صحيح البخاري کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح البخاري
کتاب: نکاح کے مسائل کا بیان
The Book of (The Wedlock)
72. بَابُ حَقِّ إِجَابَةِ الْوَلِيمَةِ وَالدَّعْوَةِ:
72. باب: ولیمہ کی دعوت اور ہر ایک دعوت کو قبول کرنا حق ہے۔
(72) Chapter. It is obligatory to accept the invitation to a Walima (wedding banquet) and other invitations.
حدیث نمبر: 5174
پی ڈی ایف بنائیں مکررات اعراب English
(مرفوع) حدثنا مسدد، حدثنا يحيى، عن سفيان، قال: حدثني منصور، عن ابي وائل، عن ابي موسى، عن النبي صلى الله عليه وسلم، قال:" فكوا العاني واجيبوا الداعي وعودوا المريض".(مرفوع) حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا يَحْيَى، عَنْ سُفْيَانَ، قَالَ: حَدَّثَنِي مَنْصُورٌ، عَنْ أَبِي وَائِلٍ، عَنْ أَبِي مُوسَى، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، قَالَ:" فُكُّوا الْعَانِيَ وَأَجِيبُوا الدَّاعِيَ وَعُودُوا الْمَرِيضَ".
ہم سے مسدد بن مسرہد نے بیان کیا، کہا ہم سے یحییٰ بن کثیر نے یبان کیا، ان سے سفیان ثوری نے، کہا کہ مجھ سے منصور نے بیان کیا، ان سے ابووائل نے اور ان سے ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ نے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ قیدی کو چھڑاؤ، دعوت کرنے والے کی دعوت قبول کرو اور بیمار کی عیادت کرو۔

Narrated Abu Musa: The Prophet said, "Set the captives free, accept the invitation (to a wedding banquet), and visit the patients."
USC-MSA web (English) Reference: Volume 7, Book 62, Number 103


   صحيح البخاري5373عبد الله بن قيسأطعموا الجائع وعودوا المريض وفكوا العاني
   صحيح البخاري3046عبد الله بن قيسفكوا العاني يعني الأسير وأطعموا الجائع وعودوا المريض
   صحيح البخاري5174عبد الله بن قيسفكوا العاني وأجيبوا الداعي وعودوا المريض
   صحيح البخاري7173عبد الله بن قيسفكوا العاني وأجيبوا الداعي
   صحيح البخاري5649عبد الله بن قيسأطعموا الجائع وعودوا المريض وفكوا العاني
   سنن أبي داود3105عبد الله بن قيسأطعموا الجائع وعودوا المريض وفكوا العاني

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  مولانا داود راز رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري: 5174  
5174. سیدنا ابو موسیٰ اشعری ؓ سے روایت ہے، وہ نبی ﷺ سے بیان کرتے ہیں کہ آپ نے فرمایا: قیدی کو رہائی دلاؤ۔ دعوت کرنے والے کی دعوت قبول کرو اور بیمار کی بیمار پرسی کرو۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:5174]
حدیث حاشیہ:
کوئی مسلمان ناحق قید و بند میں پھنس جائے تو اس کی آزادی کے لئے مال زکٰوۃ سے خرچ کیا جا سکتا ہے آج کل ایسے واقعات بکثرت ہوتے رہتے ہیں مگر مسلمانوں کو کوئی توجہ نہیں إلا ماشاءاللہ۔
دعوت قبول کرنا، بیمارکی عیادت کرنا یہ بھی افعال مسنونہ ہیں۔
   صحیح بخاری شرح از مولانا داود راز، حدیث\صفحہ نمبر: 5174   
  الشيخ حافط عبدالستار الحماد حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري:5174  
5174. سیدنا ابو موسیٰ اشعری ؓ سے روایت ہے، وہ نبی ﷺ سے بیان کرتے ہیں کہ آپ نے فرمایا: قیدی کو رہائی دلاؤ۔ دعوت کرنے والے کی دعوت قبول کرو اور بیمار کی بیمار پرسی کرو۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:5174]
حدیث حاشیہ:
(1)
اس حدیث میں لفظ "دعي" عام ہے جو ہر قسم کی دعوت کرنے والے کو شامل ہے، خواہ کوئی دعوت ولیمہ کرے یا کوئی اور دعوت، بہرحال دعوت قبول کرنا ضروری ہے کیونکہ اس حدیث میں بھی امر کا صیغہ آیا ہے جو وجوب پر دلالت کرتا ہے۔
(2)
جمہور اہل علم کا موقف ہے کہ ولیمے کی دعوت قبول کرنا واجب ہے کیونکہ اس میں اعلانِ نکاح کو تقویت ملتی ہے لیکن دوسری دعوتیں قبول کرنا مستحب ہے۔
واضح رہے کہ جس قسم کی بھی دعوت ہو دعوت کرنے والے کی حوصلہ افزائی کرنی چاہیے۔
اگر کوئی رکاوٹ نہ ہو تو ضرور شرکت کرنی چاہیے۔
والله اعلم
   هداية القاري شرح صحيح بخاري، اردو، حدیث\صفحہ نمبر: 5174   

http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.