صحيح البخاري کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح البخاري
کتاب: علم کے بیان میں
The Book of Knowledge
42. بَابُ حِفْظِ الْعِلْمِ:
42. باب: علم کو محفوظ رکھنے کے بیان میں۔
(42) Chapter. (What is said regarding) the memorization of the (religious) knowledge.
حدیث نمبر: 119
پی ڈی ایف بنائیں مکررات اعراب English
(مرفوع) حدثنا احمد بن ابي بكر ابو مصعب، قال: حدثنا محمد بن إبراهيم بن دينار، عن ابن ابي ذئب، عن سعيد المقبري، عن ابي هريرة، قال: قلت:" يا رسول الله، إني اسمع منك حديثا كثيرا انساه، قال: ابسط رداءك فبسطته، قال: فغرف بيديه، ثم قال: ضمه، فضممته فما نسيت شيئا بعده"، حدثنا إبراهيم بن المنذر، قال: حدثنا ابن ابي فديك بهذا، او قال: غرف بيده فيه.(مرفوع) حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ أَبِي بَكْرٍ أَبُو مُصْعَبٍ، قَالَ: حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ بْنِ دِينَارٍ، عَنْ ابْنِ أَبِي ذِئْبٍ، عَنْ سَعِيدٍ الْمَقْبُرِيِّ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ: قُلْتُ:" يَا رَسُولَ اللَّهِ، إِنِّي أَسْمَعُ مِنْكَ حَدِيثًا كَثِيرًا أَنْسَاهُ، قَالَ: ابْسُطْ رِدَاءَكَ فَبَسَطْتُهُ، قَالَ: فَغَرَفَ بِيَدَيْهِ، ثُمَّ قَالَ: ضُمَّهُ، فَضَمَمْتُهُ فَمَا نَسِيتُ شَيْئًا بَعْدَهُ"، حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْمُنْذِرِ، قَالَ: حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي فُدَيْكٍ بِهَذَا، أَوْ قَالَ: غَرَفَ بِيَدِهِ فِيهِ.
ہم سے ابومصعب احمد بن ابی بکر نے بیان کیا، ان سے محمد بن ابراہیم بن دینار نے ابن ابی ذئب کے واسطے سے بیان کیا، وہ سعید المقبری سے، وہ ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ میں نے عرض کیا، یا رسول اللہ! میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے بہت باتیں سنتا ہوں، مگر بھول جاتا ہوں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اپنی چادر پھیلاؤ، میں نے اپنی چادر پھیلائی، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے دونوں ہاتھوں کی چلو بنائی اور (میری چادر میں ڈال دی) فرمایا کہ (چادر کو) لپیٹ لو۔ میں نے چادر کو (اپنے بدن پر) لپیٹ لیا، پھر (اس کے بعد) میں کوئی چیز نہیں بھولا۔ ہم سے ابراہیم بن المنذر نے بیان کیا، ان سے ابن ابی فدیک نے اسی طرح بیان کیا کہ (یوں) فرمایا کہ اپنے ہاتھ سے ایک چلو اس (چادر) میں ڈال دی۔


Hum se Abu Mus’ab Ahmed bin Abi Bakr ne bayan kiya, un se Muhammed bin Ibrahim bin Dinaar ne Ibn-e-Abi Zi’b ke waaste se bayan kiya, woh Sa’eed Al-Maqburi se, woh Abu Hurairah Radhiallahu Anhu se riwayat karte hain ke main ne arz kiya, ya RasoolAllah! Main Aap Sallallahu Alaihi Wasallam se bahut baatein sunta hun, magar bhool jaata hun. Aap Sallallahu Alaihi Wasallam ne farmaaya apni chaadar phailaao, main ne apni chaadar phailaayi, Aap Sallallahu Alaihi Wasallam ne apne dono haathon ki chullu banaayi aur (meri chaadar mein daal di) farmaaya ke (chaadar ko) lapait lo. Main ne chaadar ko (apne badan par) lapait liya, phir (us ke baad) main koi cheez nahi bhoola. Hum se Ibrahim bin Al-Munzir ne bayan kiya, un se Ibn-e-Abi Fudaik ne isi tarah bayan kiya ke (yun) farmaaya ke apne haath se ek chullu us (chaadar) main daal di.

Narrated Abu Huraira: I said to Allah's Apostle "I hear many narrations (Hadiths) from you but I forget them." Allah's Apostle said, "Spread your Rida' (garment)." I did accordingly and then he moved his hands as if filling them with something (and emptied them in my Rida') and then said, "Take and wrap this sheet over your body." I did it and after that I never forgot any thing. Narrated Ibrahim bin Al-Mundhir: Ibn Abi Fudaik narrated the same as above (Hadith...119) but added that the Prophet had moved his hands as if filling them with something and then he emptied them in the Rida' of Abu Huraira.
USC-MSA web (English) Reference: Volume 1, Book 3, Number 119


   صحيح البخاري2350عبد الرحمن بن صخرلن يبسط أحد منكم ثوبه حتى أقضي مقالتي هذه ثم يجمعه إلى صدره فينسى من مقالتي شيئا أبدا فبسطت نمرة ليس علي ثوب غيرها حتى قضى النبي مقالته ثم جمعتها إلى صدري فوالذي بعثه بالحق ما نسيت من مقالته تلك إلى يومي هذا والله لولا آيتان
   صحيح البخاري3648عبد الرحمن بن صخرابسط رداءك فبسطت فغرف بيده فيه ثم قال ضمه فضممته فما نسيت حديثا بعد
   صحيح البخاري7354عبد الرحمن بن صخرمن يبسط رداءه حتى أقضي مقالتي ثم يقبضه فلن ينسى شيئا سمعه مني فبسطت بردة كانت علي فوالذي بعثه بالحق ما نسيت شيئا سمعته منه
   صحيح البخاري119عبد الرحمن بن صخرابسط رداءك فبسطته قال فغرف بيديه ثم قال ضمه فضممته فما نسيت شيئا بعده
   صحيح مسلم6400عبد الرحمن بن صخرأيكم يبسط ثوبه فيأخذ من حديثي هذا ثم يجمعه إلى صدره فإنه لم ينس شيئا سمعه فبسطت بردة علي حتى فرغ من حديثه ثم جمعتها إلى صدري فما نسيت بعد ذلك اليوم شيئا حدثني به ولولا آيتان أنزلهما الله في كتابه ما حدثت شيئا أبدا إن الذين يكتمون ما أنزلنا من البينات واله
   صحيح مسلم6397عبد الرحمن بن صخرمن يبسط ثوبه فلن ينسى شيئا سمعه مني فبسطت ثوبي حتى قضى حديثه ثم ضممته إلي فما نسيت شيئا سمعته منه
   جامع الترمذي3835عبد الرحمن بن صخرابسط رداءك فبسطته فحدث حديثا كثيرا فما نسيت شيئا
   جامع الترمذي3834عبد الرحمن بن صخربسطت ثوبي عنده ثم أخذه فجمعه على قلبي فما نسيت بعده حديثا

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  مولانا داود راز رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري 119  
´ علم کو محفوظ رکھنے کے بیان میں `
«. . . عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ: قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ، إِنِّي أَسْمَعُ مِنْكَ حَدِيثًا كَثِيرًا أَنْسَاهُ، قَالَ: ابْسُطْ رِدَاءَكَ فَبَسَطْتُهُ، قَالَ: فَغَرَفَ بِيَدَيْهِ، ثُمَّ قَالَ: ضُمَّهُ، فَضَمَمْتُهُ فَمَا نَسِيتُ شَيْئًا بَعْدَهُ . . .»
. . . ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ میں نے عرض کیا، یا رسول اللہ! میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے بہت باتیں سنتا ہوں، مگر بھول جاتا ہوں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اپنی چادر پھیلاؤ، میں نے اپنی چادر پھیلائی، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے دونوں ہاتھوں کی چلو بنائی اور (میری چادر میں ڈال دی) فرمایا کہ (چادر کو) لپیٹ لو۔ میں نے چادر کو (اپنے بدن پر) لپیٹ لیا، پھر (اس کے بعد) میں کوئی چیز نہیں بھولا . . . [صحيح البخاري/كِتَاب الْعِلْمِ/بَابُ حِفْظِ الْعِلْمِ:: 119]

تشریح:
آپ کی اس دعا کا یہ اثر ہوا کہ بعد میں حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ حفظ حدیث کے میدان میں سب سے سبقت لے گئے اور اللہ نے ان کو دین اور دنیا ہر دو سے خوب ہی نوازا۔ چادر میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا چلو ڈالنا نیک فالی تھی۔
   صحیح بخاری شرح از مولانا داود راز، حدیث\صفحہ نمبر: 119   
  الشيخ حافط عبدالستار الحماد حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري:119  
119. حضرت ابوہریرہ ؓ سے روایت ہے، انہوں نے فرمایا: میں نے عرض کیا: یا رسول اللہ! میں آپ سے بہت سی حدیثیں سنتا ہوں لیکن بھول جاتا ہوں۔ آپ نے فرمایا: اپنی چادر پھیلاؤ۔ میں نے چادر پھیلائی تو آپ نے اپنے دونوں ہاتھوں سے چلو سا بنایا (اور چادر میں ڈال دیا)، پھر فرمایا: اسے اپنے اوپر لپیٹ لو۔ میں نے اسے لپیٹ لیا، اس کے بعد میں کوئی چیز نہیں بھولا۔ ابراہیم بن منذر نے بھی ابو فدیک کے طریق سے ابن ابی ذئب سے یہ روایت بیان کی ہے، البتہ اس میں غرف بيديه کی جگہ غرف بيديه فيه کے الفاظ ہیں۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:119]
حدیث حاشیہ:

امام بخاری رحمۃ اللہ علیہ نے اس باب میں حفاظت علم کی اہمیت اور اس کے اسباب کو بیان کیا ہے۔
انسان کو چاہیے کہ علم سیکھنے کے بعد اسے محفوظ رکھنے کی کوشش کرے کیونکہ علم کے ساتھ بے اعتنائی کفران نعمت ہے، نیز تعلیم و تبلیغ اور عمل بھی اسی بات پر موقوف ہے کہ معلومات کو محفوظ رکھا جائے۔
پہلی حدیث سے معلوم ہوتا ہے کہ انسان علم کے ساتھ جس قدر شغف اور مشغولیت رکھے گا، اسی قدر یادداشت تیز اور قوت حافظہ میں ترقی ہوگی، نیز دنیا کے تمام دھندوں سے الگ ہو کر علم حدیث کی خدمت میں مصروف ہوجائے۔
سیدنا راوی اسلام حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے بھی علم حدیث کے حصول کے لیے دنیا کی ہرآسائش کو قربان کردیا اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات ستودہ صفات سے وابستہ ہوگئے۔
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی صحبت اور رفاقت صرف ساڑھے تین سال تک رہی لیکن سماع حدیث میں کوئی دوسرا صحابی ان کا ہم پلہ نہیں ہے۔
آپ کو نہ تنخواہ کی ضرورت اور نہ وظیفے کی طلب، آپ کے میزبان خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تھے، پیٹ بھر کر کھانا مل جاتا اور علم حدیث کے حصول میں ہمہ وقت مصروف رہتے۔
امام بخاری رحمۃ اللہ علیہ نے اس باب میں حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی تین روایات پیش کی ہیں کیونکہ آپ کو تمام صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین سے زیادہ حدیثیں یاد تھیں۔
حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما جب ان کے جنازے میں شریک ہوئے تو ان کی اس خصوصیت کو بایں الفاظ بیان کیا:
ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ اہل اسلام کے لیے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث کو محفوظ رکھنے والے تھے۔
اگرچہ آپ نے اپنی تمام معلومات کو بیان نہیں کیا، اس کے باوجود آپ کی مرویات دیگرتمام صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین سے زیادہ ہیں۔
(فتح الباري: 282/1)

امام بخاری رحمۃ اللہ علیہ نے ایک دوسری روایت میں حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی بات کو مزید وضاحت سے نقل کیا ہے:
تم کہتے ہو کہ ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث بکثرت بیان کرتا ہے اور انصار و مہاجرین حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی طرح زیادہ احادیث کیوں نہیں بیان کرتے؟ (صحیح البخاري، البیوع، حدیث: 2047)
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان حدیث کے سلسلے میں اپنی احتیاط بایں الفاظ بیان کرتے ہیں کہ قرآن کریم کی دو آیات نہ ہوتیں تو میں کبھی کچھ بیان نہ کرتا، وہ آیات یہ ہیں:
﴿إِنَّ الَّذِينَ يَكْتُمُونَ مَا أَنزَلْنَا مِنَ الْبَيِّنَاتِ وَالْهُدَىٰ مِن بَعْدِ مَا بَيَّنَّاهُ لِلنَّاسِ فِي الْكِتَابِ ۙ أُولَـٰئِكَ يَلْعَنُهُمُ اللَّـهُ وَيَلْعَنُهُمُ اللَّاعِنُونَ﴾ ﴿إِلَّا الَّذِينَ تَابُوا وَأَصْلَحُوا وَبَيَّنُوا فَأُولَـٰئِكَ أَتُوبُ عَلَيْهِمْ ۚ وَأَنَا التَّوَّابُ الرَّحِيمُ﴾ (البقرة: 1؍ 159، 160)
جو لوگ ہماری اتاری ہوئی دلیلوں اور ہدایت کو چھپاتے ہیں باوجودیکہ ہم اسے اپنی کتاب میں لوگوں کے لئے بیان کرچکے ہیں، ان لوگوں پر اللہ کی اور تمام لعنت کرنے والوں کی لعنت ہے (159)
مگر وه لوگ جو توبہ کرلیں اور اصلاح کرلیں اور بیان کردیں، تو میں ان کی توبہ قبول کرلیتا ہوں اور میں توبہ قبول کرنے والا اور رحم وکرم کرنے والا ہوں حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو نہ تجارت کی مشغولیات تھیں اور نہ کاشتکاری کی مصروفیات، بلکہ آپ معاشی مشکلات سے بھی بے پروا تھے، بلکہ خود بیان کرتے ہیں کہ صفہ کے مساکین کی طرح میں بھی ایک مسکین آدمی تھا اورہروقت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے وابستہ رہتا تھا۔
(صحیح البخاري، البیوع، حدیث: 2047)
اس کی تائید حضرت طلحہ بن عبیداللہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے ایک بیان سے بھی ہوتی ہے، فرماتے ہیں:
اس میں کوئی شک نہیں کہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ایسی باتیں سنیں، جو ہم نے نہیں سنیں، کیونکہ آپ ایک مسکین آدمی تھے، کوئی گھر بار نہ تھا، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ہی کھاتے اور آپ کے ساتھ ہی رہتے۔
(المستدرك للحاکم: 511/3)
حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں:
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ ہم سے زیادہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے وابستہ رہتے اورآپ کی احادیث کو ہم سے زیادہ جاننے والے تھے۔
(فتح الباري: 283/1)

امام بخاری رحمۃ اللہ علیہ کی پیش کردہ دوسری حدیث سے پتہ چلتا ہے کہ قوت حافظہ ایک عطیہ ربانی ہے مگر اس کے کچھ ظاہری اسباب بھی ہوتے ہیں جوعطائے ربانی کاذریعہ بنتے ہیں۔
ان میں سے ایک صالحین کی خصوصی توجہ اور ان کی دعائیں ہیں جو ان کی مخلصانہ خدمت گزاری اور اطاعت شعاری سے حاصل کی جا سکتی ہیں۔
اس حدیث میں ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اپنی قوت یادداشت کے متعلق ایک حقیقت سے پردہ اٹھایا ہے کہ میں نے اپنے حافظے کے متعلق رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے مخصوص دعا بھی حاصل کی ہے۔
الغرض جو کچھ تم دیکھ رہے ہو وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی دعا کی برکت ہے۔

اس دوسری حدیث کے عموم کا تقاضا ہے کہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے نسیان کو بالکل ختم کردیا گیا۔
حدیث اور دیگر معاملات میں آپ اس کا شکار نہ ہوتے تھے۔
لیکن صحیح مسلم کی روایت میں ہے کہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتےہیں:
دعائے نبوی کے بعد مجھے احادیث کے سلسلے میں کبھی نسیان لاحق نہیں ہوا۔
اس سے معلوم ہوتا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث کے متعلق آ پ کا نسیان ختم کر دیا گیا، جبکہ صحیح بخاری ہی کی ایک روایت سے معلوم ہوتا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث کے متعلق آپ کا نسیان ختم کر دیا گیا، جبکہ صحیح بخاری کی ایک روایت سے معلوم ہوتا ہے کہ مجلس دعا میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے جو احادیث بیان فرمائیں وہ ہمیشہ کے لیے یاد رہیں، ان کے متعلق نسیان نہیں ہوا۔
ان روایات میں کچھ تعارض معلوم ہوتا ہے، لیکن صحیح بات یہ ہے کہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی دعا کے بعد احادیث کے متعلق کبھی نسیان لاحق نہیں ہوا۔
اس پر یہ اعتراض ہوسکتا ہے کہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے ایک شاگرد حضرت ابوسلمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے جب آپ کے سامنے «لَا عَدْوَی وَلَا طِیَرَۃَ» حدیث بیان کی توحضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا:
مجھے یاد نہیں ہے۔
اور محدثین اس روایت کو (نسي بعد ما حدث)
کے باب میں بطور مثال پیش کرتے ہیں۔
اس کا جواب یہ ہے کہ کبھی کبھار ایسا ہو سکتا ہے، نیز یہ کیا ضروری ہے کہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ ہی بھولے ہوں بلکہ حضرت ابوسلمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ جو حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے شاگرد ہیں خود ہی بھول گئے ہوں، انھوں نے کسی اور سے حدیث سنی ہو اور اس کی نسبت حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی طرف کردی ہو۔
ایک جواب یہ بھی دیا گیا ہےکہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ روایت بھولے نہیں تھے بلکہ انھوں نے جب شاگرد کو دیکھا کہ کم فہم ہے اور روایات میں ٹکراؤ پیدا کرتا ہے توانکار کردیا۔

یہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا معجزہ تھا کہ آپ کی دعا سے حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے نسیان کو ختم کردیا گیا، حالانکہ یہ انسانی لوازمات سے ہے۔

تیسری حدیث میں یہ راہنمائی ہے کہ جن علوم کی اشاعت سے عوام میں فتنہ فساد کا اندیشہ ہو، انھیں لوگوں میں نہیں پھیلانا چاہیے۔
حضرت حذیفہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے پاس منافقین کے متعلق معلومات تھیں جسے انھوں نے نہیں پھیلایا۔
اسی طرح ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے پاس بھی کچھ حوادثات اور فتن کے متعلق علوم تھے جن کی اشاعت فتنے فساد کا باعث ہوسکتی تھی، اس لیے آپ نے ان کی اشاعت نہیں فرمائی۔
اس کے متعلق حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں:
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے علم کے دو برتن یاد کیے، ایک برتن کے علوم کو میں نے عام کردیا جو حلال و حرام، عقائد و نظریات سے متعلق تھے، لیکن دوسرے برتن کے علوم عام طور پر پھیلانے کے نہیں ہیں۔
بعض روایات میں تین برتنوں کے علوم کی صراحت ہے۔
ان میں بظاہر تعارض ہے لیکن اگر غور کیاجائے تو ان میں کوئی تضاد نہیں، کیونکہ حلت وحرمت کے متعلقہ علوم دوسرے علوم کے مقابلے میں دوگنا ہیں، جہاں ان کے دوگنا ہونے کی رعایت فرمائی، وہاں تین برتن کہا اور جہاں ان کی رعایت نہیں کی، وہاں دو برتن کہہ دیا۔
(فتح الباري: 286/1)

جن علوم کو آپ نے نہیں پھیلایا، ان سے مراد ایسی احادیث ہیں جن میں نام بنام ظالم وجابر حکام کے حق میں وعیدیں ہیں اور ان میں حوادثات اور فتنوں کی پیشین گوئیاں بھی ہیں۔
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کبھی کبھار اشارے کے طور پر ان کا ذکر بھی کر دیتے تھے جیسا کہ آپ نے فرمایا:
اے اللہ! میں 60 ہجری کے شر اوربچوں کی حکومت سے تیری پناہ مانگتا ہوں۔
اس سال امت میں بہت فتنے برپا ہوئے اور مسلمانوں کی جماعت میں انتشار پیدا ہوا۔
یہ سال بنو امیہ کی حکومت کا ہے۔
اگرچہ ان کی اسلامی خدمات بہت ہیں لیکن ان کے کردار میں کچھ خامیاں بھی تھیں۔
اس پر فتن دور میں ایسی احادیث بیان کرنے سے جان کوخطرہ تھا، لہٰذا مصلحتاً آپ نے خاموشی اختیار کی۔
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی دعا کو اللہ تعالیٰ نے شرف قبولیت سے نوازا اور آپ59 ہجری میں فوت ہوگئے۔
(فتح الباري: 286/1)
ملحوظہ:
صحیح بخاری کے بعض نسخوں میں تیسری حدیث کے آخر میں یہ الفاظ ہیں:
امام بخاری رحمۃ اللہ علیہ نے فرمایا:
بلعوم، گلے کا وہ حصہ ہےجس سے کھانا نیچے اترتا ہے۔
   هداية القاري شرح صحيح بخاري، اردو، حدیث\صفحہ نمبر: 119   

http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.