الحمدللہ! انگلش میں کتب الستہ سرچ کی سہولت کے ساتھ پیش کر دی گئی ہے۔

 
صحيح مسلم کل احادیث 3033 :ترقیم فواد عبدالباقی
صحيح مسلم کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح مسلم
مسافروں کی نماز اور قصر کے احکام
The Book of Prayer - Travellers
29. باب اسْتِحْبَابِ صَلاَةِ النَّافِلَةِ فِي بَيْتِهِ وَجَوَازِهَا فِي الْمَسْجِدِ:
29. باب: نفل نماز کا گھر میں مستحب اور مسجد میں جائز ہونا۔
Chapter: It is recommended to offer voluntary prayers in one’s house although it is permissible to offer them in the masjid
حدیث نمبر: 1823
Save to word اعراب
حدثنا عبد الله بن براد الاشعري ، ومحمد بن العلاء ، قالا: حدثنا ابو اسامة ، عن بريد ، عن ابي بردة ، عن ابي موسى ، عن النبي صلى الله عليه وسلم، قال: " مثل البيت الذي يذكر الله فيه، والبيت الذي لا يذكر الله فيه، مثل الحي والميت ".حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ بَرَّادٍ الأَشْعَرِيُّ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ الْعَلَاءِ ، قَالَا: حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ ، عَنْ بُرَيْدٍ ، عَنْ أَبِي بُرْدَةَ ، عَنْ أَبِي مُوسَى ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، قَالَ: " مَثَلُ الْبَيْتِ الَّذِي يُذْكَرُ اللَّهُ فِيهِ، وَالْبَيْتِ الَّذِي لَا يُذْكَرُ اللَّهُ فِيهِ، مَثَلُ الْحَيِّ وَالْمَيِّتِ ".
حضرت ابو موسیٰ رضی اللہ عنہ نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے روایت کی کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "اس گھر کی مثال جس میں اللہ کا ذکر کیا جا تا ہے اور اس گھر کی مثال جس میں اللہ کو یاد نہیں کیا جا تا زندہ اور مردہ جیسی ہے۔"
حضرت ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان کرتے ہیں، کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فر یا: اس گھر کی مثال جس میں اللہ کا ذکر کیا جاتا ہے اور اس گھر کی مثال جس میں اللہ کو یاد نہیں کیا جا تا، زندہ اور مردہ کی سی ہے۔
ترقیم فوادعبدالباقی: 779

   صحيح البخاري6407عبد الله بن قيسمثل الذي يذكر ربه والذي لا يذكر ربه مثل الحي والميت
   صحيح مسلم1823عبد الله بن قيسمثل البيت الذي يذكر الله فيه والبيت الذي لا يذكر الله فيه مثل الحي والميت
صحیح مسلم کی حدیث نمبر 1823 کے فوائد و مسائل
  الشيخ الحديث مولانا عبدالعزيز علوي حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث ، صحيح مسلم: 1823  
حدیث حاشیہ:
فوائد ومسائل:
گھروں کی زندگی اللہ تعالیٰ کی یاد سے ہے اور اللہ تعالیٰ کی یاد کا اہم اور سب سے عظیم ذریعہ نماز ہے تو جس گھر کے مکین نمازی ہوں گے اور وہ گھر میں نماز پڑھیں گے ان کا گھر زندہ ہوگا اور وہ خود بھی زندہ ہوں گے،
لیکن جس گھر والے نماز نہیں پڑھتے وہ گھر بھی مردہ اور روحانی واخلاقی طور پر اس کے باسی بھی مردہ۔
زندگی ایمان سے ملتی ہے اور نماز ایمان کی علامت اور شناخت ہے۔
   تحفۃ المسلم شرح صحیح مسلم، حدیث/صفحہ نمبر: 1823   

تخریج الحدیث کے تحت دیگر کتب سے حدیث کے فوائد و مسائل
  مولانا داود راز رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري: 6407  
6407. حضرت ابو موسیٰ اشعری ؓ سے روایت ہے انہوں نے کہا کہ نبی ﷺ نے فرمایا: اس شخص کی مثال جو اپنے رب کا ذکر کرتا ہے اور وہ جو ذکر نہیں کرتا زندہ اور مردہ کی طرح ہے۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:6407]
حدیث حاشیہ:
اللہ کی یاد گویا نمود زندگی ہے اور اللہ کو بھول جانا گویا ظلمت موت ہے۔
بعض نے کہا اللہ کو یاد نہ کرنے والوں سے کچھ نفع نقصان نہیں پہنچتا۔
قرآن مجید میں اللہ کا ذکر کرنے سے متعلق بہت سی آیات ہیں ایک جگہ فرمایا۔
﴿یاایھا الذین آمنوا اذکروا اللہ ذکرا کثیرا﴾ (الأحزاب: 41)
اے ایمان والو! اللہ کو بکثرت یاد کیا کرو۔
ایک حدیث میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک صحابی کو فرمایا تھا کہ تیری زبان ہمیشہ اللہ کے ذکر سے تر رہنی چاہئے۔
کسی حال میں بھی اللہ کی یاد سے غافل نہ ہونا یہ اللہ والوں کی شان ہے۔
نماز، روزہ، حج، زکوٰۃ، کلام، ذکر، اذکار سب کا خلاصہ یہی ذکر اللہ ہے جس کے کلمات تسبیح وتحمید وتکبیر وتہلیل بہترین ذرائع ہیں۔
تلاوت قرآن مجید ومطالعہ حدیث نبوی وکثرت درود شریف بھی سب ذکراللہ ہی کی صورتیں ہیں۔
سب سے بڑا ذکر یہ ہے کہ جملہ اوامر اور نواہی کے لئے اللہ کو یاد رکھے۔
اوامر کو بجا لائے نواہی سے پرہیز کر لے۔
ذاکرین کی مجلس کا یہ درجہ ہے کہ ذکراللہ کرنے والوں کے علاوہ آنے والا شخص گو ان میں شریک نہ ہو، کسی کام یا مطلب سے ان کے پاس آکر بیٹھ گیا ہو، تو ان کے ذکر کی برکت سے وہ بھی بخش دیا گیا۔
اس حدیث سے اہل اللہ اور ذاکرین اللہ کی بڑی فضیلت ثابت ہوئی کہ ان کے پاس بیٹھنے والا بھی گو کسی ضرورت سے گیا ہو ان کے فیض اور برکت سے محروم نہیں رہتا۔
اب افسوس ہے ان لوگوں پر جو پیغمبر رحمت کے ساتھ بیٹھنے والوں اور سفر وحضر میں آپ کے ساتھ رہنے والے صحابہ کرام کو بہشت سے محروم اور بدنصیب جانتے ہیں۔
یہ کم بخت خود ہی محروم ہوں گے۔
ایک بار کعب اسلمی خادم رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے، آپ نے فرمایا مانگ کیا مانگتا ہے؟ انہوں نے کہا جنت میں آپ کی رفاقت چاہتا ہوں۔
آپ نے فرمایا اور کچھ؟ انہوں نے کہا بس یہی۔
آپ نے فرمایا اچھا کثرت سجود سے میری مدد کر۔
(صحیح مسلم، کتاب الصلٰوة، باب کثرة السجود)
اللہ تعالیٰ ہرمسلمان کو یہ درجہ رفاقت عطا کرے۔
   صحیح بخاری شرح از مولانا داود راز، حدیث/صفحہ نمبر: 6407   

  الشيخ حافط عبدالستار الحماد حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري:6407  
6407. حضرت ابو موسیٰ اشعری ؓ سے روایت ہے انہوں نے کہا کہ نبی ﷺ نے فرمایا: اس شخص کی مثال جو اپنے رب کا ذکر کرتا ہے اور وہ جو ذکر نہیں کرتا زندہ اور مردہ کی طرح ہے۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:6407]
حدیث حاشیہ:
(1)
اس حدیث سے معلوم ہوا کہ اللہ تعالیٰ کو یاد کرنا گویا نمود زندگی ہے اور اللہ تعالیٰ کو بھول جانا گویا ظلم و موت ہے۔
اللہ تعالیٰ کو یاد نہ کرنے والے مردوں کی طرح ہیں جو کسی کو نفع یا نقصان نہیں پہنچا سکتے۔
قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ نے اہل ایمان کو حکم دیا ہے:
''اے ایمان والو! اللہ تعالیٰ کو بکثرت یاد کیا کرو۔
'' (الأحزاب: 41) (2)
تلاوت قرآن، مطالعہ حدیث اور کثرت سے درودوسلام سب اللہ تعالیٰ کے ذکر کی مختلف صورتیں ہیں۔
سب سے بڑا ذکر یہ ہے کہ انسان جملہ اوامر و نواہی میں اللہ کو یاد رکھے۔
اوامر کو بجا لائے اور نواہی سے پرہیز کرے۔
حضرت ابو الدرداء رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، انہوں نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
کیا میں تمہیں تمہارے بہترین عمل کے متعلق آگاہ نہ کروں جو تمہارے مالک کے ہاں اجر کے اعتبار سے زیادہ بڑھنے والا، تمہارے درجات کی بلندی کا باعث بننے والا، تمہارے لیے سونے اور چاندی کے خرچ کرنے سے بہتر اور تمہارے لیے دشمن سے ایسا جہاد کرنے سے اعلیٰ ہے جس میں تم ایک دوسرے کی گردنیں اڑاؤ؟۔
صحابۂ کرام رضی اللہ عنہم نے عرض کی:
کیوں نہیں؟ آپ ضرور آگاہ کریں۔
آپ نے فرمایا:
وہ اللہ کا ذکر ہے۔
(مسند أحمد: 195/5)
   هداية القاري شرح صحيح بخاري، اردو، حدیث/صفحہ نمبر: 6407   


http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.