صحيح البخاري کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح البخاري
کتاب: ذبیح اور شکار کے بیان میں
The Book of Slaughtering and Hunting
19. بَابُ ذَبِيحَةِ الْمَرْأَةِ وَالأَمَةِ:
19. باب: (مسلمان) عورت اور لونڈی کا ذبیحہ بھی جائز ہے۔
(19) Chapter. The animal slaughtered by a lady or a lady slave.
حدیث نمبر: 5505
پی ڈی ایف بنائیں مکررات اعراب English
حدثنا إسماعيل، قال: حدثني مالك، عن نافع، عن رجل من الانصار، عن معاذ بن سعد او سعد بن معاذ اخبره،" ان جارية لكعب بن مالك كانت ترعى غنما بسلع فاصيبت شاة منها، فادركتها فذبحتها بحجر فسئل النبي صلى الله عليه وسلم، فقال: كلوها".حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ، قَالَ: حَدَّثَنِي مَالِكٌ، عَنْ نَافِعٍ، عَنْ رَجُلٍ مِنَ الْأَنْصَارِ، عَنْ مُعَاذِ بْنِ سَعْدٍ أَوْ سَعْدِ بْنِ مُعَاذٍ أَخْبَرَهُ،" أَنَّ جَارِيَةً لِكَعْبِ بْنِ مَالِكٍ كَانَتْ تَرْعَى غَنَمًا بِسَلْعٍ فَأُصِيبَتْ شَاةٌ مِنْهَا، فَأَدْرَكَتْهَا فَذَبَحَتْهَا بِحَجَرٍ فَسُئِلَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، فَقَالَ: كُلُوهَا".
ہم سے اسماعیل نے بیان کیا، کہا کہ مجھ سے امام مالک نے بیان کیا، ان سے نافع نے، ان سے قبیلہ انصار کے ایک آدمی نے کہ معاذ بن سعد یا سعد بن معاذ نے انہیں خبر دی کہ کعب بن مالک رضی اللہ عنہ کی ایک لونڈی سلع پہاڑی پر بکریاں چرایا کرتی تھی۔ ریوڑ میں سے ایک بکری مرنے لگی تو اس نے اسے مرنے سے پہلے پتھر سے ذبح کر دیا پھر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے اس کے متعلق پوچھا گیا تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اسے کھاؤ۔

Narrated Mu`adh bin Sa`d or Sa`d bin Mu`adh: A slave girl belonging to Ka`b used to graze some sheep at Sl'a (mountain). Once one of her sheep was dying. She reached it (before it died) and slaughtered it with a stone. The Prophet was asked, and he said, "Eat it."
USC-MSA web (English) Reference: Volume 7, Book 67, Number 413

   صحيح البخاري5505معاذ بن سعدترعى غنما بسلع فأصيبت شاة منها فأدركتها فذبحتها بحجر فسئل النبي فقال كلوها
   موطا امام مالك رواية ابن القاسم344معاذ بن سعدلا باس بها، فكلوها

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  حافظ زبير على زئي رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث موطا امام مالك رواية ابن القاسم 344  
´ذبح کرنے کے لئے چھری ضروری نہیں ہے`
«. . . 265- مالك عن نافع عن رجل من الأنصار عن معاذ بن سعد أو عن سعد بن معاذ أن جارية لكعب بن مالك كانت ترعى غنما لها بسلع، فأصيبت شاة منها فذكتها بحجر، فسئل رسول الله صلى الله عليه وسلم عن ذلك، فقال: لا بأس بها، فكلوها. . . .»
. . . معاذ بن سعد یا سعد بن معاذ سے روایت ہے کہ سیدنا کعب بن مالک رضی اللہ عنہ کی ایک لونڈی سلع (کے مقام) پر بکریاں چرا رہی تھی پھر ان میں سے ایک بکری مصیبت کا شکار (زخمی یا بیمار) ہوئی تو اس نے وہاں پہنچ کر اسے پتھر کے ساتھ ذبح کر دیا، پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے اس کے بارے میں پوچھا: تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس میں کوئی حرج نہیں ہے، پس تم اسے کھاؤ . . . [موطا امام مالك رواية ابن القاسم: 344]

تخریج الحدیث: [وأخرجه البخاري 5505، من حديث مالك به رجل من الأنصار صحابي، ذكره ابن مندة وغيره فى الصحابة كما فى إرشاد القاري للقسطلاني 8/279، وقال ابن العجمي: وهو عبدالله بن كعب بن مالك التوضيح لمبهمات الجامع الصحيح، مخطوط مصور ص322، والحمدلله]
تفقه:
➊ عورت اگر اللہ کا نام لے حلال جانور یا پرندہ وغیرہ ذبح کرے تو اس کا ذبیحہ حلال ہے، جمہور کا یہ مسلک ہے۔ دیکھئے [التمهيد 128/16]
➋ ذبح کے لئے چھری کا ہونا ضروری نہیں بلکہ جس چیز سے بھی خون بہہ جائے تو وہ ذبیحہ حلال ہے۔
سیدنا رافع بن خدیج رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «ما أنهر الدّم وذكر اسم الله فكلوه ما لم يكن سنّ ولا ظفر۔» جو چیز خون بہا دے اور اللہ کا نام لیا جائے تو اسے کھالو بشرطیکہ دانت یا ناخن نہ ہو۔ [صحيح بخاري: 5543]
اس حدیث سے معلوم ہوا کہ اگر بسم اللہ پڑھ کر بندوق وغیرہ سے فائر کیا جائے تو شکار حلال ہے بشرطیکہ شکار کا خون بہہ چکا ہو۔
➌ اگر کسی کے پاس کوئی امانت ہو تو مصلیحت کی وجہ اور مالک کی عام اجازت سے لیکن ضرورت کے وقت خاص اجازت کے بغیر بھی اس میں تصرف کرسکتا ہے۔
➍ اگر کسی کے پاس کوئی امانت ہو اور وہ اس کی کوتاہی کے بغیر خود بخود ضائع ہوجائے تو اس کا اُس پر کوئی ہرجانہ نہیں ہے۔
   موطا امام مالک روایۃ ابن القاسم شرح از زبیر علی زئی، حدیث\صفحہ نمبر: 265