سنن ابن ماجه کل احادیث 4341 :حدیث نمبر
سنن ابن ماجه
کتاب: طہارت اور اس کے احکام و مسائل
The Book of Purification and its Sunnah
38. بَابُ : الْوُضُوءِ بِمَاءِ الْبَحْرِ
38. باب: سمندر کے پانی سے وضو کا بیان۔
حدیث نمبر: 386
پی ڈی ایف بنائیں مکررات اعراب
(مرفوع) حدثنا هشام بن عمار ، حدثنا مالك بن انس ، حدثني صفوان بن سليم ، عن سعيد بن سلمة هو من آل ابن الازرق، ان المغيرة بن ابي بردة وهو من بني عبد الدار، حدثه انه سمع ابا هريرة ، يقول:" جاء رجل إلى رسول الله صلى الله عليه وسلم، فقال: يا رسول الله، إنا نركب البحر، ونحمل معنا القليل من الماء، فإن توضانا به عطشنا، افنتوضا من ماء البحر؟ فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم:" هو الطهور ماؤه الحل ميتته".
(مرفوع) حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ ، حَدَّثَنَا مَالِكُ بْنُ أَنَسٍ ، حَدَّثَنِي صَفْوَانُ بْنُ سُلَيْمٍ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ سَلَمَةَ هُوَ مِنْ آلِ ابْنِ الْأَزْرَقِ، أَنَّ الْمُغِيرَةَ بْنَ أَبِي بُرْدَةَ وَهُوَ مِنْ بَنِي عَبْدِ الدَّار، حَدَّثَهُ أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا هُرَيْرَةَ ، يَقُولُ:" جَاءَ رَجُلٌ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، فَقَالَ: يَا رَسُولَ اللَّهِ، إِنَّا نَرْكَبُ الْبَحْرَ، وَنَحْمِلُ مَعَنَا الْقَلِيلَ مِنَ الْمَاءِ، فَإِنْ تَوَضَّأْنَا بِهِ عَطِشْنَا، أَفَنَتَوَضَّأُ مِنْ مَاءِ الْبَحْرِ؟ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:" هُوَ الطَّهُورُ مَاؤُهُ الْحِلُّ مَيْتَتُهُ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ایک آدمی نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا اور عرض کیا: اللہ کے رسول! ہم سمندری سفر کرتے ہیں اور اپنے ساتھ تھوڑا سا پانی رکھتے ہیں، اگر ہم اس پانی سے وضو کریں تو پیاسے رہ جائیں، کیا ہم سمندر کے پانی سے وضو کر لیا کریں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس کا پانی بذات خود پاک ہے، اور دوسرے کو پاک کرنے والا ہے، اس کا مردار حلال ہے ۱؎۔

تخریج الحدیث: «سنن ابی داود/الطہارة 41 (83)، سنن الترمذی/الطہارة 52 (69)، سنن النسائی/الطہارة 47 (59)، (تحفة الأشراف: 14618)، وقد أخرجہ: موطا امام مالک/الطہارة 3 (12)، مسند احمد (2/237، 36، 378)، سنن الدارمی/الطہارة 53 (755) (صحیح)» ‏‏‏‏

وضاحت:
۱؎: سمندر کا مردار حلال ہے: اس سے مراد حلال جانور ہیں جو کسی صدمہ سے مر گئے اور سمندر نے ان کو ساحل پر ڈال دیا، اسی کو آیت  «أحل لكم صيد البحر وطعامه» (سورة المائدة: 96) میں «طَعام» سے تعبیر کیا گیا ہے، یاد رہے سمندری جانور وہ ہے جو خشکی پر زندہ نہ رہ سکے جیسے مچھلی، تو مچھلی تمام اقسام کی حلال ہیں، رہے دیگر جانور اگر مضر اور خبیث ہیں یا ان کے بارے میں نص شرعی وارد ہے تو حرام ہیں، اگر کسی جانور کا نص شرعی سے رسول اللہ ﷺ اور صحابہ کرام کا کھانا مروی ہے، اور وہ ان کے زمانے میں موجود تھا، تو اس کے بارے میں شک و شبہ کی گنجائش نہیں۔

It was narrated that Mughirah bin Abu Burdah, who was from the tribe of Banu 'Abdud-Dar, said that: He heard Abu Hurairah say: "A man came to the Messenger of Allah and said: "O Messenger of Allah, we travel by sea and carry a small amount of water with us. If we use it for ablution, we will become thirsty. Can we perform ablution with seawater?' The Messenger of Allah said: 'Its water is a means of purification, ad its dead meat is permissible. (i.e. the fish found dead in the sea).'"
USC-MSA web (English) Reference: 0


قال الشيخ الألباني: صحيح

قال الشيخ زبير على زئي: إسناده صحيح

   جامع الترمذي69عبد الرحمن بن صخرالطهور ماؤه الحل ميتته
   سنن أبي داود83عبد الرحمن بن صخرالطهور ماؤه الحل ميتته
   سنن النسائى الصغرى59عبد الرحمن بن صخرالطهور ماؤه الحل ميتته
   سنن النسائى الصغرى4355عبد الرحمن بن صخرالطهور ماؤه الحلال ميتته
   سنن النسائى الصغرى333عبد الرحمن بن صخرالطهور ماؤه الحل ميتته
   سنن ابن ماجه386عبد الرحمن بن صخرالطهور ماؤه الحل ميتته
   سنن ابن ماجه3246عبد الرحمن بن صخرالبحر الطهور ماؤه الحل ميتته
   بلوغ المرام1عبد الرحمن بن صخرهو الطهور ماؤه الحل ميتته

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  علامه صفي الرحمن مبارك پوري رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث بلوغ المرام 83  
´سمندر کا پانی`
«. . . قال رسول الله صلى الله عليه وآله وسلم في البحر: ‏‏‏‏هو الطهور ماؤه الحل ميتته . . .»
. . . رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سمندر کے پانی کے متعلق فرمایا کہ اس کا پانی پاک ہے اور اس کا مردار حلال ہے. . . [بلوغ المرام/كتاب الطهارة: 1]

لغوی تشریح:
«كِتَابُ الطَّهَارَةِ» کتاب، کتب سے مشتق ہے جس کے معنی جمع کرنے اور ملانے کے ہیں اور مصنفین کے نزدیک کتاب ان مسائل کے مجموعے کو کہتے ہیں جو مستقل حیثیت کے حامل ہوں چاہے وہ کئی انواع، یعنی مختلف ابواب پر مشتمل ہوں یا نہ ہوں۔ اور طہارت، پلیدی یا ناپاکی کے ازالے کو کہتے ہیں۔

«بَابُ الْمِيَاهِ» ایک ہی مسئلہ یا ایک ہی نوع سے متعلق مستقل حیثیت کے حامل مسائل کو باب سے تعبیر کرتے ہیں۔ اور «مِيَاهِ: ماء» کی جمع ہے۔ اس کی تصغیر «مُوَیْه» آتی ہے۔ بدوی عربوں نے اس کی صورت بگاڑ کر «مُویَه» کر دی ہے۔ (مصنف) اس کو جمع اس بنا پر لائے ہیں کہ اس باب میں کنوئیں، دریا، سمندر، چشمے اور باران رحمت کے پانی کا ذکر کریں گے۔

«عن ابي هريرةَ» یہ جار مجرور محذوف کے متعلق ہیں جو «رُوِيَ» یا «مَروِيٌ» وغیرہ ہو سکتا ہے اور «فِي البَحرِ» کا مطلب ہے: دریا و سمندر کا کیا حکم ہے۔
«الطَّهُورُ» طا پر فتحہ ہے اور اس سے وہ چیز مراد ہے جس کے ساتھ طہارت حاصل کی جاتی ہے اور یہ «مُطَھّر» (پاک کرنے والا) کے معنی میں ہو گا۔ دریا اور سمندر کا پانی بذات خود پاک بھی ہے اور پاک کرنے والا بھی ہے۔
«الْحِلُّ» حا کے کسرہ اور لام کی تشدید کے ساتھ ہے۔ اس کے معنی ہیں: حلال۔
«مَيْتَتُهُ» سے وہ جانور مراد ہیں جو پانی ہی میں زندہ رہ سکیں۔ یہ مطلق نہیں ہے اور اس سے وہ جانور مراد نہیں جو پانی کے باہر بھی زندہ رہ سکتے ہوں۔

فوائد ومسائل:
➊ یہ حدیث دراصل ایک سائل کے سوال کے جواب میں ارشاد فرمائی گئی ہے جسے امام مالک رحمہ اللہ وغیرہ نے یوں روایت کیا ہے کہ ایک آدمی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا: اے اللہ کے رسول! ہم سمندر میں سفر کرتے ہیں، ہمارے ساتھ تھوڑا بہت پانی ہوتا ہے، اگر ہم اس سے وضو کریں تو پیاسے رہ جاتے ہیں، تو کیا ہم سمندر کے پانی سے وضو کر سکتے ہیں؟ تو اس کے جواب میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: وہ پانی پاک ہے۔ [الموطأ، يحييٰ: 1، 22، و سنن ابي داؤد، الطهارة، باب الوضوء بماء البحر، حديث: 83]
➋ یہ حدیث اس بات کی دلیل ہے کہ سمندری پانی مطلقاً پاک ہے، اس میں کسی قسم کی تفصیل اور تقسیم نہیں ہے، نیز یہ کہ سمندری جانور بھی حلال ہیں، خواہ وہ کسی بھی شکل کے ہوں۔ امام مالک، امام شافعی اور امام احمد رحمہ اللہ علیہم کی یہی رائے ہے البتہ امام ابوحنیفہ رحمه الله سمندری جانوروں میں سے صرف مچھلی کو حلال سمجھتے ہیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے سائل کو سمندری پانی کی حلت کے ساتھ ساتھ بغیر سائل کے دریافت کیے، اس میں طبعی موت مرے ہوئے جانور کی حلت بھی مزید بتا دی، اس لیے کہ جو آدمی سمندری پانی کی حلت کے متعلق شک میں مبتلا ہو سکتا ہے تو وہ اس میں مرے ہوئے جانور کی حلت کے بارے میں اس سے کہیں زیادہ شک و شبہ میں پڑ سکتا ہے کہ سمندر میں سفر کرنے والا اس صورتحال میں مبتلا ہو سکتا ہے، لہٰذا نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا جواب حکمت ودانائی اور شفقت پر مبنی ہے۔
➌ یہ سائل کون تھا؟ اس کے بارے میں مختلف اقوال ہیں۔ بعض نے اس کا نام عبداللہ مدلجی رضی اللہ عنہ کہا ہے اور بعض نے عبد العرکی رضی اللہ عنہ کہا ہے اور یہ بھی کہا گیا ہے کہ وہ عبید العرکی رضی اللہ عنہ تھا اور عَرَكِي (عین اور را دونوں پر فتحہ ہے۔) «صیاد السمک» مچھلیاں پکڑنے والے کو کہتے ہیں، یعنی مچھیرا، پھر مچھلیاں پکڑنے کی مناسبت سے اس لفظ کا اطلاق ملاحوں، یعنی کشتی بانوں پر بھی کر دیا جاتا ہے اگرچہ ان کا اصل نام «عَرَك» نہیں ہے۔
➍ اس حدیث سے ثابت ہوا کہ سمندری پانی پاک ہے۔ اس سے وضو کرنا اور اسے (صاف کر کے) اپنے استعمال میں لانا صحیح ہے۔
➎ اسی طرح یہ بھی ثابت ہوا کہ جو جانور صرف سمندر کے ہیں (سمندر کے باہر زندہ نہیں رہ سکتے) وہ سب حلال ہیں، چاہے سمندر میں مر جائیں یا نکالنے کے بعد مر جائیں۔
➏ نیز سمندر میں سفر کرنا جائز ہے۔

راویٔ حدیث:
SR سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ:ER آپ وہ جلیل القدر صحابی رسول ہیں جن سے سب سے زیادہ احادیث نبویہ ہم تک پہنچی ہیں۔ صاحب الاستیعاب کی رائے کے مطابق ان کا نام عبداللہ یا عبدالرحمٰن تھا۔ قبیلہ دوس سے تھے۔ خیبر والے سال 6 ہجری میں مشرف بہ اسلام ہوئے اور ہر وقت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ رہے۔ 78 سال کی عمر پائی اور 59 ہجری میں اس دنیائے فانی سے کوچ کیا اور مدینہ منورہ کے بقیع الغرقد (جنت البقیع) نامی قبرستان میں دفن کیے گئے۔ سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے زمانہ خلافت میں مفتی کے فرائض انجام دیتے رہے اور مروان کی جانب سے مدینے کے گورنر بھی رہے۔ ان سے کم و بیش (5384) احادیث مروی ہیں اور ان سے احادیث بیان کرنے والوں کی تعداد (800) سے زائد ہے۔ «والله اعلم»
   بلوغ المرام شرح از صفی الرحمن مبارکپوری، حدیث\صفحہ نمبر: 1   
  الشيخ عمر فاروق سعيدي حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث سنن ابي داود 83  
´سمندر کا پانی پاک`
«. . . رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: هُوَ الطَّهُورُ مَاؤُهُ الْحِلُّ مَيْتَتُهُ . . .»
. . . رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس کا پانی بذات خود پاک اور دوسرے کو پاک کرنے والا ہے، اور اس کا مردار حلال ہے . . . [سنن ابي داود/كِتَاب الطَّهَارَةِ: 83]
فوائد و مسائل:
➊ سمندر، دریا اور نہر کا پانی خود پاک ہوتا ہے اور پاک کرنے والا بھی، تو اس سے پینا، نہانا اور دھونا سب جائز ہے۔ اگر کہیں نجاست پڑی ہو تو وہ جگہ چھوڑ دی جائے۔
➋ مچھلی کو ذبح کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی، وہ بغیر شکار اپنی موت مر گئی ہو تو بھی حلال ہے اور پانی پاک رہتا ہے اور مچھلی کی تمام انواع اس میں شامل ہیں۔
   سنن ابی داود شرح از الشیخ عمر فاروق سعدی، حدیث\صفحہ نمبر: 83   
  فوائد ومسائل از الشيخ حافظ محمد امين حفظ الله سنن نسائي تحت الحديث 59  
´سمندر کے پانی کا بیان۔`
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ایک آدمی نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا اور عرض کیا: اللہ کے رسول! ہم سمندر میں سفر کرتے ہیں اور اپنے ساتھ تھوڑا پانی لے جاتے ہیں، اگر ہم اس سے وضو کر لیں تو پیاسے رہ جائیں، تو کیا ہم سمندر کے پانی سے وضو کر لیں؟ تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس کا پانی پاک کرنے والا ہے، اور اس کا مردار حلال ہے ۱؎۔ [سنن نسائي/ذكر الفطرة/حدیث: 59]
59۔ اردو حاشیہ:
➊ سوال کا سبب یہ تھا کہ سمندری پانی سخت نمکین ہوتا ہے اور اس میں سمندری جانور اور مسافر مرتے رہتے ہیں۔ ان کی گندگی بھی وہیں رہتی ہے۔ ہو سکتا ہے کہ شرعاً ناقابل استعمال ہو، مگر نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے وضاحت فرما دی کہ ان سب کے باوجود سمندری پانی پاک ہے اور دوسری چیزوں کو بھی پاک کرنے کی اہلیت رکھتا ہے کیونکہ یہ ماء کثیر ہے، نیز اللہ تعالیٰ نے اس پانی میں ایسے اجزاء شامل فرمائے ہیں کہ اس پانی میں گندگی کرنے کے باوجود تعفن پیدا نہیں ہوتا۔ رنگ، بو اور ذائقہ بھی نہیں بدلتا۔
«الْحِلُّ مَيْتَتُهُ» یعنی سمندری جانور، جو سمندر میں مر جائیں، حلال ہیں۔ اس جملے کا ایک فائدہ تو یہ ہے کہ چونکہ سمندری جانور حلال ہیں (مرنے کے بعد بھی) لہٰذا ان کی موت سے پانی پلید نہیں ہوتا۔ دوسرا فائدہ یہ ہے کہ ایک مزید حکم معلوم ہو گیا کہ اگر دوران سفر میں کھانے کے لیے ایسا جانور مل جائے تو اسے بلاتردد کھایا جا سکتا ہے۔ یہ بحث کہ اس «میتہ» مردار سے صرف مچھلی مراد ہے یا ہر سمندری جانور، اپنے مقام پر آگے آئے گی۔ ان شاء اللہ۔
➌ سوال کرنے والے آدمی کا نام عبداللہ مدلجی تھا۔ تفصیل کے لیے دیکھیے: [عون المعبود: 152/1، حدیث: 83]
   سنن نسائی ترجمہ و فوائد از الشیخ حافظ محمد امین حفظ اللہ، حدیث\صفحہ نمبر: 59   
  فوائد ومسائل از الشيخ حافظ محمد امين حفظ الله سنن نسائي تحت الحديث 333  
´سمندر کے پانی سے وضو کرنے کا بیان۔`
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ایک آدمی نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا کہ اللہ کے رسول! ہم سمندری سفر کرتے ہیں، اور اپنے ساتھ تھوڑا پانی لے جاتے ہیں، اگر ہم اس سے وضو کر لیں تو ہم پیاسے رہ جائیں گے، کیا ہم سمندر کے پانی سے وضو کر لیا کریں؟ تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس کا پانی پاک کرنے والا، اور مردار حلال ہے ۱؎۔ [سنن نسائي/كتاب المياه/حدیث: 333]
333۔ اردو حاشیہ: دیکھیے سنن نسائی حدیث: 59 اور اس کے فوائد و مسائل۔
   سنن نسائی ترجمہ و فوائد از الشیخ حافظ محمد امین حفظ اللہ، حدیث\صفحہ نمبر: 333   
  حافظ عمران ايوب لاهوري حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث بلوغ المرام 1  
«كتاب الطهارة»
طہارت کے مسائل

لفظ «كتاب» کی لغوی وضاحت:
لفظ «كتاب»، جمع کرنا، ملانا، جس میں لکھا جائے، صحیفہ، فرض اور حکم کے معانی میں مستعمل ہے اور باب «كتب يكتب» (نصر) کا مصدر ہے۔
اصطلاحی تعریف:
کتاب مستقل حیثیت کے حامل مسائل کے مجموعے کو کہتے ہیں خواہ وہ کئی انواع (یعنی ابواب) پر مشتمل ہو یا نہ ہو۔ [القاموس المحيط ص /119] ۱؎
«الطهارة» لغوی وضاحت:
«الطهارة» پاکیزگی، صفائی ستھرائی، پاک ہونا، پاک کرنا سب اس کے معانی ہیں اور یہ باب «طهر يطهر» (نصر، کرم) کا مصدر ہے۔ لفظ «طهور» (طاء کے ضمہ کے ساتھ) پاک کرنا باب «طهر» سے مصدر ہے۔ اور لفظ «طهور» (طاء فتحہ کے ساتھ) پاک یا پاک کرنے والا بروزن فعول صفت مشبہ کا صیغہ ہے۔ «طهر» حالت حیض کے خلاف حالت کو کہتے ہیں۔ «تطهير» (تفعیل) کا معنی پاک کرنا ہے۔ [القاموس المحيط ص/ 289] ۲؎
اصطلاحی و شرعی تعریف:
(شافعی رحمہ اللہ، نووی رحمہ اللہ) حدث کو رفع کرنا اور نجاست کو زائل کرنا طہارت کہلاتا ہے۔ [المجموع 124/1] ۳؎
(حنابلہ، مالکیہ) طہارت ایسی حکمی صفت ہے جو اپنے موصوف کے ساتھ یا اس میں یا اس کے لیے نماز کے جواز کو ثابت کر دیتی ہے۔ [المغني 13/1] ۴؎
(حنفیہ) طہارت سے مراد نجاست سے پاکیزگی حاصل کرنا ہے خواہ نجاست حقیقی ہو (مثلاً گندگی و پاخانہ وغیرہ) یا حکمی ہو مثلا حدث و بےوضگی وغیرہ)۔ [الدر المختار 79/1] ۵؎
------------------
۱؎ [القاموس المحيط ص /119، الدرر 6/1، الصحاح 208/1، أنيس الفقهاء ص/45]
۲؎ [القاموس المحيط ص/ 289، الصحاح 227/2، المصباح المنير 579/2، الجواهر المضية 190/2]
۳؎ [المجموع 124/1، مغني المحتاج 16/1]
۴؎ [المغني 13/1، الشرح الكبير 30/1، الشرح الصغير 20/1]
۵؎ [اللباب شرح الكتاب 10/1، الدر المختار 79/1، الكليات لأبي البقاء ص /234، حدود أبن عرفة ص /12، المطلع للبعلي ص/5]
* * * * * * * * * * * * * *

«باب اقسام المياه»
پانیوں کی اقسام کا بیان

«باب» لغوی وضاحت:
جس میں ایک ہی نوع سے متعلقہ مسائل بیان کیے جائیں۔ [تحفة الأحوذي 19/1] ۱؎
«اقسام المياه» لغوی وضاحت:
لفظ «مياه» «مآء» (پانی) کی جمع ہے اس کے جنس ہونے کے باوجود اسے اختلاف انواع (مثلاً کوئیں کا پانی، سمندر کا پانی، چشمے کا پانی وغیرہ) پر دلالت کے لیے جمع لایا گیا ہے۔ [نيل الأوطار 43/1]
● ارشاد باری تعالیٰ ہے:
«وَأَنزَلْنَا مِنَ السَّمَاءِ مَاءً طَهُورًا» [25-الفرقان:48]
اور ہم نے آسمان سے پاک پانی نازل کیا۔
● ایک اور مقام پر ارشاد فرمایا:
«وَيُنَزِّلُ عَلَيْكُم مِّنَ السَّمَاءِ مَاءً لِّيُطَهِّرَكُم بِهِ» [8-الأنفال:11]
اور وہ تم پر آسمان سے پانی نازل کرتا ہے تاکہ اس کے ذریعے تمہیں پاک کرے۔
❀ حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
«الْمَاءُ طَهُورٌ لَا يُنَجِّسُهُ شَيْءٌ»
پانی پاک ہے، اسے کوئی چیز ناپاک نہیں کرتی۔ [أبوداود 66] ۲؎
❀ سمندر کے پانی کے متعلق آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
«هُوَ الطَّهُورُ مَاؤُهُ الْحِلُّ مَيْتَتُهُ»
اس کا پانی پاک ہے اور اس کا مردار حلال ہے۔ [أبوداود 83] ۳؎
● سادے پانی کے طاہرہ ومطہر ہونے پر اجماع ہے۔ [الفقه الإسلامي وأدلته 260/1]
------------------
۱؎ [تحفة الأحوذي 19/1 نيل الأوطار 43/1]
۲؎ [صحيح: صحيح أبو داود 60، كتاب الطهارة: باب ماجاء فى بئر بضاعة أبوداود 66، مسند شافعي 30،أبوداود طيالسي 292،أحمد 31/3، ترمذي 66، نسائي 1781، شرح معاني الآثار 11/1، دارقطني 29/1]
۳؎ [صحيح: صحيح أبو داود 76، كتاب الطهارة: باب الوضوء بماء البحر: أبو داود 83، موطا 22/1، ابن أبى شيبة 131/20، أحمد 361/2، دارمي 186/1، ترمذي 69، نسائي 176/1، ابن ماجة 386، ابن خزيمه 111، ابن حبان 119، الموارد ابن الحارود ص /20، دارقطني 36/1، حاكم 140/1، بيهقي 3/1، معرفة السنن والآثار 150/1]
   فقہ الحدیث، جلد اول، حدیث\صفحہ نمبر: 127   
  مولانا عطا الله ساجد حفظ الله، فوائد و مسائل، سنن ابن ماجه، تحت الحديث386  
´سمندر کے پانی سے وضو کا بیان۔`
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ایک آدمی نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا اور عرض کیا: اللہ کے رسول! ہم سمندری سفر کرتے ہیں اور اپنے ساتھ تھوڑا سا پانی رکھتے ہیں، اگر ہم اس پانی سے وضو کریں تو پیاسے رہ جائیں، کیا ہم سمندر کے پانی سے وضو کر لیا کریں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس کا پانی بذات خود پاک ہے، اور دوسرے کو پاک کرنے والا ہے، اس کا مردار حلال ہے ۱؎۔ [سنن ابن ماجه/كتاب الطهارة وسننها/حدیث: 386]
اردو حاشہ:
(1)
سوال کرنے والے صحابی کا نام طبرانی کی روایت میں عبداللہ مذکور ہے اور مسند احمد کی ایک روایت سے معلوم ہوتا ہے کہ ان کا تعلق قبیلہ بنو مدلج سے تھا۔ دیکھیے: (سبل السلام شرح بلوغ المرام: 1؍10)

(2)
سمندر کے پانی کا ذائقہ عام پانی سے مختلف ہوتا ہے۔
غالباً اسی وجہ سے صحابی کے ذہن میں اشکال پیدا ہوا۔
نبی اکرمﷺنے وضاحت فرما دی کہ سمندر کا پانی پاک بھی ہے اور پاک کرنے والا بھی، اس لیے اس کو وضو وغیرہ کے لیے استعمال کیا جاسکتا ہے
(3)
سمندر کے مرے ہوئے جانور سے مراد وہ جانور ہےجو پانی میں رہنے والا ہے۔
وہ جس طرح زندہ پکڑا جائے تو حلال ہوتا ہےاسی طرح اگر سمندر میں مرجائے یا سمندر سے باہر آکر مرجائے تو بھی حلال ہے۔
اسے خشکی کے جانور کی طرح ذبح کرنے کی ضرورت نہیں۔
اللہ تعالی کا ارشاد ہے:
﴿اُحِلَّ لَكُمْ صَيْدُالْبَحْرِ وَطَعَامُه﴾  (المائدة: 5؍96)
تمھارے لیے سمندر کا شکار اور اس کا کھانا حلال قرار دیا گیا ہے۔
البتہ خشکی میں رہنے والا جانور اگر پانی میں ڈوب کر مرجائے تو وہ حرام ہے کیونکہ وہ مردہ سمندری جانور نہیں بلکہ خشکی کا مردہ جانور ہے۔ دیکھیے: (صحيح البخاري، الذبائح والصيد، باب الصيد اذا غاب عنه يومين او ثلاثة، حديث: 5484)

(4)
صحابی نے صرف سمندر کے پانی کے بارے میں پوچھا تھا نبی ﷺ نے پانی کے ساتھ ساتھ سمندر کے جانور کے بارے میں بھی بتا دیا۔
اس سے معلوم ہوا کہ اگر عالم محسوس کرے کہ سائل کو کوئی دوسرا مسئلہ بتانے کی بھی ضرورت ہے جو اس نے نہیں پوچھا تو اس کے پوچھے ہوئے مسئلے کے ساتھ دوسرا مسئلہ بھی بتا دینا چاہیے۔

(5)
بعض جانور پانی میں بھی زندہ رہ سکتے ہیں اور خشکی میں بھی۔
کیا انھیں پانی کے جانوروں میں شمار کرنا چاہیے یا خشکی کے جانوروں میں؟ حدیث میں ان میں سے صرف مینڈک کا ذکر آتا ہے۔
اس کے بارے میں سنن ابن ماجہ میں ایک حدیث مروی ہے جس میں مینڈک کو قتل کرنے کی ممانعت ہے۔
اس حدیث کے بارے میں محمد فواد عبد الباقی نے کہا ہے:
(في الزوائد:
في اسناده ابراهيم بن الفضل المخزومي وهو ضعيف)

زوائد میں لکھا ہے کہ اس کی سند میں ابراہیم بن فضل مخزومی ہے اور وہ ضعیف ہے۔
لیکن علامہ ناصر الدین البانی رحمۃ اللہ علیہ نے اس حدیث کو صحیح سنن ابن ماجہ میں ذکر کیا ہے۔
ایک اور حدیث امام ابن حجر رحمۃ اللہ علیہ  نے بلوغ المرام میں ذکر کی ہے جس کا مفہوم یہ ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے طبیب کو دوا میں ڈالنے کے لیے مینڈک مارنے کی اجازت نہیں دی تھی۔
حافظ ابن حجر نے فرمایا:
اس حدیث کو امام احمد نے روایت کیا ہے امام حاکم نے اسے صحیح قرار دیا ہےامام ابو داؤد اور امام نسائی نے بھی اسے روایت کیا ہے۔ دیکھیے: (بلوغ المرام، كتاب الاطعمة، حديث: 13)
اس حدیث کی روشنی میں ایسے جانوروں سے پرہیز ہی صحیح معلوم ہوتا ہے جو پانی اور خشکی دونوں پر زندہ رہ سکتے ہیں۔
واللہ أعلم
   سنن ابن ماجہ شرح از مولانا عطا الله ساجد، حدیث\صفحہ نمبر: 386   
  الشیخ ڈاکٹر عبد الرحمٰن فریوائی حفظ اللہ، فوائد و مسائل، سنن ترمذی، تحت الحديث 69  
´سمندر کے پانی کے پاک ہونے کا بیان۔`
ابوہریرہ رضی الله عنہ کہتے ہیں کہ ایک آدمی نے رسول اللہ صلی الله علیہ وسلم سے عرض کیا: اللہ کے رسول! ہم سمندر کا سفر کرتے ہیں اور اپنے ساتھ تھوڑا پانی لے جاتے ہیں، اگر ہم اس سے وضو کر لیں تو پیاسے رہ جائیں گے، تو کیا ایسی صورت میں ہم سمندر کے پانی سے وضو کر سکتے ہیں؟ رسول اللہ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا: سمندر کا پانی پاک ۱؎ ہے، اور اس کا مردار حلال ہے ۲؎۔ [سنن ترمذي/كتاب الطهارة/حدیث: 69]
اردو حاشہ:
1؎:
یعنی طاہر (پاک) اور مُطَہِّر (پاک کرنے والا) دونوں ہے۔

2؎:
سمندر کے مردار سے مراد وہ سمندری اور دریائی جانور ہے جو صرف پانی ہی میں زندہ رہتا ہو،
نیز مردار کا لفظ عام ہے ہر طرح کے جانور جو پانی میں رہتے ہوں خواہ وہ کتے اور خنزیر کے شکل کے ہی کے کیوں نہ ہوں،
بعض علماء نے کہا ہے کہ اس سے مراد صرف مچھلی ہے،
کیونکہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ہے:
دو مردے حلال ہیں:
مچھلی اورٹڈی،
اور بعض علماء کہتے ہیں کہ خشکی میں جس حیوان کے نظیر و مثال جانور کھائے جاتے وہی سمندری مردار حلال ہے،
لیکن تحقیقی بات یہ ہے کہ سمندر کا ہر وہ جانور(زندہ یا مردہ) حلال ہے جو انسانی صحت کے لیے عمومی طور پر نقصان دہ نہ ہو،
اور نہ ہی خبیث قسم کا ہو جیسے کچھوا،
اور کیکڑا وغیرہ،
یہ دونوں اصول ضابطہ سمندری غیر سمندری ہر طرح کے جانور کے لیے ہیں۔
   سنن ترمذي مجلس علمي دار الدعوة، نئى دهلى، حدیث\صفحہ نمبر: 69   

http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.