخَذَهُ اللَّهُ نَكَالَ الْآخِرَةِ وَالْأُولَى (25)
فأخذه الله نكال الآخرة والأولى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
تو (سب سے بلند وباﻻ) اللہ نے بھی اسے آخرت کے اور دنیا کے عذاب میں گرفتار کرلیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
تو خدا نے اس کو دنیا اور آخرت (دونوں) کے عذاب میں پکڑ لیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
تو اللہ نے اسے آخرت اور دنیا کے عذاب میں پکڑ لیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

26
إِنَّ فِي ذَلِكَ لَعِبْرَةً لِمَنْ يَخْشَى (26)
إن في ذلك لعبرة لمن يخشى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
بیشک اس میں اس شخص کے لئے عبرت ہے جو ڈرے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
جو شخص (خدا سے) ڈر رکھتا ہے اس کے لیے اس (قصے) میں عبرت ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
بے شک اس میں اس شخص کے لیے یقینا بڑی عبرت ہے جو ڈرتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

27
أَأَنْتُمْ أَشَدُّ خَلْقًا أَمِ السَّمَاءُ بَنَاهَا (27)
أأنتم أشد خلقا أم السماء بناها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
کیا تمہارا پیدا کرنا زیاده دشوار ہے یا آسمان کا؟ اللہ تعالیٰ نے اسے بنایا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
بھلا تمہارا بنانا آسان ہے یا آسمان کا؟ اسی نے اس کو بنایا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
کیا پیدا کرنے میں تم زیادہ مشکل ہو یا آسمان؟ اس نے اسے بنایا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
تفسیر آیت نمبر 27,28,29,30,31,32,33

28
رَفَعَ سَمْكَهَا فَسَوَّاهَا (28)
رفع سمكها فسواها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اس کی بلندی اونچی کی پھر اسے ٹھیک ٹھاک کر دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اس کی چھت کو اونچا کیا اور پھر اسے برابر کر دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اس کی چھت کو بلند کیا، پھر اسے برابر کیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

29
وَأَغْطَشَ لَيْلَهَا وَأَخْرَجَ ضُحَاهَا (29)
وأغطش ليلها وأخرج ضحاها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اسکی رات کو تاریک بنایا اور اس کے دن کو نکالا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور اسی نے رات کو تاریک بنایا اور (دن کو) دھوپ نکالی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور اس کی رات کو تاریک کر دیا اور اس کے دن کی روشنی کو ظاہر کر دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

30
وَالْأَرْضَ بَعْدَ ذَلِكَ دَحَاهَا (30)
والأرض بعد ذلك دحاها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اور اس کے بعد زمین کو (ہموار) بچھا دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور اس کے بعد زمین کو پھیلا دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور زمین، اس کے بعد اسے بچھا دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

31
أَخْرَجَ مِنْهَا مَاءَهَا وَمَرْعَاهَا (31)
أخرج منها ماءها ومرعاها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اس میں سے پانی اور چاره نکالا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اسی نے اس میں سے اس کا پانی نکالا اور چارا اگایا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اس سے اس کا پانی اور اس کا چارا نکالا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

32
وَالْجِبَالَ أَرْسَاهَا (32)
والجبال أرساها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اور پہاڑوں کو (مضبوط) گاڑ دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور اس پر پہاڑوں کابوجھ رکھ دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور پہاڑ، اس نے انھیں گاڑ دیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

33
مَتَاعًا لَكُمْ وَلِأَنْعَامِكُمْ (33)
متاعا لكم ولأنعامكم۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
یہ سب تمہارے اور تمہارے جانوروں کے فائدے کے لئے (ہیں)۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
یہ سب کچھ تمہارے اور تمہارے چارپایوں کے فائدے کے لیے (کیا)۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
تمھاری اور تمھارے چوپاؤں کی زندگی کے سامان کے لیے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

34
فَإِذَا جَاءَتِ الطَّامَّةُ الْكُبْرَى (34)
فإذا جاءت الطامة الكبرى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
پس جب وه بڑی آفت (قیامت) آجائے گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
تو جب بڑی آفت آئے گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پھر جب وہ ہر چیز پر چھاجانے والی سب سے بڑی مصیبت آجائے گی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
تفسیر آیت نمبر 34,35,36,37

35
يَوْمَ يَتَذَكَّرُ الْإِنْسَانُ مَا سَعَى (35)
يوم يتذكر الإنسان ما سعى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
جس دن کہ انسان اپنے کیے ہوئے کاموں کو یاد کرے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اس دن انسان اپنے کاموں کو یاد کرے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
جس دن انسان یاد کرے گا جو اس نے کوشش کی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

36
وَبُرِّزَتِ الْجَحِيمُ لِمَنْ يَرَى (36)
وبرزت الجحيم لمن يرى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اور (ہر) دیکھنے والے کے سامنے جہنم ﻇاہر کی جائے گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور دوزخ دیکھنے والے کے سامنے نکال کر رکھ دی جائے گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور جہنم (ہر) اس شخص کے لیے ظاہر کردی جائے گی جو دیکھتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

37
فَأَمَّا مَنْ طَغَى (37)
فأما من طغى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
تو جس (شخص) نے سرکشی کی (ہوگی)۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
تو جس نے سرکشی کی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
پس لیکن جو حد سے بڑھ گیا ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

38
وَآثَرَ الْحَيَاةَ الدُّنْيَا (38)
وآثر الحياة الدنيا۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اور دنیوی زندگی کو ترجیح دی (ہوگی)۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور دنیا کی زندگی کو مقدم سمجھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور اس نے دنیا کی زندگی کو ترجیح دی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
تفسیر آیت نمبر 38,39,40,41,42,43,44,45,46

39
فَإِنَّ الْجَحِيمَ هِيَ الْمَأْوَى (39)
فإن الجحيم هي المأوى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اس کا ٹھکانا جہنم ہی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اس کا ٹھکانہ دوزخ ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
توبے شک جہنم ہی (اس کا) ٹھکانا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

40
وَأَمَّا مَنْ خَافَ مَقَامَ رَبِّهِ وَنَهَى النَّفْسَ عَنِ الْهَوَى (40)
وأما من خاف مقام ربه ونهى النفس عن الهوى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
ہاں جو شخص اپنے رب کے سامنے کھڑے ہونے سے ڈرتا رہا ہوگا اور اپنے نفس کو خواہش سے روکا ہوگا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اور جو اپنے پروردگار کے سامنے کھڑے ہونے سے ڈرتا اور جی کو خواہشوں سے روکتا رہا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اور رہا وہ جو اپنے رب کے سامنے کھڑا ہونے سے ڈر گیا اور اس نے نفس کو خواہش سے روک لیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

41
فَإِنَّ الْجَنَّةَ هِيَ الْمَأْوَى (41)
فإن الجنة هي المأوى۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
تو اس کا ٹھکانا جنت ہی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اس کا ٹھکانہ بہشت ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
تو بے شک جنت ہی (اس کا) ٹھکانا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

42
يَسْأَلُونَكَ عَنِ السَّاعَةِ أَيَّانَ مُرْسَاهَا (42)
يسألونك عن الساعة أيان مرساها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
لوگ آپ سے قیامت کے واقع ہونے کا وقت دریافت کرتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
(اے پیغمبر، لوگ) تم سے قیامت کے بارے میں پوچھتے ہیں کہ اس کا وقوع کب ہو گا؟۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
وہ تجھ سے قیامت کے متعلق پوچھتے ہیں کہ اس کا قیام کب ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

43
فِيمَ أَنْتَ مِنْ ذِكْرَاهَا (43)
فيم أنت من ذكراها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
آپ کو اس کے بیان کرنے سے کیا تعلق؟۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
سو تم اس کے ذکر سے کس فکر میں ہو۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
اس کے ذکر سے تو کس خیال میں ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

44
إِلَى رَبِّكَ مُنْتَهَاهَا (44)
إلى ربك منتهاها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
اس کے علم کی انتہا تو اللہ کی جانب ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
اس کا منتہا (یعنی واقع ہونے کا وقت) تمہارے پروردگار ہی کو (معلوم ہے)۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
تیرے رب ہی کی طرف اس (کے علم) کی انتہا ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

45
إِنَّمَا أَنْتَ مُنْذِرُ مَنْ يَخْشَاهَا (45)
إنما أنت منذر من يخشاها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
آپ تو صرف اس سے ڈرتے رہنے والوں کو آگاه کرنے والے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
جو شخص اس سے ڈر رکھتا ہے تم تو اسی کو ڈر سنانے والے ہو۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
توُ تو صرف اسے ڈرانے والا ہے جو اس سے ڈرتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔

46
كَأَنَّهُمْ يَوْمَ يَرَوْنَهَا لَمْ يَلْبَثُوا إِلَّا عَشِيَّةً أَوْ ضُحَاهَا (46)
كأنهم يوم يرونها لم يلبثوا إلا عشية أو ضحاها۔
[اردو ترجمہ محمد جونا گڑھی]
جس روز یہ اسے دیکھ لیں گے تو ایسا معلوم ہوگا کہ صرف دن کا آخری حصہ یا اول حصہ ہی (دنیا میں) رہے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ فتح محمد جالندھری]
جب وہ اس کو دیکھیں گے (تو ایسا خیال کریں گے) کہ گویا (دنیا میں صرف) ایک شام یا صبح رہے تھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[اردو ترجمہ عبدالسلام بن محمد]
گویا وہ جس دن اسے دیکھیں گے وہ (دنیا میں) نہیں ٹھہرے، مگر دن کا ایک پچھلا حصہ، یا اس کا پہلا حصہ ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تفسیر ابن کثیر
اس آیت کی تفسیر پچھلی آیت کے ساتھ کی گئی ہے۔