صحيح البخاري کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح البخاري
کتاب: فضیلتوں کے بیان میں
The Book of Virtues
حدیث نمبر: 3648
پی ڈی ایف بنائیں مکررات اعراب English
(مرفوع) حدثني إبراهيم بن المنذر، حدثنا ابن ابي الفديك، عن ابن ابي ذئب، عن المقبري، عن ابي هريرة رضي الله عنه، قال: قلت: يا رسول الله إني سمعت منك حديثا كثيرا فانساه، قال:" ابسط رداءك فبسطت فغرف بيده فيه، ثم قال: ضمه فضممته فما نسيت حديثا بعد".(مرفوع) حَدَّثَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْمُنْذِرِ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي الْفُدَيْكِ، عَنْ ابْنِ أَبِي ذِئْبٍ، عَنْ الْمَقْبُرِيِّ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، قَالَ: قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنِّي سَمِعْتُ مِنْكَ حَدِيثًا كَثِيرًا فَأَنْسَاهُ، قَالَ:" ابْسُطْ رِدَاءَكَ فَبَسَطْتُ فَغَرَفَ بِيَدِهِ فِيهِ، ثُمَّ قَالَ: ضُمَّهُ فَضَمَمْتُهُ فَمَا نَسِيتُ حَدِيثًا بَعْدُ".
مجھ سے ابراہیم بن المنذر نے بیان کیا، کہا مجھ سے محمد بن اسماعیل ابن ابی الفدیک نے بیان کیا، ان سے محمد بن عبدالرحمٰن ابن ابی ذئب نے، ان سے سعید مقبری نے اور ان سے ابوہریرہ رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ میں نے عرض کیا: یا رسول اللہ! میں نے آپ سے بہت سی احادیث اب تک سنی ہیں لیکن میں انہیں بھول جاتا ہوں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اپنی چادر پھیلاؤ، میں نے چادر پھیلا دی اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے ہاتھ سے اس میں ایک لپ بھر کر ڈال دی اور فرمایا کہ اسے اپنے بدن سے لگا لو۔ چنانچہ میں نے لگا لیا اور اس کے بعد کبھی کوئی حدیث نہیں بھولا۔

Narrated Abu Huraira: I said, "O Allah's Apostle! I hear many narrations from you but I forget them." He said, "Spread your covering sheet." I spread my sheet and he moved both his hands as if scooping something and emptied them in the sheet and said, "Wrap it." I wrapped it round my body, and since then I have never forgotten.
USC-MSA web (English) Reference: Volume 4, Book 56, Number 841


   صحيح البخاري2350عبد الرحمن بن صخرلن يبسط أحد منكم ثوبه حتى أقضي مقالتي هذه ثم يجمعه إلى صدره فينسى من مقالتي شيئا أبدا فبسطت نمرة ليس علي ثوب غيرها حتى قضى النبي مقالته ثم جمعتها إلى صدري فوالذي بعثه بالحق ما نسيت من مقالته تلك إلى يومي هذا والله لولا آيتان
   صحيح البخاري3648عبد الرحمن بن صخرابسط رداءك فبسطت فغرف بيده فيه ثم قال ضمه فضممته فما نسيت حديثا بعد
   صحيح البخاري7354عبد الرحمن بن صخرمن يبسط رداءه حتى أقضي مقالتي ثم يقبضه فلن ينسى شيئا سمعه مني فبسطت بردة كانت علي فوالذي بعثه بالحق ما نسيت شيئا سمعته منه
   صحيح البخاري119عبد الرحمن بن صخرابسط رداءك فبسطته قال فغرف بيديه ثم قال ضمه فضممته فما نسيت شيئا بعده
   صحيح مسلم6400عبد الرحمن بن صخرأيكم يبسط ثوبه فيأخذ من حديثي هذا ثم يجمعه إلى صدره فإنه لم ينس شيئا سمعه فبسطت بردة علي حتى فرغ من حديثه ثم جمعتها إلى صدري فما نسيت بعد ذلك اليوم شيئا حدثني به ولولا آيتان أنزلهما الله في كتابه ما حدثت شيئا أبدا إن الذين يكتمون ما أنزلنا من البينات واله
   صحيح مسلم6397عبد الرحمن بن صخرمن يبسط ثوبه فلن ينسى شيئا سمعه مني فبسطت ثوبي حتى قضى حديثه ثم ضممته إلي فما نسيت شيئا سمعته منه
   جامع الترمذي3835عبد الرحمن بن صخرابسط رداءك فبسطته فحدث حديثا كثيرا فما نسيت شيئا
   جامع الترمذي3834عبد الرحمن بن صخربسطت ثوبي عنده ثم أخذه فجمعه على قلبي فما نسيت بعده حديثا

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  مولانا داود راز رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري 119  
´ علم کو محفوظ رکھنے کے بیان میں `
«. . . عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ: قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ، إِنِّي أَسْمَعُ مِنْكَ حَدِيثًا كَثِيرًا أَنْسَاهُ، قَالَ: ابْسُطْ رِدَاءَكَ فَبَسَطْتُهُ، قَالَ: فَغَرَفَ بِيَدَيْهِ، ثُمَّ قَالَ: ضُمَّهُ، فَضَمَمْتُهُ فَمَا نَسِيتُ شَيْئًا بَعْدَهُ . . .»
. . . ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ میں نے عرض کیا، یا رسول اللہ! میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے بہت باتیں سنتا ہوں، مگر بھول جاتا ہوں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اپنی چادر پھیلاؤ، میں نے اپنی چادر پھیلائی، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے دونوں ہاتھوں کی چلو بنائی اور (میری چادر میں ڈال دی) فرمایا کہ (چادر کو) لپیٹ لو۔ میں نے چادر کو (اپنے بدن پر) لپیٹ لیا، پھر (اس کے بعد) میں کوئی چیز نہیں بھولا . . . [صحيح البخاري/كِتَاب الْعِلْمِ/بَابُ حِفْظِ الْعِلْمِ:: 119]

تشریح:
آپ کی اس دعا کا یہ اثر ہوا کہ بعد میں حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ حفظ حدیث کے میدان میں سب سے سبقت لے گئے اور اللہ نے ان کو دین اور دنیا ہر دو سے خوب ہی نوازا۔ چادر میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا چلو ڈالنا نیک فالی تھی۔
   صحیح بخاری شرح از مولانا داود راز، حدیث\صفحہ نمبر: 119   
  مولانا داود راز رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري: 3648  
3648. حضرت ابوہریرہ ؓ سے روایت ہے، انھوں نے کہا کہ میں نے عرض کی: اللہ کے رسول ﷺ! میں آپ سے بہت سی احادیث سنتا ہوں لیکن انھیں بھول جاتا ہوں توآ پ ﷺ نے فرمایا: تم اپنی چادر پھیلاؤ۔ میں نے اپنی چادر پھیلائی تو آپ نے اپنے دونوں ہاتھوں سے چلو بنا کر چادر میں ڈال دیا، پھرفرمایا: اسے سینے سے لگالو۔ چنانچہ میں نے اسے سینے سے لگالیا، پھر اس کے بعدمجھے کوئی حدیث نہیں بھولی۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:3648]
حدیث حاشیہ:
آپ کی دعا کی برکت سے حضرت ابوہریرہ ؓ کا حافظہ تیز ہوگیا۔
چادر میں آپ نے دعاؤں کے ساتھ برکت کو گویا لپ بھر کر ڈال دیا۔
اس چادر کو حضرت ابوہریرہ نے اپنے سینے سے لگا کر برکتوں سے اپنے سینے کو معمور کرلیا اور پانچ ہزار سے بھی زائد احادیث کے حافظ قرارپائے۔
تف ہے ان لوگوں پر جو ایسے جلیل القدر حافظ الحدیث صحابی رسول اللہ ﷺ کو حدیث فہمی میں ناقص قرار دے کر خود اپنی حماقت کا اظہار کرتے ہیں۔
ایسے علماءوفقہاءکو اللہ کے عذاب سے ڈرنا چاہیے کہ ایک صحابی رسول کی توہین کی سزا میں گرفتار ہوکر کہیں وہ خسرالدنیا والآخرۃ کے مصداق نہ بن جائیں۔
حضرت ابوہریرہ ؓ کا مقام روایت اور مقام درایت بہت اعلیٰ وارفع ہے۔
وللتفصیل مقام آخر۔
علامات نبوت کا باب یہاں ختم ہوا۔
اب حضرت امام بخاری ؒ اصحاب رسول اللہ ﷺ کے فضائل کا بیان شروع فرما رہےہیں۔
جس قدر روایات مذکور ہوئی ہیں سب میں کسی نہ کسی طرح سے علامت نبوت کا ثبوت نکلتا ہے۔
اور یہی امام بخاری کا منشاءہے۔
   صحیح بخاری شرح از مولانا داود راز، حدیث\صفحہ نمبر: 3648   
  الشيخ حافط عبدالستار الحماد حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري:3648  
3648. حضرت ابوہریرہ ؓ سے روایت ہے، انھوں نے کہا کہ میں نے عرض کی: اللہ کے رسول ﷺ! میں آپ سے بہت سی احادیث سنتا ہوں لیکن انھیں بھول جاتا ہوں توآ پ ﷺ نے فرمایا: تم اپنی چادر پھیلاؤ۔ میں نے اپنی چادر پھیلائی تو آپ نے اپنے دونوں ہاتھوں سے چلو بنا کر چادر میں ڈال دیا، پھرفرمایا: اسے سینے سے لگالو۔ چنانچہ میں نے اسے سینے سے لگالیا، پھر اس کے بعدمجھے کوئی حدیث نہیں بھولی۔ [صحيح بخاري، حديث نمبر:3648]
حدیث حاشیہ:

ایک روایت میں ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:
تم میں سے جو کوئی اپنا کپڑا پھیلا رکھے حتی کہ میں اپنا کلام پورا کرلوں،پھر اس کپڑے کو اپنے سینے سے لگالےتو وہ اس کلام سے کوئی بات نہیں بھولے گا۔
حضرت ابوہریرہ ؓ کہتے ہیں کہ میں نے اپنا کمبل ہی پھیلادیا۔
میرے پاس اس کے علاوہ اور کوئی کپڑا نہیں تھا۔
جب آپ نے اپنا کلام پورا کرلیا تو میں نے اسے اپنے سینے سے لگالیا۔
اس ذات کی قسم جس نے آپ کو حق دے کر مبعوث کیا ہے!اس وقت سے لے کر آج تک میں اس کلام کو نہیں بھولا ہوں۔
(صحیح البخاري، الحرث والمزارعة، حدیث: 2350)
لیکن صحیح مسلم کی روایت میں ہے کہ میں اس دن کے بعد کوئی حدیث نہیں بھولا ہوں۔
(صحیح مسلم، فضائل الصحابة، حدیث: 6397(2492)
صحیح پیش کردہ حدیث میں بھی عموم ہے کہ حضرت ابوہریرہ ؓ صرف وہی کلام نہیں بلکہ کوئی حدیث بھی نہیں بھولے ہیں۔

چادر میں رسول اللہ ﷺ نے دعاؤں کے ساتھ برکت کو گویا لپ بھر کر ڈال دیا جس کی بدولت حضرت ابوہریرہ کا حافظہ تیز ہوگیا۔
آپ نے جب خیروبرکت سے اپنے سینے کو معمور کرلیا توحافظ حدیث اور راوی اسلام کہلائے۔
آپ کو پانچ ہزار سے زائد احادیث زبانی یاد تھیں۔
تف ہے ان لوگوں پر جو ایسے جلیل القدر حافظ حدیث کو حدیث فہمی میں ناقص ٹھہرا کر خود اپنی حماقت کا اظہار کرتے ہیں۔

اس حدیث میں بھی علامات نبوت کا اثبات مقصود ہے۔
اس عنوان کے تحت جتنی بھی احادیث بیان ہوئی ہیں،ان سب میں کسی نہ کسی طرح سے علامتِ نبوت کا ثبوت ملتا ہے اور یہی امام بخاری ؒ کا مقصد ہے۔
واللہ أعلم۔
   هداية القاري شرح صحيح بخاري، اردو، حدیث\صفحہ نمبر: 3648   

http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.